Suno News
القادر ٹرسٹ کی رجسٹریشن پر 2 دن میں فیصلہ کرنیکا حکم
Image
اسلام آباد: (سنو نیوز) اسلام آباد ہائیکورٹ نے القادر ٹرسٹ کی رجسٹریشن کی درخواست پر 2 دن میں فیصلہ کرنے کا حکم دے دیا۔ جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ریمارکس دیئے کہ کون شخص ڈائیریکٹر لیبر تعینات ہے اس آدمی کو اس سیٹ پر نہیں ہونا چاہیے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے القادر ٹرسٹ کی چیریٹی رجسٹریشن میں تاخیر اور نئی ٹرسٹ ایکٹ کی رجسٹریشن پر عدالتی حکم پر عمل درآمد نہ ہونے پر توہین عدالت کیس کی سماعت کی۔ ایڈوکیٹ جنرل اسلام آباد ایاز شوکت عدالت میں پیش ہوئے۔ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ڈائریکٹر لیبر اینڈ انڈسٹریز کے رویے پر برہمی کا اظہار کر دیا اور کہا کہ ڈائریکٹر لیبر اینڈ انڈسٹریز درخواست گزار کی درخواست پر 2 روز میں فیصلہ کریں، یہ کون شخص ڈائیریکٹر لیبر تعینات ہے اس آدمی کو اس سیٹ پر نہیں ہونا چاہیے۔ سائفر کیس: عمران خان کیخلاف ٹرائل روکنے کے حکم میں کل تک توسیع جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ریمارکس دیئے کہ اکتوبر سے کہا ہوا ہے انکی درخواست پر فیصلہ کریں، درخواست کو مسترد کریں یا منظور کریں جو بھی ہے فیصلہ کریں، ہم بھی تو یہاں بیٹھ کر فیصلے کر رہے ہیں ناں۔ جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے ایڈووکیٹ جنرل سے مکالمہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے پاکستان کو ایسے چلانا ہے، یہ کیا کہ اگر ایسا کیا تو کوئی ناراض نہ ہو جائے، یہ کیا بات ہے، ڈائریکٹر لیبر پبلک کے پیسے کھاتا ہے تنخواہ لیتا ہے یا نہیں ؟ وہ تنخواہیں پبلک کے پیسوں کی ہوتی ہے ناں، میں اسکی شکل تو دیکھوں کس ٹائپ کا آدمی ہے جو عدالتی حکم پر عمل درآمد نہیں کر رہا، کئی ماہ سے کہہ رہے ہیں فیصلہ کرو فیصلہ کرو۔ ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے عدالت کو بتایا کہ ہم نے ریمانڈر بھیجا ہوا ہے ہم دو روز میں فیصلہ کردیتے ہیں۔ جس پر جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب نے کہا کہ دو دن میں آرڈر دیں اور میں کیس اگلے ہفتے لگاتا ہوں۔ عدالت نے احکامات کے ساتھ کیس اگلے ہفتے تک ملتوی کر دیا۔