Suno News
فرانس میں بائیں بازو کے اتحاد نےالیکشن جیت لیا
Image
پیرس:(ویب ڈیسک) فرانس میں بائیں بازو کی جماعتوں نے تمام توقعات کے خلاف الیکشن جیت لیا ہے۔
 
 اس انتخابات میں ایمینوئل میکرون کی اعتدال پسند جماعت دوسرے نمبر پر جس کے بعد دائیں بازو کی جماعت ہے۔دائیں بازو کی جماعت اس الیکشن میں زیادہ ووٹ حاصل نہیں کر سکی۔
 
فرانس کے موجودہ وزیر اعظم، جن کا تعلق میکرون کی پارٹی سے ہے، نے اعلان کیا ہے کہ وہ مستعفی ہو رہے ہیں۔ تاہم وہ پیرس میں ہونے والے اولمپک گیمز کے دوران اپنی پوزیشن پر برقرار رہنا چاہتے ہیں۔
 
فرانس میں یہ سب سے اہم انتخابات تھے۔ گذشتہ 40 سالوں میں یہ پہلا موقع ہے کہ لوگوں کی بڑی تعداد نے اس میں شرکت کی۔
 
یورپی ممالک کے رہنماؤں نے بھی انتخابی نتائج پر مثبت ردعمل کا اظہار کیا۔ فرانس کے سابق صدر فرانسوا اولاند کا کہنا تھا کہ یہ انتخاب فرانس میں دائیں بازو کی انتہا پسند جماعت کو آگے بڑھنے کا سبب بنا ہے۔
 
 اولاند، جو 2012 ءسے 2017 ءکے درمیان فرانس کے صدر رہے، نے ایمانوئل کو شکست دی۔ اس الیکشن میں وہ بائیں بازو کی جماعت کی سب سے زیادہ مانی جانے والی شخصیت تھے۔
 
اسپین کے سوشلسٹ وزیر اعظم پیڈرو یانچیز نے حالیہ انتخابات میں بائیں بازو کی جماعت کی جیت پر ردعمل کا اظہار کیا ہے۔
 
 انہوں نے کہا کہ برطانیہ میں لیبر پارٹی اور فرانس میں دائیں بازو کی پارٹی کی جیت یہ ظاہر کرتی ہے کہ"عوام نے ترقی کی سمت جانے کا فیصلہ کر لیا ہے۔وہ اپنے حقوق اور آزادی سے پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں ہیں"۔
 
فرانسیسی دائیں بازو کی جماعت کے ہزاروں مخالفین سڑکوں پر نکل آئے اور بائیں بازو کی جماعت کی جیت کا جشن منایا۔
 
ووٹنگ سے قبل رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق دائیں بازو کی جماعت آگے تھی اور کہا جا رہا تھا کہ وہ الیکشن میں فاتح ہوگی اور اکثریتی ووٹ حاصل کرے گی لیکن توقعات کے برعکس اسے زیادہ ووٹ نہیں ملے۔
 
فرانسیسی پارلیمانی انتخابات کے پہلے مرحلے میں، جو تقریباً ایک ہفتہ قبل ہوئے تھے، دائیں بازو کی نیشنل کمیونٹی پارٹی نے 33 فیصد سے زیادہ ووٹ حاصل کیے تھے۔
 
یہ پہلا موقع ہے جب دو پارٹیوں پر مشتمل مہاجر مخالف اتحاد کو حکومت کرنے کا موقع ملا ہے۔
 
جب کہ فرانس میں انتخابات میں تین سال باقی تھے، ملک کے صدر ایمانوئل میکرون نے یورپی پارلیمنٹ کے انتخابات کے نتائج کے جواب میں وقت سے پہلے انتخابات کا اعلان کیا۔
 
ان کے اس اقدام نے عوام کو حیران کر دیا اور یہاں تک کہ ان کی اپنی پارٹی میں بہت سے لوگوں کو ناراض کیا، لیکن انہوں نے اس کا دفاع کیا کہ لوگوں کے لیے یہ فیصلہ کرنے کا موقع ہے کہ وہ ملک پر کس کی حکمرانی کرنا چاہتے ہیں۔
 
یہ انتخابات ایسے وقت ہوئے ہیں جب 19 دن بعد 26 جولائی کو پیرس میں اولمپک گیمز کا انعقاد ہونا ہے۔  وہاں پہلے ہی سخت حفاظتی اقدامات کیے گئے ہیں اور سیاسی بدامنی کو روکنے کے لیے مزید 30,000 پولیس اہلکار تعینات کیے گئے ہیں۔