12 April 2024

Homeتازہ ترینغزہ میں شہادتوں کی تعداد 8 ہزار سے تجاوز

غزہ میں شہادتوں کی تعداد 8 ہزار سے تجاوز

اسرائیلی فورسز کی جارحیت کے بعد فلسطینی زخمیوں کے لئے امدادی کام جاری ہے

غزہ میں شہادتوں کی تعداد 8 ہزار سے تجاوز

غزہ: (سنو نیوز) اسرائیل کا غزہ میں خونی حملوں کا چوبیس واں روز، تازہ بمباری سے خان یونس میں مزید ترانوے فلسطینی شہید ہوگئے۔ اسرائیلی ٹینک نے شاہراہ صلاح الدین پر ایک گاڑی کو نشانہ بنادیا جس کے نتیجے میں اس پر سوار تمام افراد شہید ہوگئے۔

غزہ میں مجموعی شہادتوں کی تعداد 8 ہزار سے زائد:

غزہ میں مجموعی شہادتوں کی تعداد آٹھ ہزار تین سو چھ ہوگئی ہے۔ جن میں تین ہزار چار سو ستاون بچے اور دو ہزار ایک سو چھتیس خواتین بھی شامل ہیں۔ القدس کے بعد ترکی ہسپتال کو بھی دھمکیاں ملنے لگی ہیں۔ جہاں کینسر کے مریضوں کا علاج کیا جاتا ہے۔ اقوام متحدہ کے مطابق اتوار کو مزید تینتیس امدادی ٹرک غزہ میں داخل ہوئے ہیں۔ اب تک ان کی مجموعی تعداد ایک سو سترہ ہوچکی ہے۔

خطے کی سپرپاور کا غرور خاک میں ملادیا: حماس

غزہ پر اسرائیلی فورسز کے زمینی حملے پر حماس کے سینئر رہنما موسیٰ محمد ابومرزوق کا کہنا ہے اگر انہیں پہلے پتہ ہوتا کہ اسرائیلی فوج اتنی کمزور ہے تو سات اکتوبر کو سیدھا تل ابیب پر حملہ کرتے ۔ خطے کی سپرپاور کا غرور جنگجوؤں نے صرف پانچ گھنٹے میں خاک میں ملادیا ۔ حماس رہنما نے گلہ کیا کہ کچھ عرب رہنما حماس کا خاتمہ چاہتے ہیں اور مغرب کو اس کے لیے اکساتے ہیں لیکن ہمیں مغربی کنارے کے بھائیوں اور حزب اللہ سے زیادہ امیدیں ہیں ۔

مغویوں کا اسرائیلی وزیراعظم کے نام ویڈیو پیغام :

ادھر حماس نے مغویوں کا اسرائیلی وزیراعظم کے نام ویڈیو پیغام جاری کیا ہے۔ جس میں خواتین نیتن یاہو کو مخاطب کرکے کہا گیا ہے کہ سات اکتوبر کو کوئی ہماری مدد کو نہیں آیا۔ معصوم شہری تمہاری سیاسی اور فوجی ناکامی کی قیمت چکا رہے ہیں۔ تم ان کے قیدی رہا کرکے ہمیں ابھی آزادی دلاؤ۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہگاری کا بیان:

اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہگاری نے پیر کو ایک باقاعدہ پریس کانفرنس میں کہا کہ اسرائیل طے شدہ جنگی منصوبے کے مطابق غزہ میں بتدریج پیش قدمی کر رہا ہے۔ تاہم انہوں نے زمینی افواج کی موجودہ جگہ بتانے سے انکار کر دیا، حالانکہ سوشل میڈیا پر آنے والی تصاویر میں اسرائیلی ٹینکوں کو پٹی کی ایک مرکزی سڑک پر حرکت کرتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

ہگاری نے کہا، “ہم آپ کو غزہ کے اندر اسرائیلی افواج کے کسی بھی ارتکاز کے بارے میں مطلع نہیں کریں گے، چاہے مواد سوشل میڈیا کے ذریعے لیک کیا جائے۔” جنوبی لبنان کے ساتھ سرحد پر شمالی محاذ پر پیش رفت کے بارے میں، انہوں نے اس بات کی طرف اشارہ کیا کہ اسرائیلی افواج اس خطے میںبلیو لائن کے ساتھ ساتھ تعینات ہیں اور کسی بھی ایکشن کے لیے تیار ہیں۔

اسرائیل کا غزہ شہر کے گرد گھیرا تنگ ہوتا جا رہا ہے:

غزہ کی پٹی میں مرکزی شمالی جنوبی شاہراہ پر اسرائیلی ٹینک کی موجودگی یقیناً اس بات کی علامت ہے کہ غزہ شہر کے گرد اسرائیل کا گھیرا تنگ ہوتا جا رہا ہے۔ غزہ شہر کی طرف جانے والی گاڑی پر ٹینک کی فائرنگ غزہ کی پٹی کے بالکل شمال میں ہائی وے پر اسرائیلی افواج کی پہلی موجودگی کی نشاندہی کرتی ہے۔

واضح رہے کہ اسرائیلی افواج کی کارروائیوں میں بتدریج شدت آنے کے بعد غزہ کی پٹی کا سب سے شمالی شہر غزہ سٹی ان کی سرگرمیوں کا مرکزی مرکز ہو گا۔ لیکن دسیوں یا شاید لاکھوں لوگوں کے خوف یا عزم کی وجہ سے شمالی غزہ میں چھوڑے جانے کے بعد، ایسا لگتا ہے کہ IDF سڑک کو مکمل طور پر منقطع کرنے کی کوشش کر سکتا ہے۔

دو سڑکیں غزہ کے شمال اور جنوب کو ملاتی ہیں، مرکزی سڑک صلاح الدین روڈ ہے۔ ایک اور راستہ غزہ کے ساحل کے ساتھ ایک سڑک ہے، لیکن یہ سڑک آسانی سے اسرائیلی بحریہ کے کراس ہیئرز کے اندر ہے۔ وادی غزہ کے بالکل شمال میں واقع علاقے کی آبادی شمال میں غزہ شہر اور جنوب میں برج اور نصرت سے کم ہے۔

روس کے شہر داغستان کے ہوائی اڈے پر یہودی مسافروں پر حملہ:

مظاہرین نے داغستان کے ہوائی اڈے پر دھاوا بول دیا، جس کی وجہ سے اسے بند کر دیا گیا۔ تل ابیب سے ایک طیارہ اترنے کی خبر سن کر لوگوں کا ایک گروپ روس کے شہر داغستان کے شہر مکاچکلا کے ہوائی اڈے پر پہنچ گیا۔ روسی ایوی ایشن آرگنائزیشن کے اعلان کے مطابق ان مظاہرین کے رن وے میں داخل ہونے کے بعد اس ہوائی اڈے کو بند کر دیا گیا۔ ان میں سے کچھ مظاہرین نے یہود مخالف نعرے لگائے اور فلسطینی پرچم اٹھا رکھے تھے۔ روسی ایوی ایشن آرگنائزیشن کے مطابق ہوائی اڈے پر صورتحال اب قابو میں ہے۔ اسرائیل نے کہا ہے کہ روس کو “یہودیوں اور اسرائیلیوں کے خلاف تشدد پر اکسانے والے اقدامات سے فیصلہ کن طریقے سے نمٹنا چاہیے۔”

جرمن شہری شانی لیوک کی والدہ نے ان کی موت کی تصدیق کر دی:

7 اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر حملے کے بعد لاپتہ ہونے والے 22 سالہ جرمن سیاح شانی لیوک کے اہل خانہ نے اس کی موت کی تصدیق کر دی ہے۔ اسرائیلی فوج نے اسے بتایا کہ برآمد شدہ سر کے ٹکڑے سے لیے گئے ڈی این اے کے نمونے سے ثابت ہوا کہ یہ شانی لوک کا ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق ابھی تک ان کی لاش نہیں ملی ہے۔ لیوک کے اہل خانہ کا خیال تھا کہ اسے حماس نے یرغمال بنا لیا ہے۔ جب حماس نے جنوبی اسرائیل پر حملہ کیا تو شانی لوک غزہ کی پٹی کے قریب جنوبی اسرائیل میں رقص اور موسیقی کے میلے میں شریک تھی۔

Share With:
Rate This Article