12 April 2024

Homeتازہ ترین“برطانوی پومپئی” میں ایرانی شیشے کے موتیوں کی دریافت

“برطانوی پومپئی” میں ایرانی شیشے کے موتیوں کی دریافت

Iranian glass beads found at 'UK's Pompeii' near Peterborough

“برطانوی پومپئی” میں ایرانی شیشے کے موتیوں کی دریافت

لندن:(ویب ڈیسک) ماہرین کا کہنا ہے کہ “برٹش پومپی” کے نام سے مشہور زمانہ قبل از تاریخ کے قدیم مقام سے ملنے والی موتیوں کو بنانے کے لیے استعمال ہونے والا شیشہ غالباً ایران میں تیار کیا گیا تھا۔

یہ دریافتیں ان کم و بیش برقرار اشیاء کا حصہ ہیں جو مشرقی انگلینڈ میں پیٹربورو شہر کے قریب ایک کان میں 3000 سال پرانے جلے ہوئے گاؤں میں دریافت کی گئی تھیں۔یہاں موتیوں کی مالا بھی ملی ہے۔ تاریخی جواہرات کے ماہر ایلیسن شیریڈن کا کہنا ہے کہ اس جگہ پر اشیاء کا صحیح سلامت رہنا انتہائی اہم بات ہے۔یہ دریافتیں ظاہر کرتی ہیں کہ مست فارم کے باشندوں کے “حقیقت میں بین الاقوامی تعلقات” تھے۔

اس علاقے میں اب تک کی بدترین خشک سالی کے بعد کھدی ہوئی پتھروں کو کھودا کیا گیا تھا۔ان میں سے کچھ موتیوں کی مالا شاید شمالی برطانیہ اور یہاں تک کہ آئرلینڈ سے آئی تھیں، جب کہ شیشہ سمندر کے اس پار ایک لمبے راستے سے آیا تھا۔

Iranian glass beads found at 'UK's Pompeii' near Peterborough

کیمبرج آرکیالوجیکل یونٹ نے 2015ء اور 2016 ءکے درمیان دریا کے اوپر بنے ہوئے 10 گول لاگ ہاؤسز کی بستی کی باقیات دریافت کی تھیں۔ خیال کیا جاتا ہے کہ اس گاؤں میں 50 سے 60 لوگ رہتے تھے لیکن یہ معلوم نہیں ہو سکا کہ یہ 850 قبل مسیح میں کیوں جل گیاتھ

ڈاکٹر شیریڈن اور ان کے ساتھی جولین ہینڈرسن کے مطابق اس دریافت میں برطانیہ میں پائے جانے والے کانسی کے زمانے کے شیشے کی موتیوں کا سب سے بڑا مجموعہ” شامل ہے۔ان کے نتائج میکڈونلڈ انسٹی ٹیوٹ فار آرکیالوجیکل ریسرچ کے ذریعہ شائع کردہ نیکلیسس اور بیڈس رپورٹ میں پیش کردہ مواد کا حصہ تھے، جس میں کھدائی کے بعد کے تجزیوں کے نتائج شامل تھے۔

Iranian glass beads found at 'UK's Pompeii' near Peterborough

یونیورسٹی آف ناٹنگھم کے قدیم ٹیکنالوجیز کے ماہر پروفیسر ہینڈرسن کا نتیجہ یہ تھا کہ ان میں سے 48 موتیوں کو بنانے کے لیے جو شیشہ استعمال کیا جاتا تھا وہ غالباً ایران سے آیا تھا، جب کہ 49ویں مالا کا شیشہ مصری تھا۔ایک آنسو کے قطرے کی شکل والی چیز، 23 ملی میٹر لمبی، جسے شیشہ بنانے کے عمل کی ضمنی پیداوار سمجھا جاتا ہے، بھی دریافتوں میں شامل تھا۔

کھدائی کا موازنہ جنوبی اٹلی کے رومن شہر پومپی سے کیا گیا ہے، جو 79ء میں آتش فشاں پھٹنے سے تباہ ہو گیا تھا، کیونکہ یہ کانسی کے زمانے میں زندگی کی ایک کھڑکی ہے جس طرح یہ ختم ہو رہا تھا۔ ماہرین آثار قدیمہ کا کہنا ہے کہ یہ علاقہ دریا کے اوپر بنایا گیا تھا۔

Share With:
Rate This Article