19 April 2024

HomeGazaاسرائیل کیساتھ مذاکرات میں لچک دکھا رہے ہیں: اسماعیل ہنیہ

اسرائیل کیساتھ مذاکرات میں لچک دکھا رہے ہیں: اسماعیل ہنیہ

Hamas chief Ismail Haniyeh

اسرائیل کیساتھ مذاکرات میں لچک دکھا رہے ہیں: اسماعیل ہنیہ

بیروت:(ویب ڈیسک) حماس کے سیاسی رہنما اسماعیل ہنیہ نے ایک ریکارڈ شدہ پیغام میں کہا ہے کہ حماس مذاکرات میں لچک دکھا رہی ہے،تاہم وہ اسرائیل کے ساتھ لڑائی جاری رکھنے کے لیے تیار ہیں۔

یہ پیغام بیروت میں القدس انٹرنیشنل انسٹی ٹیوٹ میں ایک نیوز کانفرنس میں نشر کیا گیا جو حماس کی ملکیت ہے۔ اس ملاقات میں متعدد فلسطینی اور لبنانی حکام نے شرکت کی۔

اسماعیل ہنیہ نے اس پیغام میں کہا: “ہم مذاکرات میں جو بھی لچک دکھاتے ہیں وہ اپنے لوگوں کے خون کی حفاظت اور اس عظیم مصائب کو ختم کرنے کے لیے ہے، اس ظالمانہ جنگ نے ہمارے لوگوں کو جڑ سے اکھاڑ پھینکا ہے، لیکن ہم اپنے لوگوں کے دفاع کے لیے بھی تیار ہیں۔ “

اس ویڈیو پیغام میں انہوں نے فلسطینیوں سے رمضان کے پہلے دن عبادت کے لیے یروشلم اور مغربی کنارے سے مسجد اقصیٰ تک مارچ کرنے کی اپیل کی۔ امریکی صدر جو بائیڈن نے پیر کو کہا کہ اسرائیل نے رمضان المبارک کے دوران غزہ میں فوجی آپریشن نہ کرنے پر رضامندی ظاہر کی ہے اور امید ظاہر کی ہے کہ آئندہ پیر کو کوئی معاہدہ ہو سکتا ہے۔

ہنیہ نے عرب حکومتوں سے غزہ کے عوام کی حمایت جاری رکھنے کا مطالبہ بھی کیا اور کہا کہ یہ عرب حکومتوں اور اسلامی اقوام کا فرض ہے کہ وہ غزہ کے عوام کو بھوکا مارنے کی سازش کو ناکام بنانے میں پہل کریں۔

گذشتہ روز رائٹرز نے اطلاع دی تھی کہ عارضی جنگ بندی اور متعدد مغویوں کی رہائی کے لیے ایک منصوبہ تیار کیا گیا ہے۔ یہ منصوبہ پیرس میں کئی دنوں تک جاری رہنے والی بات چیت کے بعد تیار کیا گیا تھا۔ ان مذاکرات میں امریکا، اسرائیل، قطر اور مصر کے نمائندے شریک تھے۔

اس رپورٹ کے مطابق فریقین تمام دشمنی ختم کریں گے، غزہ پر اسرائیلی جاسوسی کی پروازیں آٹھ دن کے لیے معطل رہیں گی، تقریباً 40 خواتین یرغمالیوں، 19 سال سے کم عمر اور 50 سے زائد عمر کے مریضوں کو رہا کیا جائے گا، اس کے بدلے میں 400 فلسطینی قیدیوں کو رہا کیا جائے گا۔ اس مرحلے کے بعد، مکینوں کو بتدریج شمالی غزہ میں واپس جانے کی اجازت دی جانی چاہیے، اور اسرائیلی افواج کو آبادی والے علاقوں سے ہٹ جانا چاہیے۔

Share With:
Rate This Article