12 April 2024

Homeتازہ ترینغزہ جنگ میں 3 ہزار بچے شہید، اسرائیلی بربریت جاری

غزہ جنگ میں 3 ہزار بچے شہید، اسرائیلی بربریت جاری

غزہ میں بچے تباہ شدہ عمارتوں کے اوپر کھڑے ہیں

غزہ جنگ میں 3 ہزار بچے شہید، اسرائیلی بربریت جاری

غزہ: (سنو نیوز) اسرائیل نے چوبیس گھنٹوں کے دوران مزید 481 فلسطینیوں کو شہید کردیا، 7 اکتوبر سے اب تک سات ہزار سےافراد جام شہادت نوش کرچکے ہیں جن میں 3 ہزار ننھے فلسطینی بھی شامل ہیں۔

تفصیل کے مطابق اسرائیلی آرٹلری کے پہلے بڑے زمینی حملے میں  رات بھر ٹینکوں سے غزہ کے رہائشی علاقوں پر شیلنگ ہوتی رہی۔ اسرائیلی آرمی کے مطابق حملوں میں حماس کے ٹھکانوں کو نشانہ بنایا گیا۔ غزہ میں ساڑھے 17 ہزار سے زائد زخمی بھی زندگی اور موت کی جنگ لڑرہے ہیں۔ غزہ کی 45 فیصد عمارتیں مکمل یا جزوی تباہ ہوچکی ہیں اور 14 لاکھ سے زائد افراد بے گھر ہوگئے ہیں۔

اس ہفتے ہلاک ہونے والے فلسطینیوں میں سے 65 فیصد جنوبی غزہ میں تھے، یہ وہ علاقہ ہے جہاں اسرائیل نے بمباری کے خطرے کے تحت دس لاکھ سے زائد فلسطینی شہریوں کو پناہ لینے پر مجبور کیا ہے۔ ایک اسرائیلی فضائی حملے کے نتیجے میں غزہ میں الجزیرہ العربیہ بیورو کے ڈائریکٹر کی اہلیہ، بیٹی اور بیٹا وائل الدحدوح ہلاک ہو گئے۔ الجزیرہ نے اس حملے کی شدید مذمت کی ہے۔

فلسطینی خاندانوں نے اپنے ارکان کی موت کے قریب آنے پر اپنے پیاروں کی شناخت کرنے میں مدد کے لیے خصوصی بریسلٹ سے ان کی شناخت کرنا شروع کر دی ہے۔

روسی قرارداد کا مسودہ جس میں فوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا تھا، امریکی ویٹو کے ساتھ ناکام ہو گیا۔ کہا جا رہا ہے کہ امریکا اسرائیل کو مزید ہتھیار بھیجنا چاہتا ہے۔ادھر ترک صدر رجب طیب اردوان نے اسرائیل کا دورہ منسوخ کرتے ہوئے کہا ہے کہ حماس دہشت گرد گروپ نہیں بلکہ آزادی کی تحریک ہے۔

آج اسرائیل کے پرتشدد حملوں کے علاوہ غزہ کے لوگوں کو ہر لمحہ نئی مشکلات کا سامنا ہے۔ غزہ کے ہسپتالوں میں 7000 مریض ایسے ہیں جنہیں موت کے خطرات کا سامنا ہے، جب کہ محصور پٹی کا ایندھن ختم ہونے کو ہے۔ ڈاکٹروں اور صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ انکیوبیٹرز میں نوزائیدہ بچے، انتہائی نگہداشت کے یونٹوں میں زخمی اور ڈائیلاسز کے مریض موت کے خطرے سے دوچار ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کا حماس سے یرغمالیوں کو رہا کرنے کا مطالبہ

عالمی ادارہ صحت نے حماس سے اپنے مطالبہ کا اعادہ کیا ہے کہ وہ صحت کی وجوہات کی بنا پر اسرائیل سے اغوا کیے گئے تمام یرغمالیوں کو رہا کرے۔ یہ اپیل ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے سربراہ ٹیڈروس اذانوم گیبریئسس کی جانب سے یرغمالیوں کے خاندانوں کی نمائندگی کرنے والے فورم کے نام سے ایک اسرائیلی غیر سرکاری تنظیم کے ساتھ بات چیت کے بعد سامنے آئی۔

گیبریئس نے ایک بیان میں کہا، ” اس بات کی فوری ضرورت ہے کہ یرغمالیوں کے زندہ ہونے کا ثبوت فراہم کیا جائے اور انسانی ہمدردی اور صحت کی بنیادوں پر تمام اغوا کاروں کی فوری رہائی کی جائے۔” انہوں نے مزید کہا، “بہت سے یرغمالی، جن میں بچے، خواتین اور بوڑھے شامل کی حالت تشویشناک ہے، ان کو فوری دیکھ بھال اور علاج کی ضرورت ہے۔”

Share With:
Rate This Article