Homeتازہ ترینجنوبی افریقا میں اسلام اور قران پاک کا قدیم ترین نسخہ

جنوبی افریقا میں اسلام اور قران پاک کا قدیم ترین نسخہ

قران پاک

جنوبی افریقا میں اسلام اور قران پاک کا قدیم ترین نسخہ

کیپ ٹاؤن: (سنو نیوز) جنوبی افریقا کے مسلمانوں کو 200 سال سے زیادہ قدیم قرآن کے ہاتھ سے لکھے ہوئے نسخے پر فخر ہے۔ یہ ایک انڈونیشی امام کا لکھا ہوا نسخہ ہے، جسے ڈچوں نے قبضے کے دور میں جنوبی افریقا میں جلاوطن کر دیا تھا۔ یہ نسخہ شہر کے تاریخی بو کاپ ضلع کی ایک مسجد میں رکھا گیا ہے۔

بی بی سی میں شائع رپورٹ کے مطابق معماروں کو 1980 ء کی دہائی کے وسط میں مسجد میں کچھ تزئین و آرائش کے دوران کاغذ کے تھیلے میں قرآن کا نسخہ ملا تھا۔

کہا جاتا ہے کہ انڈونیشیا کے امام عبداللہ بن القادی عبد السلام نے ایک سیاسی قیدی کے طور پر ایک مال بردار بحری جہاز میں سوار ہونے کے بعد، اپنی یادداشت سے قرآن پاک کا یہ نادر اور یادگار نسخہ تحریر کیا تھا۔

قرآن پاک کایہ نسخہ سیاہ اور سرخ سیاہی میں واضح عربی رسم الخط میں لکھا گیا ہے اور بہت اچھی حالت میں ہے۔ مدینہ منورہ کے مسلمانوں اور ان کے علماء نے تین سال اس نسخے کے صفحات کو ترتیب دینے میں صرف کیے، کیونکہ اس پر نمبر درج نہیں تھے، اور اسے ایک قیمتی نمونے کے طور پر محفوظ کیا گیا ہے۔

جنوبی افریقا کی مسجد میں قرآن کا نسخہ اب بھی نمائش کے لیے موجود ہے، جسے امام عبداللہ بن القادی عبد السلام نے 1794ء میں خود تحریر کیا تھا۔ کہا جاتا ہے کہ اس قیمتی متن کو چرانے کی کوشش بھی کی گئی ہے۔

امام عبداللہ بن القادی عبد السلام نے” اسلامی عقائد کے لیے رہنما کے طور پر عربی میں ایک درسی کتاب بھی تصنیف کی جس کا عنوان “عقیدہ اور مذہب کا علم ہے، جسے کیپ ٹاؤن کے مسلمان 100 سال سے زیادہ عرصے سے اپنا عقیدہ سیکھنے کے لیے استعمال کر رہے ہیں۔

اسلام جنوبی افریقا میں کیسے داخل ہوا؟

امام عبداللہ بن القادی عبد السلام کی زندگی جنوبی افریقا میں مسلمانوں کی کہانی کا خلاصہ کرتی ہے۔ ان کا تعلق انڈونیشیائی مالائی نسل سے تھا۔ انہوں نے جنوبی افریقا میں سیاسی قیدی کے طور پر جلا وطنی کی زندگی گزاری۔ ان کی کوششوں کی وجہ سے اس ملک میں اسلام پھیلا۔ایک اندازے کے مطابق مسلمان اب کیپ ٹاؤن کی 4.6 ملین آبادی کا تقریباً 5 فیصد نمائندگی کرتے ہیں۔ جنوبی افریقا میں مسلمانوں کی تعداد 20 لاکھ سے زیادہ ہے، یعنی آبادی کا تقریباً 2 فیصد۔

جنوبی افریقا میں اسلام کے داخلے اور ترقی میں غیر ارادی طور پر نیدرلینڈز اور برطانیہ کا ہاتھ تھا۔ چونکہ ملک میں آنے والے پہلے مسلمان 17ویں صدی سے 19ویں صدی کے وسط تک نیدرلینڈز سے بے گھر ہونے والوں میں سے تارکین وطن کا ایک گروپ تھا۔

انہوں نے ان جبری مزدوروں کی پیروی کی جنہیں برطانیہ نے 19ویں صدی کے دوسرے نصف میں نتال صوبے کے گنے کے کھیتوں میں کام کرنے کے لیے جلاوطن کر دیا تھا۔ ان میں سے 17000 سے زیادہ مسلمان تھے۔

اس کے بعد 1994ء میں نسل پرستی کے خاتمے کے بعد افریقیوں کی نقل مکانی ہوئی۔ ان کی تعداد 75 سے 100 ہزار کے درمیان تھی۔ اس کے بعد جنوبی ایشیا کے مسلمانوں کی بڑی تعداد کی ہجرت ہوئی۔ جنوبی افریقا کے سب سے مشہور مسلم اسکالرز میں سے ایک شیخ احمد دیدات ہیں۔

جنوبی افریقا میں زیادہ تر مسلمانوں کا تعلق سنی مسلک سے ہے۔ تاہم، شیعوں کی بھی ایک اقلیت ہے، خاص طور پر کیپ ٹاؤن میں، اور کچھ مسلمان بھی ہیں جن کا تعلق کچھ دوسرے اسلامی فرقوں سے ہے۔

جنوبی افریقا میں پہلی مسجد 1665ء میں کیپ ٹاؤن میں قائم ہوئی۔ اب ملک میں 500 سے زیادہ مساجد یونین کی تین ریاستوں، ریاست کیپ، ر یاست ٹرانسوال اور ریاست ناتال میں قائم ہیں۔ اور درجنوں اسلامی اسکول ہیں جو خود کوششوں سے بنائے گئے تھے۔ اس کے علاوہ قرآن حفظ کرنے کے اسکولوں کی ایک بڑی تعداد بھی ہے جبکہ اسلامی قانون کے لیے ایک ادارہ قائم کیا گیاہے۔

شیخ احمد دیدات، جو جنوبی افریقہ کے مشہور مسلم اسکالرز میں سے ایک ہیں، نے ڈربن میں اسلامی دعوت کے لیے ایک بین الاقوامی مرکز قائم کیا تھا۔ اس ملک میں مسلمانوں کے ایک سے زیادہ اخبار ہیں جن میں (مسلم نیوز)، (الکلام اخبار)، (الامت)، اور (الجامعہ) شامل ہیں۔

کچھ انگریزی بولنے والے اسلامی ریڈیو اسٹیشن ہیں، جن کو سیٹلائٹ کے ذریعے دنیا کے 50 سے زیادہ ممالک تک پہنچایا جاتا ہے، اسے ملک میں مسلم علماء کا ایک گروپ چلاتا ہے۔ ایک اسلامی کونسل پورے جنوبی افریقہ میں مسلمانوں کی نمائندگی کرتی ہے۔

جنوبی افریقا میں رہنے والے مسلمان کس نسل سے تعلق رکھتے ہیں؟

ملک میں مسلمانوں کا تعلق تین نسلوں سے ہے۔ ان میں حبشی النسل، ہندوستانی اور ملائی نسل کے مسلمان شامل ہیں۔ سیاہ فام مسلمانوں کی تعداد ملک میں مسلمانوں کی تعداد کے 3.5 فیصد سے زیادہ نہیں ہے، حالانکہ وہ آبادی کا 75 فیصد ہیں۔

کچھ مبصرین سفید فاموں میں اسلام کے عدم پھیلاؤ کو نسلی علیحدگی کی پالیسیوں سے منسوب کرتے ہیں جو کہ 1994ء عیسوی تک رائج تھی، جس نے اسلام قبول کرنے والے نسلی گروہوں کے دائرہ کار سے باہر اسلامی دعوت کو مؤثر طریقے سے پھیلانے سے روکا۔ جنوبی افریقا میں اسلامی طریقے سے ذبح کیا جانے والا گوشت، اور کچھ دیگر کھانے پینے کی اشیاء ہیں، اور ایسے ریستوراں ہیں جہاں مسلمان بڑے پیمانے پر آتے ہیں۔

بشکریہ: بی بی سی 

Share With:
Rate This Article