12 April 2024

Homeانٹرٹینمنٹموسیقیہر پارٹی کے لئے نغمہ گاؤں گا میں ٹیپ ریکارڈر ہوں :راحت فتح علی خان

ہر پارٹی کے لئے نغمہ گاؤں گا میں ٹیپ ریکارڈر ہوں :راحت فتح علی خان

ہر پارٹی کے لئے نغمہ گاؤں گا میں ٹیپ ریکارڈر ہوں :راحت فتح علی خان

ہر پارٹی کے لئے نغمہ گاؤں گا میں ٹیپ ریکارڈر ہوں :راحت فتح علی خان

لاہور:(سنونیوز)گلوکار راحت فتح علی خان کا کہنا ہے کہ ہر پارٹی کے لئے نغمہ گاؤں گا میں ٹیپ ریکارڈر ہوں ۔ میری سیاست میں کوئی دلچسپی نہیں نہ ہی میرا ووٹ یہاں ہے ۔

تفصیلات کے مطابق بیدیاں روڈ پر قائم اپنے فارم ہاوس پر پریس کانفرنس کرتے ہوئے مقبول ترین گلوکار کاکہنا تھا کہ میں نے اپنی سابق مینجمینٹ کو ختم کردیا ہے ،کوئی بھی آر ایف اے کے شوز کے حوالے سے میری نئی مینجمنٹ سے رابطہ کریں ،میرے تمام کلائنڈ میرے دستخط کے بغیر کسی سے معاہدہ کرے ۔

راحت فتح علی خان کا کہنا تھا کہ فروری سے ورلڈ ٹوور شروع کررہا ہوں ساؤتھ افریقہ سے آغاز کروں گا ، اب میری مینجمینٹ این آر کے سے ہو گی ، میری نئی مینجمنٹ میں میری بیوی ، میرا برادران لا ، میرا بھائی اور میرا دوست شامل ہیں، اب نئی مینجمنٹ میری اہلیہ کرے گی۔

راحت فتح علی خان نے واضح کیا کہ مجھے کوئی مینجمنٹ آگے لے کر نہیں گئی، میرا فن مجھے شہرت کی بلندیوں پر لے کر گیا، بھارت کے ساتھ ثقافتی تعلقات بحال ہونے چاہیے۔

گذشتہ سال کے آخر میں راحت فتح علی خان اور ان کے پروموٹر نے کیلی فورنیا کی عدالت سے 2.2 ملین ڈالر کا کیس جیتا ،کیلی فورنیا کے مقامی پروموٹر نے ان پر بھتہ وصول کرنے، مالی دباؤ ڈالنے اور ہتک عزت کے الزمات عائد کئے تھے۔

بالی ووڈ ایونٹس کے بکرم جیت سنگھ نے کارل کالرا جیون ساتھی کے ساتھ مل کر راحت اور پروموٹر سلمان احمد سے معاہدہ کیا تھا، راحت فتح علی خان کا شو 5 اکتوبر 2019 کو کیلی فورنیا میں ہونا تھا، عدالتی دستاویز کے مطابق بکرم جیت سنگھ نے شو سے قبل راحت اور سلمان احمد پر 30 ہزار ڈالر بھتہ مانگنے باور دیگر الزامات لگائے تھے۔

ابتدائی طور پر وکلا پر 50 ہزار ڈالر خرچ کرنے کے باوجود سلمان احمد نے کیلی فورنیا سپریم کورٹ میں اپنی نمائندگی خود کی، راحت فتح علی خان عدالت میں پیش نہیں ہوئےمسٹر سنگھ اور کارل کالرا کا راحت کے کنسرٹ کیلئے سلمان احمد سے اڈھائی لاکھ ڈالر کا معاہدہ ہوا تھا۔

مسٹر سنگھ نے عدالت میں تسلیم کیا کہ انھوں نے کنسرٹ سے پہلے 150,000 ڈالر ادا کئے عدالت کو بتایا گیا کہ سلمان احمد نے شو، کارل کالرا کو فروخت کیا تھا لیکن انھوں نے شو مسٹر سنگھ کو فروخت کردیا بکرم جیت سنگھ نے عدالت میں دعوی کیا کہ سلمان احمد نے شو کی قیمت کم کرکے 150,000 ڈالر کر دی تھی۔

یہ بھی پڑھیں:

مبینہ منی لانڈرنگ: سروں کے سلطان راحت فتح علی خان کےخلاف نیا کھاتہ کھل گیا

سلمان احمد کی طرف سے شو کی قیمت کم کرنے کے سبب وہ مقررہ رقم ہی ادا کرنے کے پابند تھے، مسٹر سنگھ شو کی شام معاہدے کے مطابق سنگھ اور ساتھی پر ایک لاکھ ڈالر کا بقایا تھے،کارل کالرا کی جانب سے ایک لاکھ بقایا میں سے 30 ہزار ڈالر کی ادائیگی پر شو دو گھنٹے تاخیر سے شروع ہوا۔

سلمان احمد نے شائقین کو شو میں تاخیر کی وجہ فنکار کو پوری قیمت ادا نہ کرنے کی وجہ بھی بتائی تھی ،مسٹر سنگھ نے عدالت کو بتایا کہ وہ سلمان احمد کی طرف سے رعایت پر راضی ہونے کے سبب 30 ہزار یا ایک لاکھ ڈالر دینے کے پابند نہیں رہے،

شو سے قبل 30 ہزار ڈالر بھتہ کی شکل میں لے کر میری ساکھ کو نقصان پہنچایا گیا، بکرم جیت سنگھ سلمان احمد نے عدالت میں الزامات کی تردید کرتے ہوئے بتایا کہ وہ سنگھ اور ساتھی کے درمیان معاہدے میں ترمیم نہیں کرسکتے تھے۔

جج نے مسٹر سنگھ کی جانب سے عدالت میں پیش نصف درجن گواہوں کو بھی رد کردیا،راحت اور سلمان احمد نے صرف حقائق پر بھروسہ کرتے ہوئے عدالت میں کوئی گواہ پیش نہیں کیا،جج نے سلمان احمد کی طرف سے معاملات میں ایمان دار ی سے کام لینے پر ان کے حق میں فیصلہ سنایا۔

یہ کیس راحت فتح علی خان کے خلاف سازش تھی، سلمان احمد سازش کا مقصد راحت فتح علی خان کی ساکھ اور انھیں 2.2 ملین ڈالر سے زائد کا نقصان پہنچانا تھا، سلمان احمد سلمان احمدگذشتہ تین دھائیوں سے انٹرٹینمنٹ انڈسٹری سے وابستہ ہیں، سلمان احمد نوبیل پیس پرائز سمیت دنیا کے دیگر اہم مقامات پر راحت فتح علی خان کے شو کراچکے ہیں۔

Share With:
Rate This Article