12 April 2024

Homeتازہ تریناسرائیل اور حماس کا غزہ کو امداد فراہم کرنے پر اتفاق

اسرائیل اور حماس کا غزہ کو امداد فراہم کرنے پر اتفاق

Israel and Hamas agree to provide aid to Gaza

اسرائیل اور حماس کا غزہ کو امداد فراہم کرنے پر اتفاق

دوحہ: (ویب ڈیسک) قطری حکام کا کہنا ہے کہ اسرائیل اور حماس کے درمیان ہونے والی ڈیل کے مطابق امداد آج غزہ اور اسرائیلی یرغمالیوں تک پہنچائی جائے گی۔

ان کا کہنا ہے کہ اس ملک اور فرانس کے درمیان ہونے والے معاہدے کے مطابق حماس کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے اسرائیلیوں کو دوائیں پہنچائی جائیں گی۔ اس کے بدلے میں اسرائیل دیگر ضروری سامان غزہ بھیجنے کی اجازت دے گا۔

غزہ کی پٹی میں اسرائیلی بمباری کے بعد صورتحال کشیدہ ہوگئی ہے۔ اس حقیقت کے باوجود کہ حماس کے پاس اب بھی بہت سے اسرائیلی یرغمال ہیں، امریکا کا کہنا ہے کہ اسے امید ہے کہ نئی بات چیت دیگر یرغمالیوں کی رہائی کا باعث بنے گی۔

وائٹ ہاؤس کی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے کہا کہ مشرق وسطیٰ کے لیے امریکی نمائندہ ایسے معاہدے کے امکان پر بات چیت کے لیے قطر گئے تھے۔یہ بات چیت “بہت سنجیدہ” تھی۔”ہمیں امید ہے کہ جلد ہی کسی نتیجے پر پہنچ جائے گا اور کسی نتیجے پر پہنچ جائے گا۔”

قطر کی وزارت خارجہ کے ترجمان ماجد الانصاری نے اس سے قبل امداد کی فراہمی کے معاہدے کا اعلان کیا تھا۔ اس معاہدے کے مطابق آج دوحہ سے انسانی امدادی سامان مصر بھیجا جا رہا ہے۔ اس کے بعد امداد غزہ بھیجی جائے گی تاکہ شہریوں اور اسرائیلی یرغمالیوں میں تقسیم کی جائے۔

اطلاعات کے مطابق 132 سے زائد یرغمالی اب بھی غزہ میں موجود ہیں۔ 7 اکتوبر کو اسرائیل پر حماس کے حملے میں تقریباً 240 افراد کو یرغمال بنایا گیا تھا۔ اس حملے میں تقریباً 1300 افراد مارے گئے جن میں زیادہ تر عام شہری تھے۔

نومبر میں جنگ بندی کے اختتام پر اسرائیلی یرغمالیوں کے اہل خانہ نے اسرائیلی جنگی کابینہ کو بھیجے گئے ایک خط میں کہا کہ بہت سے مغویوں کو طبی امداد کی ضرورت ہے اور ان میں سے کچھ کی حالت فوری خطرے میں ہے۔ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے گذشتہ ہفتے کہا تھا کہ اسرائیل کی قومی انٹیلی جنس کے سربراہ ڈیوڈ بارنیا نے یرغمالیوں کو ادویات کی فراہمی کے معاہدے کے حوالے سے قطر کے ساتھ بات چیت شروع کر دی ہے۔

اسرائیل پر حماس کے حملے کے بعد اس ملک نے غزہ پر شدید بمباری شروع کردی۔ حماس کے زیر کنٹرول وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق ان حملوں میں 24 ہزار سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے ہیں۔ اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہاگری نے 6 جنوری کو کہا کہ اسرائیل نے شمالی غزہ میں تقریباً 8000 جنگجوؤں کو ہلاک کیا ہے۔

فلسطینی حکام نے یہ بھی کہا ہے کہ حملوں کے آغاز سے اب تک 85 فیصد آبادی بے گھر ہو چکی ہے۔ اسرائیل پر جنگ بندی کے فیصلے پر غور کرنے کے لیے بین الاقوامی دباؤ بڑھ گیا ہے۔ امریکا نے غزہ میں شہریوں کی ہلاکتوں کی بڑی تعداد پر بھی تشویش کا اظہار کیا ہے۔

امریکی وزیر خارجہ انتھونی بلینکن نے گذشتہ ہفتے اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ غزہ کی پٹی کے 90 فیصد لوگوں کو خوراک کی عدم تحفظ کا سامنا ہے اور انہوں نے مزید کہا: “بچوں کے لیے کم از کم طویل مدتی منفی نتائج برآمد ہوں گے۔ خوراک، بہت سا پانی، بہت سی ادویات اور دیگر ضروری اشیاء غزہ تک پہنچائی جائیں۔ اقوام متحدہ کے انسانی امور کے سربراہ نے بھی غزہ کی صورتحال کو ناقابل برداشت قرار دیا ہے۔

Share With:
Rate This Article