Homeٹیکنالوجیبگ ٹیکٹک ٹاک پر 345 ملین یورو جرمانہ

ٹک ٹاک پر 345 ملین یورو جرمانہ

ٹک ٹاک پر 345 ملین یورو جرمانہ

ٹک ٹاک پر 345 ملین یورو جرمانہ

ڈبلن: (سنو نیوز) آئرش ریگولیٹرز نے بچوں کی پرائیویسی کی خلاف ورزی کرنے پر ٹک ٹاک پر 345 ملین یورو جرمانہ کیا ہے۔یہ ٹک ٹاک پر کسی ریگولیٹر کی طرف سے لگایا گیا اب تک کا سب سے بڑا جرمانہ ہے۔

یہ جرمانہ آئرش ڈیٹا پروٹیکشن کمیشن نے یورپی یونین کے جنرل ڈیٹا پروٹیکشن ریگولیشن کے پرائیویسی قانون کے تحت جاری کیا ہے۔ٹک ٹاک کمپنی کے ترجمان نے جرمانے کے بعد اپنے بیان میں کہا ہے کہ ہم فیصلے کا احترام کرتے ہیں لیکن ہم اس سے متفق نہیں ہیں۔

دوسری جانب ڈیٹا پروٹیکشن کمیشن نے ٹک ٹاک پر جرمانہ عائد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بچوں کی پرائیویسی سیٹنگز کے بارے میں شفافیت نہیں تھی، اور اس کے بارے میں سوالات اٹھائے کہ ان کے ڈیٹا پر کارروائی کیسے کی گئی؟

بیان میں کہا گیا کہ تحقیقات میں یہ بھی پتہ چلا ہے کہ 13 سے 17 سال کی عمر کے لوگوں کے بنائے گئے اکاؤنٹس رجسٹریشن کے بعد پبلک ہو گئے، یعنی جو مواد انہوں نے پوسٹ کیا وہ سب کو دکھائی دے رہا تھا۔ یہ خاص طور پر ٹک ٹاک کے ہاتھ میں ہے کیونکہ اس نے پلیٹ فارم کو جس طرح سے ڈیزائن کیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ٹک ٹاک کمپنی کو اپنی ڈیٹا پروسیسنگ کو جنرل ڈیٹا پروٹیکشن ریگولیشن کے مطابق مکمل کرنے کے لیے تین ماہ کا وقت دیا گیا تھا۔ لندن اسکول آف اکنامکس اینڈ پولیٹیکل سائنس میں بچوں کے ڈیجیٹل حقوق اور تجربات کی ماہر پروفیسر سونیا لیونگ اسٹون نے ڈی پی سی کے فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہٹک ٹاک پلیٹ فارمز کو یہ بتانا چاہیے تھا کہ ان کے ڈیٹا کو کیسے ہینڈل کیا جاتا ہے اور سب سے اہم بات یہ ہے کہ ان کے ڈیٹا کے ساتھ منصفانہ سلوک کیا جاتا ہے، کیونکہ رازداری ایک بچے کا حق ہے۔

Share With:
Rate This Article