Homeپاکستانعدالتیںلاہور ہائیکورٹ: پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اقدام چیلنج

لاہور ہائیکورٹ: پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اقدام چیلنج

Lahore-High-Court

لاہور ہائیکورٹ: پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کا اقدام چیلنج

لاہور:(سنو نیوز) لاہور ہائیکورٹ میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے اقدام کو چیلنج کردیا گیا ہے، جوڈیشل ایکٹوزیم پینل کے سربراہ اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے درخواست دائر کی ہے۔

دائر درخواست میں نگران وفاقی حکومت سمیت دیگر کو فریق کو بنایا گیا ہے، موقف اختیار کیا گیا ہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 26 روپے کا اضافہ کردیا ہے ۔

پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کا تعین کرنے کے لیے کوئی میکنزم موجود نہیں ہے، پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے سے مزید مہنگائی کا نیا طوفان آئے گا ۔

استدعا کی گئی ہے کہ عدالت پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں حالیہ اضافے کے اقدام کو کالعدم قرار دے۔

خیال رہے کہ گذشتہ رات نگران حکومت نے پیٹرول کی قیمت میں 26.02 روپے فی لیٹر اضافہ کیا تھا، پیٹرول کی نئی قیمت 331 روپے 38 پیسے پر پہنچ گئی ہے۔

نگران حکومت نے مہنگائی سے بے حال عوام پر بم گراتے ہوئے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں ایک بار پھر اضافہ کر دیا ہے۔ پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 26 روپے 02 پیسے کا اضافہ کردیا گیا ہے جس کے بعد پیٹرول کی نئی قیمت 331 روپے 38 پیسے مقررہوگئی ہے۔

دوسری جانب ڈیزل کی فی لیٹر قیمت میں 17 روپے 34 پیسے کا اضافہ ہونے کے بعد ڈیزل کی نئی قیمت 329 روپے 18 پیسے پر جا پہنچی ہے۔

وزارت خزانہ کی جانب سے جاری ہونے والے نوٹیفکیشن کے مطابق نئی قیمتوں کا اطلاق فوری ہو گا۔

یاد رہے کہ نگران کی حکومت نے تیسری بار پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ کیا ہے۔ 31 اگست 2023 کو فی لیٹر پیٹرول کی قیمت 14 روپے 91 پیسے جبکہ ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں 18 روپے 44 پیسے کا ہوشربا اضافہ کیا تھا۔

اس اضافے سے ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں 300 روپے فی لیٹر سے تجاوز کر گئی تھیں جس پر عوام نے سخت ترین ردعمل دیا تھا۔

نگران حکومت کے ایک ماہ کے دور میں پیٹرول 58 روپے 43 پیسے مہنگا ہوا جبکہ ڈیزل ایک ماہ میں 55 روپے 78 پیسے مہنگا ہوا۔

Share With:
Rate This Article