12 April 2024

Homeپاکستانآئندہ چوبیس گھنٹوں کے دوران خشک سردی اور برفباری کا امکان

آئندہ چوبیس گھنٹوں کے دوران خشک سردی اور برفباری کا امکان

آئندہ چوبیس گھنٹوں کے دوران خشک سردی اور برفباری کا امکان

آئندہ چوبیس گھنٹوں کے دوران خشک سردی اور برفباری کا امکان

اسلام آباد:(سنونیوز)آئندہ چوبیس گھنٹوں کے دوران ملک کے بیشتر علاقوں میں شدید سرد اور خشک جبکہ پہاڑی علاقوں میں برفباری کا امکان ۔

محکمہ موسمیات کے مطابق اسلام آباد اور خیبرپختونخوا صوبہ کے بیشتر اضلاع میں موسم سرد اور خشک جبکہ بالائی اضلاع میں شدید سرد اور مطلع ابر آلود رہے گا تاہم چترال، دیر ، کو ہستان، سوات میں مطلع جز وی ابر آلود رہنے کے علا وہ رات کے اوقات میں بارش اور پہا ڑوں پر برفباری کا امکان ہے۔

پنجاب صوبہ کے بیشتر اضلاع میں موسم سرد اور خشک جبکہ مری، گلیات اور گر دو نواح میں شدید سرد جبکہ مطلع جزوی ابر آلود رہے گا۔ساہیوال سیالکوٹ، نارووال،گوجرانوالہ، جہلم ، منگلا،فیصل آباد، جھنگ،سرگودھا،اور گر دو نواح میں شدید دھند / سموگ چھائے رہے گی۔

موسم کا حال بتانے والوں کا کہنا ہے کہ بلوچستان اور سندھ صوبہ کے بیشتر اضلاع میں موسم سرد اور مطلع جزوی ابر آلود رہے گا۔ سکھر، لاڑکانہ ، دادو، گھوٹکی، خیر پور اور پڈعیدن میں شدید دھند/سموگ چھائے رہنے کا امکان ہے۔

کشمیر اور گلگت بلتستان میں موسم شدید سرد اور مطلع جزوی ابر آلود رہنے کے علا وہ رات کے اوقات میں ہلکی بارش اور پہا ڑوں پر برہلکی برفباری کا امکان ہے۔

گذشتہ دنوںاسلام آباد لاہور اور پشاور سمیت ملک کے مختلف شہروں میں زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کیے گئے، لوگ کلمہ طیبہ کا ورد کرتے ہوئے گھروں سے باہر نکل آئے۔

6 شدت کے زلزلے کے جھٹکے کوہاٹ، سرگودھا، ایبٹ آباد، خوشاب، چارسدہ اور دیگر شہروں میں بھی محسوس کیے گئے۔

اس کے علاوہ ڈی آئی خان، بنوں، ہنگو، دیامر، پارا چنار، منڈی بہاءالدین، بھکر، نوشہرہ، مظفرآباد، وادی نیلم آزاد کشمیر میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے، شیخوپورہ، پاکپتن اور گوجرانوالہ میں بھی زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے۔

زلزلہ پیما مرکز کے مطابق زلزلے کی شدت 6 ریکارڈ کی گئی جس کا مرکز کوہ ہندوکش افغانستان تھا، زلزلہ 213 کلو میٹرکی گہرائی میں آیا۔ زلزلے کے باعث کسی جانی و مالی نقصان کی کوئی اطلاع تاحال موصول نہیں ہوئی۔

یاد رہے زلزلے قدرتی آفت ہیں جن کے باعث دنیا بھر میں لاکھوں افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں۔ ماہرین کے مطابق زمین کی تہہ تین بڑی پلیٹوں سے بنی ہے۔ پہلی تہہ کا نام یوریشین، دوسری انڈین اور تیسری اریبئین ہے۔ زیر زمین حرارت جمع ہوتی ہے تو یہ پلیٹس سرکتی ہیں۔ زمین ہلتی ہے اور یہی کیفیت زلزلہ کہلاتی ہے۔

Share With:
Rate This Article