Homeتازہ ترینتائیوان کے فوجی یوکرین میں روس کے خلاف کیوں لڑ رہے ہیں؟

تائیوان کے فوجی یوکرین میں روس کے خلاف کیوں لڑ رہے ہیں؟

تائیوان کے فوجی یوکرین میں روس کے خلاف کیوں لڑ رہے ہیں؟

تائیوانی فوجی تسینگ شینگ گوانگ گزشتہ ماہ یوکرین کی فوج کے ساتھ لڑتے ہوئے ہلاک ہو گئے تھے۔ شینگ یوکرین کی سرحدی حفاظت کرنے والی افواج کے بین الاقوامی دستے کا حصہ تھے۔ ان کا انتقال گزشتہ ماہ یوکرین کے شہر لیمان میں ہوا۔ وہ یوکرین میں مرنے والا پہلا تائیوانی فوجی تھا۔

تائیوان کی وزارت خارجہ نے شینگ گوانگ کی موت کے بعد ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ اس نے یوکرین کو آزاد رکھنے کے لیے اپنی جان دے دی۔

رواں سال فروری میں یوکرین میں جنگ شروع ہونے کے بعد سے دنیا بھر سے ہزاروں فوجی یوکرین کی طرف سے لڑ چکے ہیں۔ ان تمام غیر ملکی فوجیوں میں تائیوان کے فوجیوں کی تعداد تقریباً 10 تھی۔

سوشل میڈیا کے ذریعے شینگ کی دوست بننے والی سیمی لن کا کہنا ہے کہ شینگ گوانگ کو اس بات کی فکر تھی کہ تائیوان کا بھی ایک دن یوکرین جیسا حشر ہو گا۔ اس نے کہا کہ مجھے یاد ہے کہ انہوں نے اپنے ایک دوست سے کہا تھا کہ وہ روسی فوجیوں کے ہاتھوں یوکرائنی شہریوں کے تشدد اور ہلاکتوں پر خاموش نہیں رہ سکتا۔

خیال رہے کہ تائیوان کے شہریوں کے لیے فوج میں خدمات انجام دینا لازمی ہے۔ لہذا، وہ یوکرین کی فوج کے غیر ملکی جنگجوؤں کے بیڑے میں شامل ہونے کے اہل ہو جاتے ہیں۔

28 سالہ جیک یاو بھی ان لوگوں میں سے ایک ہیں جنہوں نے جنگ میں جانے کا فیصلہ کیا۔ جیک یاؤ صدر ولادیمیر زیلنسکی کے غیر ملکی رضاکاروں سے یوکرین کی جنگ میں شامل ہونے کی اپیل کے تین دن بعد یوکرین پہنچے۔

وہ تائیوان سے پولینڈ کے راستے یوکرین کے دارالحکومت کیف پہنچے۔ انہوں نے بی بی سی کو بتایا کہ ” گزشتہ سال سے اس صورت حال پر نظر کر رہا ہوں۔ خاص طور پر یوکرین کے ساتھ سرحدوں پر روسی فوجی اور ٹینک۔ کسی کو یقین نہیں تھا کہ یہ جنگ ہو گی۔”تائیوان اور وہاں کے حالات ایک جیسے ہیں۔ میں سوچ رہا تھا کہ میں یوکرین کی مدد کے لیے کیا کر سکتا ہوں۔”

جیک جارجیا کی فوج میں غیر ملکی لشکر میں شامل ہوا اور اسے محاذ جنگ کے ارد گرد جاسوسی کے مشن پر مامور کیا گیا۔ جب وہ پہنچا تو اس وقت بھی روس کیف پر قبضہ کرنے کی کوششیں جاری رکھے ہوئے تھا۔

انہوں نے دارالحکومت کیف کے شمال میں واقع شہر کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ “ہر روز اس پر بمباری اور راکٹ کیے جاتے تھے کیونکہ روسی بوخاس شہر میں موجود تھے۔”

یہ بات بھی ذہن میں رہے کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے بارہا اس بات پر زور دیا ہے کہ اگر چین نے حملہ کیا تو امریکہ تائیوان کا دفاع کرے گا۔ تاہم، باضابطہ امریکی پالیسی حکمت عملی کے لحاظ سے غیر واضح ہے۔ اس میں تائیوان کے تحفظ کا کوئی عہد نہیں ہے، لیکن یہ پالیسی اس اختیار کو بھی مسترد نہیں کرتی۔

پچھلے مہینے جو بائیڈن نے کہا تھا کہ وہ نہیں سمجھتے کہ چین فوری طور پر تائیوان پر حملہ کرنے والا ہے۔ اس کے بعد بالی میں G-20 سربراہی اجلاس سے قبل چینی صدر شی جن پنگ اور جو بائیڈن کے درمیان ملاقات بھی ہوئی۔

تائیوان پبلک اوپینین فورم کے پال ہوانگ کا کہنا ہے کہ تصادم کے امکان پر تائیوان میں عام لوگوں کی رائے ملی جلی ہے۔انہوں نے کہا کہ “دلچسپ بات یہ ہے کہ زیادہ تر لوگوں کی طرف سے یہ اشارہ ملتا ہے کہ وہ فکر مند نہیں ہیں۔”انہوں نے یہ بھی کہا کہ تائیوان کے زیادہ تر لوگ یہ نہیں سمجھتے کہ وہ چین کا سامنا کر سکتے ہیں جب تک یوکرین روس کے سامنے کھڑا ہے۔

Share With:
Rate This Article