12 April 2024

Homeتازہ ترینانسانی فنگر پرنٹس منفرد نہیں، مصنوعی ذہانت نے ثابت کردیا

انسانی فنگر پرنٹس منفرد نہیں، مصنوعی ذہانت نے ثابت کردیا

Our fingerprints may not be unique, claims AI

انسانی فنگر پرنٹس منفرد نہیں، مصنوعی ذہانت نے ثابت کردیا

کولمبیا: (ویب ڈیسک) بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ ہر فنگر پرنٹ منفرد ہوتا ہے، یہ ایک ایسا عقیدہ جسے اب کولمبیا یونیورسٹی کی تحقیق نے چیلنج کیا ہے۔

اس امریکی یونیورسٹی کی ایک ٹیم نے مصنوعی ذہانت کو تربیت دی ہے تاکہ 60,000 فنگر پرنٹس کی جانچ کی جا سکے تاکہ یہ معلوم کیا جا سکے کہ فنگر پرنٹ کسی شخص کا ہے یا نہیں؟ محققین کا دعویٰ ہے کہ یہ ٹیکنالوجی 75-90 فیصد درستگی کے ساتھ اس بات کا تعین کر سکتی ہے۔لیکن وہ بالکل نہیں جانتے کہ یہ کیسے کام کرتا ہے۔ تحقیق کی نگرانی کرنے والے یونیورسٹی کے روبوٹکس کے ماہر پروفیسر ہوڈ لپسن تسلیم کرتے ہیں، “ہم قطعی طور پر نہیں جانتے کہ AI یہ کیسے کرتا ہے۔”

محققین کا خیال ہے کہ جس طرح سے AI ان اثرات کا تجزیہ کرتا ہے، وہ روایتی طریقوں سے مختلف ہے- یعنی یہ انگلی کے بیچ میں سرکلز کی سمت بندی پر توجہ مرکوز کرتا ہے، بجائے اس کے کہ ہر ٹکڑا کیسے ختم ہوتا یا تقسیم ہوتا ہے۔

پروفیسر لپسن کا کہنا ہے کہ “یہ واضح طور پر فرانزک سائنس کے روایتی طریقوں کا استعمال نہیں کرتا جو دہائیوں پرانے ہیں۔” “ایسا لگتا ہے کہ شاید یہ انگلی کے بیچ میں موڑ کا زاویہ استعمال کر رہا ہے۔” مطالعہ کے نتائج ان کے اور گریجویٹ طالب علم گیبی گوو دونوں کے لیے حیران کن تھے۔

لیکن اس شعبے کے دیگر ماہرین کے لیے یہ خبر شاید نئی نہ ہو۔ یونیورسٹی آف ہل میں فرانزک سائنس کے پروفیسر گراہم ولیمز کا کہنا ہے کہ انگلیوں کے نشان منفرد ہونے کا خیال کبھی ثابت نہیں ہوا۔ بقول اُن کے، ’’ایمانداری سے، ہم نہیں جانتے کہ فنگر پرنٹ واقعی منفرد ہے یا نہیں۔ ہم صرف اتنا کہہ سکتے ہیں کہ جہاں تک ہم جانتے ہیں، کسی بھی دو لوگوں کے فنگر پرنٹ ایک جیسے نہیں تھے۔”

کولمبیا یونیورسٹی کی تحقیق کے نتیجے میں بائیو میٹرکس یا بایومیٹرکس – کسی ڈیوائس کو غیر مقفل کرنے یا معلومات فراہم کرنے کے لیے مخصوص انگلی کا استعمال – اور فرانزک سائنس کے لیے ممکنہ مضمرات ہو سکتے ہیں۔ اگر، مثال کے طور پر، جائے وقوعہ A پر ایک نامعلوم انگوٹھے کا نشان دریافت ہوا ہے، اور جائے وقوعہ B میں ایک نامعلوم انڈیکس فنگر پرنٹ دریافت ہوا ہے، تو فی الحال فرانزک سائنس میں دونوں کو ایک ہی شخص سے جوڑنے کا کوئی طریقہ نہیں ہے – لیکن یہ AI ٹول اس طرح کے کنکشن کا پتہ لگانے کے قابل ہو سکتا ہے۔

یونیورسٹی کے محققین، جنہیں فرانزک سائنس میں کوئی مہارت نہیں ہے، تسلیم کرتے ہیں کہ مزید تحقیق کی ضرورت ہے۔ مصنوعی ذہانت کے آلات کو اکثر بڑی مقدار میں ڈیٹا کا استعمال کرتے ہوئے تربیت دی جاتی ہے، اور اس ٹیکنالوجی کی مزید ترقی کے لیے بہت سے فنگر پرنٹس کی ضرورت ہوتی ہے۔

اس کے علاوہ اس مصنوعی ذہانت کی تربیت کے لیے جتنے بھی کام کیے گئے وہ مکمل اور اعلیٰ معیار کے تھے جب کہ جو کام عموماً حقیقی دنیا میں پائے جاتے ہیں وہ نامکمل اور ناقص معیار کے ہوتے ہیں۔ مسٹر گو کے مطابق، “ہمارا ٹول عدالت میں پیش کیے گئے شواہد پر تبصرہ کرنے کے لیے کارآمد نہیں ہے، لیکن اسے قانونی تحقیقات میں سراغ تلاش کرنے کے لیے استعمال کیا جا سکتا ہے۔”

لیکن سٹافورڈ شائر یونیورسٹی میں فارنزک سائنس کی اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر سارہ فیلڈ ہاؤس کا خیال ہے کہ اس مرحلے پر اس تحقیق کا فوجداری مقدمات پر “اہم اثر” ہونے کا امکان نہیں ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یہ واضح نہیں ہے کہ سطحوں کے ساتھ رابطے میں جلد کے ٹکرانے کا طریقہ کس طرح متاثر کرے گا کہ AI مارکروں کے ساتھ کیسے تعامل کرتا ہے، یا کیا مارکر زندگی بھر ایک جیسے رہیں گے، جبکہ روایتی مارکر بالکل تبدیل نہیں ہوتے ہیں۔لیکن ان سوالات کا جواب دینا کوئی آسان کام نہیں ہے کیونکہ محققین کو یقین نہیں ہے کہ AI بالکل کیا کر رہا ہے، ایک ایسا مسئلہ جس سے تمام AI جدوجہد کر رہے ہیں۔

انگلیوں کے نشان پیدائش سے پہلے بنتے ہیں۔ پچھلے سال شائع ہونے والی تحقیق نے تجویز کیا کہ ان نشانات کے پیچھے جینیاتی عمل اسی طرح کا ہو سکتا ہے جو زیبرا اور چیتے کے جسم کے نشانات کا تعین کرتا ہے۔ یہ ایک نظریہ ہے جو پہلی بار ایلن ٹورنگ نے 1950 ءکی دہائی میں پیش کیا تھا۔

بشکریہ: بی بی سی

Share With:
Rate This Article