12 April 2024

Homeتازہ ترینولیم لائی نے تائیوان کا صدارتی انتخاب جیت لیا

ولیم لائی نے تائیوان کا صدارتی انتخاب جیت لیا

Taiwan elects William Lai president in historic election

ولیم لائی نے تائیوان کا صدارتی انتخاب جیت لیا

تائپی:(ویب ڈیسک)ڈیموکریٹک پیپلز پارٹی کے چیئرمین ولیم لائی تائیوان کے اگلے صدر ہوں گے۔ مینتانگ نے شکست قبول کر لی اور اس کے ساتھ ہی لائی کی جیت پر مہر ثبت ہو گئی ہے۔

مقامی نشریاتی اداروں کے مطابق ولیم لائی 50 لاکھ ووٹ حاصل کرنے والے پہلے صدارتی امیدوار ہیں۔ ان کی مخالف Comintang پارٹی نے انتخابات میں چین کے ساتھ بہتر تعلقات قائم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

انتخابات میں تیسری پارٹی تائیوان پیپلز پارٹی تھی۔ تائیوان پیپلز پارٹی کے صدارتی امیدوار وین جے نے بھی شکست قبول کر لی ہے۔ 13 جنوری کو ہونے والے انتخابات میں پارلیمنٹ کی 113 نشستوں کے لیے بھی ووٹنگ ہوئی۔

Kuomintang پارٹی کے صدارتی امیدوار Hu-Yu Yi نے ولیم لائی کو مبارکباد دی اور کہا کہ انہیں امید ہے کہ تمام جماعتیں تائیوان کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے مل کر کام کریں گی۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں بہت سے مسائل اور مسائل درپیش ہیں۔ اس لیے ہمیں ایسی حکومت کی ضرورت ہے جو انہیں حل کر سکے۔ ہمیں ایسی حکومت کی ضرورت ہے جو نوجوانوں کے لیے کام کرے۔ ہمیں امید ہے کہ Komitang آگے بڑھے گا اور مضبوط ہو جائے گا۔

الیکشن جیتنے کے بعد لائی نے اپنے ریمارکس میں اپنے الفاظ کا انتخاب بہت احتیاط سے کیا۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ وہ چین کے ساتھ تائیوان کے تعلقات کے بارے میں بہت محتاط ہیں۔ انہوں نے کہا کہ چین کے ساتھ باہمی احترام کی بنیاد پر مذاکرات ہوں گے۔ چین نے ہمیشہ ان پر تائیوان کی آزادی کا حامی ہونے کا الزام لگایا ہے۔

وہ چین کے ساتھ تائیوان کے تعلقات کے بارے میں کافی آواز اٹھا رہے ہیں۔ تاہم وہ امریکا جیسے اتحادی ممالک کو بتاتے رہے ہیں کہ وہ اپنے پیشرو صدر سائی انگ وین کو متوازن رکھنے کی پالیسی اپنائیں گے۔ چین تائیوان کو اپنا حصہ سمجھتا رہا ہے اور ایک آزاد ملک کے طور پر اس کے وجود سے انکار کرتا رہا ہے۔

چین اور امریکا اس الیکشن پر گہری نظر رکھے ہوئے تھے کیونکہ یہ خودساختہ جزیرہ دونوں کے لیے تزویراتی طور پر اہم ہے۔ بہت سے ماہرین کی رائے ہے کہ عام انتخابات کے نتائج اس جزیرے کے ساتھ چین کے تعلقات کی نوعیت کو متاثر کریں گے۔ اس سے خطے میں کشیدگی بڑھ سکتی ہے اور عالمی معیشت پر اس کا اثر پڑ سکتا ہے۔

صدر Tsai Ing-wen آئینی طور پر مقرر کردہ مدت کی حدود کی وجہ سے اپنی دو میعاد پوری کرنے کے بعد عہدے سے سبکدوش ہونے کے عمل میں ہیں۔ چین اپنی جماعت ڈیموکریٹک پروگریسو پارٹی (DPP) کو علیحدگی پسند سمجھتا ہے۔

تحقیقی مطالعات سے پتہ چلتا ہے کہ چین اور تائیوان کے درمیان کشیدگی کے باوجود، تائیوان کے عوام کی اکثریت اقتصادی ترقی کو سب سے اہم مسئلہ سمجھتی ہے۔ آفیشل نیشنل سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کونسل کی جانب سے 2023 ء میں کی گئی ایک تحقیق میں بتایا گیا کہ 34.2 فیصد لوگ معیشت کو سب سے اہم مسئلہ سمجھتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ اگلا صدر اس مسئلے کو پہلے حل کرے۔

سروے میں شامل بہت سے لوگوں نے کہا کہ صدر تسائی انگ وین نے پچھلے انتخابات میں کیے گئے بہت سے وعدوں کو پورا نہیں کیا۔ اس کے بعد بھی ولیم لائی کا انتخاب ظاہر کرتا ہے کہ لوگوں کی بڑی تعداد کو ان کی پارٹی پر اعتماد ہے۔

تائیوان جزیرہ جنوب مشرقی چین کے ساحل سے 161 کلومیٹر دور ہے۔ 1949 میں، جب چین کی نیشنلسٹ پارٹی، Kuomintang (KMT)، خانہ جنگی کے دوران چینی کمیونسٹ پارٹی سے ہار گئی، تو اس نے تائیوان کے جزیرے پر پسپائی اختیار کر لی اور یہاں حکومت قائم کی۔ تب سے یہ جزیرہ خود مختار ہے۔ کئی دہائیوں بعد، تائیوان آمریت سے دور ہو گیا اور ایک نئے آئین کے ساتھ جمہوریت کو اپنایا۔ آبادی کا ایک بڑا حصہ اس جزیرے کو چینی سرزمین سے الگ سمجھتا ہے۔ لیکن چینی کمیونسٹ پارٹی تائیوان پر کنٹرول کو قومی سلامتی کا معاملہ سمجھتی ہے۔

صدر شی جن پنگ نے بارہا کہا ہے کہ “اتحاد” ہو جائے گا اور اس کے حصول کے لیے طاقت کے استعمال کے امکان کو رد نہیں کیا ہے۔ امریکا نے مسلسل اپنے آپ کو یوں پیش کیا ہے جیسے وہ ایسی کسی بھی فوجی کارروائی کو روکنے کے لیے تیار ہے۔

تائیوان جزیرہ نما ممالک کی زنجیر میں پہلا جزیرہ ہے جس میں امریکاکے اتحادی جاپان، جنوبی کوریا اور فلپائن شامل ہیں اور یہی وجہ ہے کہ یہ امریکی خارجہ پالیسی کے لیے اہم ہے۔ کچھ مغربی ماہرین کا خیال ہے کہ اگر چین تائیوان پر قبضہ کر لیتا ہے تو وہ مغربی بحرالکاہل کے علاقے میں اپنی طاقت استعمال کرنے کے لیے آزاد ہو سکتا ہے اور گوام اور ہوائی جیسے دور دراز کے امریکی فوجی اڈوں کے لیے خطرہ بن سکتا ہے۔لیکن چین کا کہنا ہے کہ اس کے ارادے مکمل طور پر پرامن ہیں۔

Share With:
Rate This Article