Homeتازہ ترینتیل کی قیمتیں چھ ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب پہنچ گئیں

تیل کی قیمتیں چھ ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب پہنچ گئیں

Petroleum prices up

تیل کی قیمتیں چھ ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب پہنچ گئیں

لاہور: (ویب ڈیسک) عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں جمعہ کو چھ ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب پہنچ گئیں، کیونکہ مشرق وسطیٰ میں بڑھتی ہوئی کشیدگی نے تیل پیدا کرنے والے خطے سے سپلائی میں خلل پڑنے کا خطرہ بڑھا دیا ہے۔

رپورٹس کے مطابق، ایران پر پیر کو دمشق میں اپنے سفارت خانے پر حملے کا جواب دینے کا خدشہ ہے، جس کی وجہ سے اس ہفتے تیل کی قیمتیں چھ ماہ کی بلند ترین سطح کے قریب پہنچ گئی ہیں۔بین الاقوامی توانائی ایجنسی کی جانب سے 2024 ء میں عالمی تیل کی طلب میں اضافے کی پیش گوئی کو کم کرنے اور 2025ء میں مزید سست روی کی پیش گوئی کے بعد بھی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے۔

عالمی منڈی میں، برینٹ کروڈ فیوچر 66 سینٹ یا 0.7 فیصد اضافے کے ساتھ 90.40 ڈالر فی بیرل ہو گیا، جبکہ یو ایس ویسٹ ٹیکساس انٹرمیڈیٹ کروڈ فیوچر 90 سینٹ یا 1.1 فیصد اضافے کے ساتھ 85.92 ڈالر فی بیرل تک پہنچ گیا۔

یہ بھی پڑھیں:

پیٹرولیم مصنوعات کی ماہانہ وار کھپت میں معمولی اضافہ

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ مشرق وسطیٰ میں بڑھتی ہوئی کشیدگی تیل کی قیمتوں کے لیے ایک اہم خطرہ ہے۔ اگر ایران اور اسرائیل کے درمیان تنازعہ بڑھ جاتا ہے، تو یہ خطے سے تیل کی سپلائی کو متاثر کر سکتا ہے، جس سے قیمتوں میں نمایاں اضافہ ہو سکتا ہے۔

مزید برآں، بین الاقوامی توانائی ایجنسی کی جانب سے تیل کی طلب میں کمی کی پیش گوئی نے بھی قیمتوں کو سہارا دینے میں مدد کی ہے۔ ایجنسی کا کہنا ہے کہ 2024 میں عالمی تیل کی طلب میں 2.1 ملین فی دن اضافے کا امکان ہے، جو 2023 میں 1.9 ملین فی دن کے سابقہ ​​اندازے سے کم ہے۔ 2025 میں، ایجنسی تیل کی طلب میں 1.2 ملین فی دن اضافے کی توقع کرتی ہے۔

مجموعی طور پر، تیل کی قیمتوں کے لیے آؤٹ لک غیر یقینی ہے۔ مشرق وسطیٰ میں کشیدگی اور عالمی تیل کی طلب دونوں قیمتوں کو متاثر کرنے والے اہم عوامل ہیں۔

Share With:
Rate This Article