22 February 2024

Homeتازہ ترینگوانتاناموبے سے رہا ہونے والے دو قیدی کابل پہنچ گئے

گوانتاناموبے سے رہا ہونے والے دو قیدی کابل پہنچ گئے

Two ex-Guantanamo prisoners return to Afghanistan

گوانتاناموبے سے رہا ہونے والے دو قیدی کابل پہنچ گئے

کابل:(ویب ڈیسک) طالبان کی وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ گوانتانامو کے دو سابق قیدی، جو عمان میں زیر حراست تھے، آج (پیر) صبح کابل پہنچے۔

وزارت کے ترجمان عبدالمتین قانی نے بی بی سی کو بتایا کہ ملا عبدالظاہر صابر لوگر کا رہائشی ہے اور عبدالکریم صوبہ خوست کا رہائشی ہے۔ دونوں کو امریکی فورسز نے 2002ء میں پکڑ لیا تھا۔ انہیں 2017 ءمیں گوانتانامو جیل سے رہا کیا گیا تھا، پھر وہ عمان میں نگرانی میں تھے اور بغیر سفری اجازت کے:

عبدالمتین قانی کا کہنا ہے کہ 16 جنوری 2017ء کو امریکیوں نے انہیں گوانتانامو جیل سے رہا کیا اور سلطنت عمان میں نظر بند کر دیا، وہ سات سال تک وہاں رہے اور انہیں بیرون ملک جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔

وزارت داخلہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ طالبان حکومت کی مسلسل کوششوں کے نتیجے میں عبدالظاہر پر سے پابندیاں ہٹا دی گئیں اور وہ 14 سال بعد اپنے ملک واپس آرہے ہیں۔ دوسرا قیدی حاجی عبدالکریم صوبہ خوست کے ضلع تھانیو کا رہائشی ہے جسے پاکستانی حکومت نے 14 اگست 2002 ءکو پکڑا تھا اور کئی ماہ کی قید کے بعد امریکیوں کے حوالے کر دیا گیا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ عبدالکریم کو 2003 ءکے اوائل میں گوانتانامو جیل بھیج دیا گیا تھا، اور اب 14 سال قید میں رہنے کے بعد، انہیں عمان منتقل کیا گیا، جہاں انہیں سات سال تک حراست میں رکھا گیا اور انہیں بیرون ملک جانے کی اجازت نہیں دی گئی۔25 جون 2022 ءکو گوانتانامو جیل سے رہا ہونے والے قیدی اسد اللہ ہارون گل کو رہائی کے بعد پرائیویٹ جیٹ کے ذریعے دوحہ سے کابل پہنچایا گیا۔

2007 ء میں امریکی فورسز کے ہاتھوں گرفتار ہونے والے اسد اللہ ہارون تقریباً 15 سال تک گوانتانامو جیل میں قید رہے۔ گوانتانامو جیل سے رہا ہونے والے اسد اللہ ہارون گل کو رہائی کے بعد پرائیویٹ جیٹ کے ذریعے دوحہ سے کابل منتقل کیا گیا۔

تقریباً 22 سال قبل 11 جنوری 2002 ءکو کیوبا میں امریکی بحری اڈے میں سخت حفاظتی اقدامات کے تحت گوانتانامو جیل کھولی گئی۔ اس کا مقصد صدر جارج ڈبلیو بش کی انتظامیہ کی “دہشتگردی” کے خلاف جنگ میں گرفتار ہونے والوں کو ملک کے معمول کے قانونی معیارات کی تعمیل کیے بغیر روکنا تھا۔

تقریباً 800 افراد میں سے جو کبھی اس حراستی مرکز میں قید تھے، اب 30 لوگ رہ گئے ہیں۔جون 2023 ء کے آخر میں، گوانتاناموبے کا دورہ کرنے کے بعد، اقوام متحدہ کے ایک رپورٹر نے قیدیوں کے ساتھ امریکی حکومت کے مسلسل ظالمانہ اور ذلت آمیز سلوک پر تنقید کی تھی۔گذشتہ اکیس سالوں میں یہ پہلا موقع تھا کہ اقوام متحدہ کے کسی رپورٹر کو گوانتانامو کے فوجی اڈے کا دورہ کرنے کی اجازت دی گئی جہاں مشتبہ دہشت گرد زیر حراست ہیں۔

Share With:
Rate This Article