Homeتازہ ترینپٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اچانک تاریخی اضافہ

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اچانک تاریخی اضافہ

پٹرولیم مصنوعات

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اچانک تاریخی اضافہ

لاہور:(ویب ڈیسک) عالمی منڈی میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں مسلسل کمی کے باوجود کیوبا میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 500 فیصد اضافے کا اعلان کردیا گیا ہے۔

جنوبی امریکا کے ملک کیوبا نے پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں میں 500 فیصد تک اضافہ کردیا ہے۔ اس فیصلے سے ملک بھر میں عوام پریشان ہیں۔ توانائی کے بحران کے باعث لوگوں کے لیے جینا ویسے ہی انتہائی دشوار ہوچکا ہے۔

عالمی میڈیا کی رپورٹس کے مطابق کیوبا کی حکومت کو مالی بحران کا سامنا ہے اور اسے نقدی کی اشد ضرورت ہے، اس کا ایک حل یہ تلاش کیا گیا ہے کہ یکم فروری سے پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں میں 500 فیصد تک اضافہ کیا گیا ہے۔

پٹرولیم مصنوعات کے نرخوں میں یہ غیر معمولی اضافہ بجٹ خسارے پر قابو پانے کے اقدامات کا حصہ ہے، بہت سے لوگ اس خیال سے پریشان ہیں کہ کام پر جانے کی خاطر موٹر سائیکل اور کار میں انہیں جو پٹرول ڈلوانا پڑے گا اس کی ماہانہ لاگت نصف تنخواہ کے مساوی ہوگی۔

مزید پڑھیں

روپے کی قدر میں بہتری، ڈالر مزید گراوٹ کا شکار


خیال رہے کہ کیوبا میں تمام بنیادی اشیائے ضرورت پر حکومت کی طرف سے سبسڈی دی جاتی ہے، معاشی امور کے وزیر ایلیجانڈرو گِل کا کہنا ہے کہ کیوبا میں پترولیم مصنوعات کے کم ترین نرخ رہے ہیں، اب نرخ بڑھائے بغیر چارہ نہیں۔

خیال رہے کہ پاکستان میں یکم جنوری سے اگلے پندرہ روز کیلئے پیٹرول کی قیمت میں معمولی کمی کا امکان ہے۔

ذرائع کے مطابق پیٹرول کی فی لیٹر قیمت میں 1.72 روپے کمی متوقع ہے، ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں تقریباً 1 روپے فی لیٹر اضافے کا امکان ہے۔ نگران وفاقی حکومت کی جانب سے پٹرولیم مصنوعات کی نئی قیمتوں کا اعلان 31 دسمبرکو کیا جائے گا۔

یاد رہے سال 2023 میں پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں کے سارے ریکارڈ ٹوٹ گئے، شہری ملکی تاریخ کا سب سے مہنگا پیٹرول اورڈیزل خریدنے پر مجبور رہے۔

دوسری جانب انٹربینک میں آج بھی ڈالر کی قدر میں کمی ہوئی ہے، امریکی ڈالر ٹریڈنگ کے آغاز پر 13 پیسے سستا ہوگیا ہے جس کے بعد انٹربینک میں ڈالر 281 روپے کا ہوگیا۔

پاکستان سٹاک مارکیٹ میں کاروبار کے آغاز پر مثبت رجحان ریکھنے میں آیا ہے، 100 انڈیکس 149 پوائنٹس اضافے سے 64069 کی سطح پر ٹریڈ کر رہا ہے۔

Share With:
Rate This Article