HomeGazaغزہ جنگ:عالمی عدالت انصاف میں کیس کی سماعت

غزہ جنگ:عالمی عدالت انصاف میں کیس کی سماعت

Gaza war: hearing of the case at the International Court of Justice

غزہ جنگ:عالمی عدالت انصاف میں کیس کی سماعت

دی ہیگ: (ویب ڈیسک) اقوام متحدہ کی بین الاقوامی عدالت انصاف غزہ میں فلسطینیوں کی نسل کشی کے حوالے سے اسرائیل کے خلاف مقدمے پر بحث کر رہی ہے۔

یہ معاملہ جنوبی افریقا نے اٹھایا تھا اور اس میں اسرائیل پر غزہ میں نسل کشی کا الزام لگایا گیا ہے۔ عالمی عدالت انصاف میں جمع کرائی گئی دستاویزات میں عدالت نے اسرائیل سے فوجی آپریشن بند کرنے کی بھی استدعا کی ہے۔

فلسطینی جھنڈے والے سینکڑوں لوگ عدالت کے باہر جمع ہیں اور جنگ بندی کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ اسرائیل کے حامی غزہ میں یرغمالیوں کی تصویریں بڑی اسکرین پر دکھا رہے ہیں۔ یہ عدالت صرف نسل کشی کے الزام پر اپنی رائے دے گی لیکن اس پر کڑی نظر رکھی جاتی ہے۔اسرائیل ایسے الزامات کو ’بے بنیاد‘ قرار دیتا ہے۔

جنوبی افریقا کی درخواست میں کہا گیا ہے کہ “اسرائیل فلسطینی قوم، نسل اور لوگوں کے حصے کو تباہ کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔ مقدمے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اسرائیل کے اقدامات میں “غزہ میں فلسطینیوں کا قتل، جسمانی اور نفسیاتی نقصان اور جسمانی تباہی شامل ہے۔”

جنوبی افریقا نے بھی عدالت سے غزہ میں اسرائیل کی فوجی کارروائیوں کو روکنے کے لیے فوری عارضی اقدامات کرنے کی درخواست کی ہے۔ اسرائیل کے صدر نے ان الزامات کو ’ظالمانہ اور احمقانہ‘ قرار دیا ہے۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ فوج مشکل حالات میں شہریوں کی ہلاکتوں کو روکنے کی کوشش کر رہی ہے۔

جبکہ حماس کے زیرانتظام وزارت صحت کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوجیوں کی بمباری اور فضائی حملوں میں 23 ہزار سے زائد فلسطینی ہلاک اور 60 ہزار کے قریب زخمی ہوئے ہیں۔ان میں بچے اور خواتین بھی شامل ہیں۔

بین الاقوامی عدالت انصاف، جو کہ ہالینڈ کے شہر دی ہیگ میں ہے، جنوبی افریقا کی درخواست پر اسرائیل کی فوجی کارروائیوں کو معطل کرنے کے بارے میں جلد ہی فیصلہ کر سکتی ہے، لیکن یہ ثابت کرنے میں برسوں لگ سکتے ہیں کہ آیا اسرائیل نے واقعی نسل کشی کی ہے۔

نظریاتی طور پر، بین الاقوامی عدالت انصاف کے فیصلے قانونی طور پر ان تمام ممالک کے لیے پابند ہیں جو اس تنظیم کے رکن ہیں، بشمول اسرائیل اور جنوبی افریقہ، لیکن ان پر عمل درآمد نہیں کیا جاتا۔2022 میں اسی عدالت نے روس کو یوکرین میں فوجی آپریشن معطل کرنے کی ہدایت کی لیکن اس حکم کو نظر انداز کر دیا گیا۔

بین الاقوامی قانون کے پروفیسر ولیم شاباس جنہوں نے 2014 میں حماس اور اسرائیل کے درمیان تنازعہ کے بارے میں اقوام متحدہ کے تحقیقاتی کمیشن کی سربراہی کی تھی، کا خیال ہے کہ اسرائیل کے خلاف عدالتی فیصلے کا امکان کم ہے۔ جنوبی افریقا کو “اپنے کیس کو مضبوط کرنے کے لیے کچھ تلاش کرنا چاہیے”۔

Share With:
Rate This Article