Suno News
پی ایس ایل کا 9واں ایڈیشن، مقامی کھلاڑیوں کی کیٹیگری اپڈیٹ
Image

لاہور: (سنو نیوز) پاکستان سپر لیگ کے 9 ایڈیشن کے لیے مقامی کھلاڑیوں کی کیٹیگری اپڈیٹ کر دی گئی۔ مقامی کھلاڑیوں کے زمرے کی تجدید کے بعد نو کھلاڑیوں کے لیے زمرہ جات کو اپ گریڈ کیا گیا ہے۔ غیر ملکی کھلاڑیوں کی رجسٹریشن 25 اکتوبر کو شروع ہوئی۔

تفصیل کے مطابق پاکستان سپر لیگ کے آئندہ ایڈیشن کے لیے مقامی کھلاڑیوں کے کی کیٹیگری کی تجدید کے عمل کے بعد نو کھلاڑیوں کی اپنی کیٹیگریز کو اپ گریڈ کیا گیا ہے۔ پاکستان کرکٹ بورڈ نے اس سے قبل غیر ملکی کھلاڑیوں کے لیے بھی رجسٹریشن ونڈو کھول دی تھی۔

فلیگ شپ ایونٹ عارضی طور پر 8 فروری سے 24 مارچ 2024 ء تک شیڈول ہے۔ کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے دونوں کھلاڑی نسیم شاہ اور افتخار احمد کو ڈائمنڈ سے پلاٹینم میں جبکہ سرفراز احمد کو گولڈن سے ڈائمنڈ میں منتقل کر دیا گیا ہے۔

پشاور زلمی کے وکٹ کیپر بلے باز محمد حارث کو بھی گولڈن سے ڈائمنڈ میں تبدیل کر دیا گیا ہے۔ فاسٹ باؤلر سلمان ارشاد نے گولڈن سے سلور کیٹیگری حاصل کر لیا ہے۔ ملتان سلطانز کے فاسٹ باؤلرز عباس آفریدی اور احسان اللہ دونوں کو گولڈ کیٹیگری میں ترقی دی گئی ہے۔

گذشتہ سال ابھرتے ہوئے پک کے طور پر کھیلنے کے بعد اسلام آباد یونائیٹڈ کے وکٹ کیپر بلے باز اعظم خان اور فاسٹ آل راؤنڈر فہیم اشرف کو بھی گولڈ سے ڈائمنڈ کیٹیگری میں اپ گریڈ کیا گیا ہے۔

ذیشان ضمیر ایمرجنگ سے سلور جبکہ مبشر خان ایمرجنگ سے گولڈ میں چلے گئے ہیں۔ کراچی کنگز کے طیب طاہر سلور سے گولڈ جبکہ قاسم اکرم ابھرتے ہوئے گولڈ میں اپ گریڈ ہو گئے ہیں۔

لاہور قلندرز کے کامران غلام اور زمان خان کو بالترتیب چاندی اور ابھرتی ہوئی گولڈ سے بڑھا دیا گیا ہے۔ کچھ کھلاڑیوں کی تنزلی کی گئی ہے۔ تبدیلیوں میں محمد نواز (کوئٹہ، پلاٹینم سے ڈائمنڈ)، محمد حسنین (کوئٹہ، ڈائمنڈ سے گولڈ)، حیدر علی (کراچی، پلاٹینم سے گولڈ) اور آصف علی (اسلام آباد، پلاٹینم سے ڈائمنڈ) شامل ہیں۔

بین الاقوامی سطح پر پاکستان کی نمائندگی کرنے والے کھلاڑی گولڈ کیٹیگری سے نیچے نہیں جا سکتے۔ کیٹیگریز کی تجدید کے عمل کے حصے کے طور پر، فرنچائز کے نمائندوں کو ہر کھلاڑی کو ووٹ دینا ضروری تھا۔

ٹیموں کو اپنے کھلاڑیوں کو ووٹ دینے کی اجازت نہیں تھی لیکن ووٹنگ کے اس مرحلے کے اختتام پر نظرثانی کی درخواستیں جمع کروائیں۔ اس کے بعد اس فہرست کا ڈائریکٹر - انٹرنیشنل کرکٹ عثمان واہلہ، قومی سلیکشن کمیٹی کے رکن توصیف احمد اور منیجر پارٹنرشپس شعیب خالد نے جائزہ لیا، جو 2021 ء سے پی ایس ایل کے لیے کھلاڑیوں کے حصول میں سرفہرست ہیں۔

مقامی کھلاڑیوں کی کیٹیگریز کو حتمی شکل دیتے وقت برانڈ ویلیو پر غور کیا گیا۔ فرنچائزز اب ریٹینشن کو حتمی شکل دینے سے پہلے کھلاڑیوں کے لیے ریلیگیشن کی درخواستیں پیش کریں گی۔ ریلیگیشن کی درخواستیں جمع ہونے کے بعد، تمام ٹیموں کو کھلاڑی کی بیس کیٹیگری کو پورا کرنے کا موقع دیا جاتا ہے۔

اگر کھلاڑی کا بنیادی زمرہ مماثل نہیں ہے، تو کھلاڑی کو اس کے بنیادی زمرے سے نیچے والے زمرے میں بھیج دیا جا سکتا ہے۔ U23 کھلاڑی دو سال سے زیادہ ابھرتے ہوئے کھلاڑی کے طور پر اسکواڈ کا حصہ نہیں بن سکتے جب تک کہ انہوں نے ان دو سالوں میں نو یا اس سے کم میچ نہ کھیلے۔

مقامی کیٹیگری کے کھلاڑیوں کی تجدید (ٹیم وار)

اسلام آباد یونائیٹڈ:

شاداب خان (پلاٹینم)، آصف علی، محمد وسیم جونیئر، حسن علی، اعظم خان، فہیم اشرف (تمام ڈائمنڈ)، صہیب مقصود، ابرار احمد، رومان رئیس، ظفر گوہر، مبشر خان (تمام گولڈ)، ذیشان ضمیر (سلور)، حسن نواز

کراچی کنگز:

عماد وسیم (پلاٹینم)، شعیب ملک، محمد عامر (دونوں ڈائمنڈ)، حیدر علی، عامر یامین، شرجیل خان، میر حمزہ، طیب طاہر، موسیٰ خان، قاسم اکرم (تمام گولڈ)، محمد اخلاق، محمد عمر، عاکف جاوید (تمام سلور)، عرفان خان نیازی، فیصل اکرم (دونوں ابھرتے ہوئے)۔

لاہور قلندرز:

شاہین شاہ آفریدی، حارث رؤف، فخر زمان (تمام پلاٹینم)، حسین طلعت، عبداللہ شفیق، کامران غلام، مرزا طاہر بیگ، زمان خان (تمام گولڈ)، دلبر حسین، احمد دانیال، احسن بھٹی، جلات خان (تمام) سلور)، شاویز عرفان (ابھرتے ہوئے)۔

ملتان سلطانز:

محمد رضوان (پلاٹینم)، شان مسعود، خوشدل شاہ، اسامہ میر (تمام ڈائمنڈ)، عباس آفریدی، احسان اللہ، عرفات منہاس، شاہنواز دہانی، انور علی (تمام گولڈ)، سمین گل، سرور آفریدی، عماد بٹ، محمد الیاس (تمام چاندی)۔

پشاور زلمی:

بابر اعظم (پلاٹینم)، وہاب ریاض، محمد حارث، صائم ایوب (تمام ڈائمنڈ)، دانش عزیز، ارشد اقبال، عامر جمال، سلمان ارشاد، عثمان قادر، حارث سہیل، سفیان مقیم (تمام گولڈ)، خرم شہزاد (تمام گولڈ) سلور)، حسیب اللہ، سعد مسعود (دونوں ابھرتے ہوئے) ۔

کوئٹہ گلیڈی ایٹرز:

نسیم شاہ، افتخار احمد (دونوں پلاٹینم)، محمد نواز، محمد حفیظ، سرفراز احمد (تمام ڈائمنڈ)، محمد حسنین، احسن علی، عمر اکمل، عمیر بن یوسف، سعود شکیل (تمام گولڈ)، بسم اللہ خان، عمید آصف، محمد زاہد، ارشد اللہ (تمام سلور)، عبدالواحد بنگلزئی، ایمل خان، یاسر خان، خواجہ محمد نافع (تمام ابھرتے ہوئے)۔