Homeتازہ ترینغزہ جنگ: شہید ہونے والوں کی تعداد 11 ہزار سے تجاوز

غزہ جنگ: شہید ہونے والوں کی تعداد 11 ہزار سے تجاوز

غزہ جنگ: شہید ہونے والوں کی تعداد 11 ہزار سے تجاوز

غزہ جنگ: شہید ہونے والوں کی تعداد 11 ہزار سے تجاوز

غزہ: (سنو نیوز) حماس کے زیرِ نگرانی غزہ کے محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ جنگ میں شہید ہونے والوں کی تعداد 11 ہزار سے تجاوز کر چکی ہے۔ ان میں سے 4506 بچے اور 3000 سے زیادہ خواتین شامل ہیں۔ ان حملوں کے دوران 27 ہزار سے زائد افراد زخمی ہو چکے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کا کہنا ہے کہ اعداد و شمار قابل اعتماد ہیں۔اسرائیل نے جنگ کے 35ویں روز غزہ کی پٹی پر اپنی بمباری جاری رکھی، جس کے دوران اس نے پورے ایک پورے علاقے کو تباہ وبرباد کرکے رکھ دیا ہے۔ جنگ میں لاپتہ افراد کی تعداد ہزاروں میں بتائی جاتی ہے، تاہم بمباری ختم ہونے سے قبل درست تعداد جاننا مشکل ہے۔

آج کے پرتشدد اسرائیلی حملوں کا نشانہ غزہ کی پٹی میں خاص طور پر اس کے شمال میں متعدد ہسپتال شامل تھے، تاکہ بظاہر بے گھر لوگوں کو دوبارہ نقل مکانی پر مجبور کیا جا سکے۔ حماس تحریک سے وابستہ الاقصیٰ ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق آج جن ہسپتالوں پر بمباری کی گئی ان میں الرنتیسی خصوصی ہسپتال برائے چلڈرن بھی تھا، جو براہ راست حملوں کی زد میں آیا۔

اسرائیلی بمباری میں الشفاء ہسپتال اور اس کے اطراف کا علاقہ بھی شامل تھا۔ فلسطینی خبر رساں ادارے وفا نے رپورٹ کیا کہ اسرائیلی فوج نے غزہ کی پٹی کے شمال میں واقع انڈونیشین ہسپتال کے آس پاس کے علاقوں پر بھی “پرتشدد” حملوں کا سلسلہ شروع کیا۔ کریسنٹ سوسائٹی نے کہا کہ اسرائیلی بمباری میں العودہ ہسپتال کے آس پاس کے علاقے کو بھی نشانہ بنایا گیا۔

بمباری سے بے گھر افراد میں خوف و ہراس پھیل گیا، جو ہسپتالوں کے آس پاس بمباری سے پناہ لیے ہوئے تھے۔ خوف و ہراس نے لوگوں کو اپنے بچوں کے ساتھ بھاگنے پر مجبور کیا اور نقل مکانی کی ایک بڑی تباہی کو جنم دیا۔ مصر نے وزیر خارجہ کے ذریعے غزہ سے فلسطینیوں کو بے گھر کرنے کی کسی بھی کوشش کو مسترد کیا ہے۔

اسرائیلی موساد کے سربراہ نے سی آئی اے کے سربراہ ولیم برنز کے ساتھ دوحہ کا سفر کیا تاکہ قطری وزیر اعظم کے ساتھ یرغمالیوں کے معاہدے پر بات چیت کی جا سکے اور شاید غزہ میں لڑائی کو روکا جا سکے۔ اسرائیلی میڈیا کے مطابق امریکی صدر جو بائیڈن نے تصدیق کی کہ اسرائیل نے شمالی غزہ کے کچھ حصوں میں دن میں چار گھنٹے کے لیے عارضی جنگ بندی پر اتفاق کیا ہے۔

جمعرات کے روز اسرائیلی فوج نے شام کے علاقوں پر بمباری کی۔ جبکہ لبنانی سرحد پر کشیدگی بڑھ رہی ہے اور علاقے میں فائرنگ کا پرتشدد تبادلہ دیکھنے میں آیا ہے۔اسرائیلی طیاروں نے شام میں بعض مقامات پر بمباری کی۔

اسرائیلی فوج اب بھی مقبوضہ مغربی کنارے کے فلسطینی شہروں پر دھاوا بول رہی ہے، چھاپے آج صبح کے وقت العروب اور الفوار کیمپوں میں مرکوز کیے گئے اور حراست میں لیے گئے فلسطینی شہریوں کی تعداد 20 تک پہنچ گئی۔ مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق اسرائیلی فوج نے دھاوا بولتے ہوئے گولیوں کا استعمال کیا، شہریوں کے گھروں پر چھاپے مارے اور ان کی مکمل تلاشی لی جس سے گھروں کو شدید نقصان پہنچا۔

گذشتہ رات اسرائیلی فوج کے بڑے دستوں نے چند گھنٹوں کے اندر دوسری بار جنین شہر پر دھاوا بول دیا اور اس کے ساتھ ہی فلسطینی نوجوانوں کے ساتھ مسلح جھڑپیں شروع ہو گئیں ۔ اسرائیلی فوج نے نابلس شہر پر بھی دھاوا بولا اور ہیبرون کے قصبے دورا پر دھاوا بولنے کے بعد فوجی کمک کو بلاتہ پناہ گزین کیمپ کی طرف دھکیل دیا جس کے نتیجے میں فلسطینی نوجوانوں اور اسرائیلی فورسز کے درمیان جھڑپیں شروع ہوگئیں، اس دوران فوج نے براہ راست گولیاں چلائیں۔

یہ چھاپے ایسے وقت میں شروع ہوئے جب اسرائیلی فورسز نے دورا شہر میں خلیت منہ کے علاقے میں الشانٹر خاندان کے گھر پر بمباری کی اور اسے مسمار کیا۔ فلسطینی قیدیوں کے کلب نے کہا کہ اسرائیلی فورسز نے نئے چھاپوں کے دوران 65 فلسطینیوں کو گرفتار کیا ۔ اسرائیلی میڈیا نے بتایا کہ گذشتہ ماہ کی سات تاریخ سے اب تک حراست میں لیے گئے فلسطینیوں کی مجموعی تعداد 2500 سے تجاوز کر گئی ہے۔

غزہ جنگ: اسرائیلی ٹینک الشفاء ہسپتال کے قریب پہنچ گئے۔

فلسطینی وزارت صحت کے ترجمان کے مطابق اسرائیل کی جانب سے غزہ پر بمباری میں شدت کے درمیان ہزاروں افراد اب بھی غزہ کے ہسپتالوں میں پھنسے ہوئے ہیں۔ اسرائیلی ٹینکوں نے الرنتیسی اور النصر ہسپتالوں کو چاروں سمتوں سے گھیرے میں لے لیا ہے۔ ہزاروں مریض، طبی عملہ، اور بے گھر افراد ہسپتالوں میں پانی اور خوراک کے بغیر پھنسے ہوئے ہیں اور کسی بھی وقت موت کا خطرہ ہے۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کے مطابق عینی شاہدین نے بتایا کہ اسرائیلی فوج کے ٹینکوں نے الشفاء ہسپتال سے 1.2 کلومیٹر کے فاصلے سے غزہ پر اپنے حملے شروع کیے اور شہر کے مرکز تک پہنچنے والی لڑائیوں نے اسرائیل کے بارے میں بین الاقوامی قوانین کی تشریح کے طریقہ کار پر کئی سوالات کھڑے کر دیے ہیں۔ طبی سہولیات کا تحفظ اور ہزاروں بے گھر افراد جنہوں نے وہاں پناہ لی ہے۔

اس سے قبل اسرائیلی فوج کے ترجمان نے تصاویر اور آڈیو ریکارڈنگ جاری کی تھیں جس میں انہوں نے دعویٰ کیا تھا کہ حماس الشفا ہسپتال کو کمانڈ سینٹر کے طور پر استعمال کر رہی ہے تاہم طبی عملے نے اقوام متحدہ سے کہا کہ وہ ان الزامات کی تصدیق کے لیے مبصرین بھیجے۔ حماس، ہیلتھ اتھارٹیز اور الشفا ہسپتال کے ڈائریکٹرز اسرائیلی الزامات کی تردید کرتے ہیں۔

Share With:
Rate This Article