12 April 2024

Homeتازہ ترینکیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ جسم کے کون سے اعضاء کمزور ہو رہے ہیں؟

کیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ جسم کے کون سے اعضاء کمزور ہو رہے ہیں؟

کیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ جسم کے کون سے اعضاء کمزور ہو رہے ہیں؟

کیا آپ جاننا چاہتے ہیں کہ جسم کے کون سے اعضاء کمزور ہو رہے ہیں؟

سٹینفورڈ: (سنو نیوز) سائنسدانوں کا خیال ہے کہ خون کا ٹیسٹ بتا سکتا ہے کہ انسان کے اندرونی اعضاء کی عمر کتنی تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ اس طریقہ سے یہ اندازہ لگانے میں مدد مل سکتی ہے کہ مستقبل قریب میں جسم کے کون سے اعضاء کی خرابی کا خطرہ ہے ۔

سٹینفورڈ یونیورسٹی کے سائنسدانوں کی ایک ٹیم کا کہنا ہے کہ وہ اس طریقے سے جسم کے 11 بڑے اعضاء بشمول دل، دماغ اور پھیپھڑوں کی نگرانی کر سکتے ہیں۔ انہوں نے ہزاروں لوگوں کا تجربہ کیا جو زیادہ تر درمیانی عمر میں یا بوڑھے تھے۔

اس میڈیکل ٹیسٹ کے نتائج سے معلوم ہوا کہ 50 سال سے زیادہ عمر کے ہر پانچ میں سے ایک بالغ جس کی صحت قابل قبول ہے، کم از کم ایک اندرونی عضو ہے جو قبل از وقت بڑھاپے کا شکار ہوا ہے۔ ہر 100 افراد میں سے ایک یا دو میں کئی ایسے اندرونی اعضاء دیکھے گئے جو اس شخص کی پیدائش کی عمر سے زیادہ پرانے تھے۔

صحت کے ٹیسٹ تھوڑا خوفناک ہو سکتے ہیں، لیکن محققین کا کہنا ہے کہ یہ ٹیسٹ مداخلت اور مستقبل میں ہونے والی تبدیلیوں کو تبدیل کرنے کا موقع فراہم کر سکتا ہے جو جسم کے حساس اعضاء میں ہو سکتی ہیں۔ ان محققین نے جریدے نیچر میں کہا ہے کہ یہ جاننا کہ کون سا عضو تیزی سے زوال پذیر ہوتا ہے ہمیں یہ سمجھنے میں مدد ملتی ہے کہ صحت کے کن مسائل ہمارے منتظر ہیں۔

جسم کے اندرونی اعضاء کے درمیان عمر کا فرق:

ایک دل جو کسی شخص کی پیدائش کی عمر سے زیادہ پرانا ہے مستقبل میں دل کی بیماری کا خطرہ بڑھا سکتا ہے۔ تیزی سے عمر رسیدہ دماغ ڈیمنشیا کا زیادہ شکار ہو سکتا ہے۔ اس تحقیق کے مطابق ایک یا دو اندرونی اعضاء جو تاریخی عمر سے زیادہ پرانے ہوتے ہیں ان میں سے جو عضو تیزی سے بوڑھا ہوتا ہے، اس کا بعض بیماریوں سے براہ راست تعلق ہوتا ہے جو اگلے 15 سالوں میں انسان کی موت کا سبب بن سکتی ہیں۔

محققین نے درج ذیل اعضاء کا تجربہ کیا:

دماغ

دل

جگر

پھیپھڑا

آنت

گردہ

چربی

شریانیں اور شریانیں۔

مدافعتی ٹشوز

پٹھوں

لبلبہ

یہ ٹیسٹ خون میں ہزاروں پروٹین کی سطح کو جانچتا ہے۔ ان پروٹینوں کی سطح اس بات کا اشارہ فراہم کرتی ہے کہ اعضاء کی عمر کس طرح مختلف ہوتی ہے۔ ہر عضو کے لیے دریافت شدہ پروٹین کا نمونہ مختلف ہوتا ہے۔

مشین لرننگ کا استعمال کرتے ہوئے اور خون کے ٹیسٹ کے نتائج اور مریضوں کے اعداد و شمار کی ایک بڑی تعداد کی جانچ کرکے، محققین ایک الگورتھم کے ساتھ آئے جو لوگوں کی صحت کی حالت کا اندازہ لگاسکتا ہے۔

جب ہم نے ان اعضاء میں سے ہر ایک کی حیاتیاتی عمر کا ایک ہی عمر کے لوگوں کے مقابلے میں موازنہ کیا تو یہ نتیجہ اخذ کیا گیا کہ ان لوگوں کی ایک بڑی تعداد میں سے جنہیں کوئی سنگین بیماری نہیں ہے” 18.4 فیصد میں 50 یا اس سے زیادہ عمر کے افراد ، کم از کم ایک عضو واضح طور پر دوسرے اعضاء کے مقابلے میں تیزی سے بوڑھا ہوتا ہے۔یہ لوگ اگلے 15 سالوں میں ان پرانے اعضاء سے بیماری پیدا کرنے کے زیادہ سنگین خطرے میں تھے۔

سٹینفورڈ یونیورسٹی نے اس تجربے کو ایک ایجاد کے طور پر رجسٹر کرنے کے لیے ضروری دستاویزات فراہم کی ہیں تاکہ اسے مستقبل میں استعمال کیا جا سکے اور مارکیٹ میں داخل کیا جا سکے۔ لیکن اس مرحلے تک پہنچنے سے پہلے، اندرونی اعضاء اور صحت کی عمر کا اندازہ لگانے کے لیے اس طریقے کی درستگی کی تحقیق کرنا اب بھی ضروری ہے۔

کچھ ابتدائی تحقیقات سے پتہ چلتا ہے کہ حیاتیاتی بڑھاپا ایک مستحکم حالت کا عمل نہیں ہے اور اچانک اس وقت تیز ہو جاتا ہے، جب لوگ 30 کی دہائی کے وسط، 60 کی دہائی کے اوائل اور 70 کی دہائی کے آخر میں ہوتے ہیں۔

لندن کی کوئین میری یونیورسٹی میں صحت اور عمر سے متعلق امراض کے ماہر پروفیسر جیمز ٹمنز بھی حیاتیاتی عمر کی تحقیق کے لیے خون کے نشانات کا مطالعہ کر رہے ہیں۔ اس کا مطالعہ خون میں مخصوص پروٹین کے بجائے قابل شناخت جینیاتی تبدیلیوں پر زیادہ توجہ مرکوز کرتا ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ ڈاکٹر ویس کیوری کی تازہ ترین دریافتیں قابل ذکر ہیں لیکن پھر بھی انہیں مزید لوگوں کے ساتھ جانچنے کی ضرورت ہے، خاص طور پر مختلف نسلی اور نسلی پس منظر والے نوجوان لوگوں کے ساتھ۔

ان کی رائے میں: “ہمیں یہ جاننے کی ضرورت ہے کہ آیا یہ بڑھاپا ہے یا عمر سے متعلقہ بیماریوں کا پتہ لگانے کا ایک نیا طریقہ ہے۔ مطالعہ کے مصنفین پہلے آپشن کو ترجیح دیتے ہیں۔ اگر ہم ان نتائج کو 50,000 سے 100,000 لوگوں کے درمیان دوبارہ پیش کر سکتے ہیں، اس نسبتاً صحت مند آبادی میں مخصوص اعضاء کی صحت کو دیکھ کر، ہم ایسے اعضاء کو تلاش کرنے کے قابل ہو سکتے ہیں جو جسم میں تیزی سے کمزور ہو رہے ہیں۔

یونیورسٹی آف گلاسگو میں عمر بڑھنے کی حیاتیات کے ماہر پروفیسر پال شیل کا کہنا ہے کہ صرف انفرادی اعضاء کو نہیں بلکہ پورے جسم کو دیکھنے کے لیے کسی شخص کی مجموعی صحت کو دیکھنا اب بھی ضروری ہے۔ چیریٹی ایج یو کے کی کیرولین ابراہمز کا کہنا ہے کہ یہ بہت اچھی بات ہے کہ علم عمر سے متعلقہ بیماریوں کا جلد پتہ لگانے کی طرف بڑھ رہا ہے، لیکن ہمیں اس بات پر بھی غور کرنے کی ضرورت ہے کہ یہ معلومات لوگوں کو کیسے محسوس کریں گی اور ان کی زندگی کیسے بنے گی۔

کیا یہ تشخیص زندگی کی حقیقت ہونی چاہیے؟ ان کا کہنا ہے کہ لوگوں کو ان ٹیسٹوں کے علاوہ طبی اور جذباتی مدد کی بھی ضرورت ہوگی اور قومی ادارہ صحت کو اس صورتحال کے لیے تیار رہنا چاہیے اور ان خدمات کے لیے وافر فنڈز رکھنا چاہیے۔

بشکریہ: بی بی سی

Share With:
Rate This Article