21 February 2024

HomeGazaپناہ گزین کیمپ میں اسرائیلی فوج کی کارروائی، 6 فلسطینی شہید

پناہ گزین کیمپ میں اسرائیلی فوج کی کارروائی، 6 فلسطینی شہید

پناہ گزین کیمپ میں اسرائیلی فوج کی کارروائی، 6 فلسطینی شہید

پناہ گزین کیمپ میں اسرائیلی فوج کی کارروائی، 6 فلسطینی شہید

غزہ: (سنو نیوز) اسرائیل اور غزہ کے درمیان جنگ کی تازہ ترین پیش رفت، مقبوضہ مغربی کنارے میں فلسطینی اتھارٹی کا کہنا ہے کہ نابلس کے شمال میں واقع الفارا پناہ گزین کیمپ میں اسرائیلی فوج کی کارروائی میں 6 فلسطینی شہید ہوگئے ہیں۔

خان یونس میں جسے اکتوبر کے وسط میں غزہ پر اسرائیل کے حملوں کے آغاز میں شہریوں کے لیے محفوظ پناہ گاہ قرار دیا گیا تھا، وہاں شدید لڑائی جاری ہے۔ شمالی غزہ میں جبالیہ کیمپ پر حملے جاری ہیں، جہاں اسرائیلی ٹینکوں نے اسے گھیرے میں لے کر گولہ باری کی ہے۔ حماس نے دعویٰ کیا ہے کہ اس نے ایک یرغمالی کو رہا کرنے کی اسرائیلی فورسز کی کوشش کو ناکام بنا دیا اور یہ کہ یرغمالی اس جھڑپ میں مارا گیا۔

فلسطینی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ پناہ گزین کیمپ میں جھڑپ اس وقت ہوئی جب اسرائیلی فوجیوں کا ایک گروپ آج صبح سویرے کیمپ میں داخل ہوا۔ فلسطینی محکمہ صحت کے حکام کا کہنا ہے کہ 7 اکتوبر سے غزہ جنگ شروع ہونے کے بعد سے مغربی کنارے میں تشدد میں 260 سے زائد فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں۔

امریکی وزیر خارجہ انتھونی بلنکن نے کہا کہ اسرائیل کے شہریوں کو تحفظ فراہم کرنے کے ارادے اور غزہ میں جنگ کس طرح جاری ہے اس کی حقیقت میں فرق ہے۔ برطانوی وزیر خارجہ کے ساتھ ایک پریس کانفرنس میں غزہ جنگ کے بارے میں پوچھے گئے سوال کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے مزید کہا: ’’اسرائیل کے لیے ضروری ہے کہ وہ شہریوں کے تحفظ پر خصوصی توجہ دے، اور جیسا کہ میں نے وہاں کہا، شہریوں کے تحفظ کے اپنے ارادے کے درمیان اور حقیقی اور ظاہری نتائج کے درمیان فرق ہے۔

7 اکتوبر کو جنگ شروع ہونے کے بعد سے بلنکن چار مرتبہ اسرائیل کا دورہ کر چکے ہیں۔ امریکا نے اسرائیل کے ساتھ “آپریشنز میں روزانہ توقف” پر بات چیت کی ہے۔ یہ وقفے عام شہریوں کو آپریشنل مقامات پر نقصان سے دور رہنے دیتے ہیں۔ امریکی وزیر خارجہ نے کہا کہ “اسرائیل کی ذمہ داری ہے کہ وہ شہریوں کے تحفظ کے لیے ہر ممکن کوشش کرے اور انسانی امداد کو زیادہ سے زیادہ پہنچائے”۔

اقوام متحدہ کے انڈر سیکریٹری جنرل برائے انسانی امور اور تنظیم کے امدادی شعبے کے سربراہ مارٹن گریفتھس کا کہنا ہے کہ اب جنوبی غزہ میں انسانی بنیادوں پر آپریشن کا کوئی امکان نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ تنظیم کے کام کرنے کے لیے اب کوئی محفوظ جگہ نہیں ہے اور امدادی گروپوں کو ابھی تک یہ نہیں معلوم کہ غزہ میں ان کی سرگرمیاں کہاں ختم ہوتی ہیں۔ گریفتھس نے کہا کہ کچھ ایسے اشارے ملے ہیں کہ اسرائیل کچھ امداد کو کرم شالوم کراسنگ کے ذریعے غزہ میں داخل ہونے کی اجازت دے سکتا ہے۔ یہ کراسنگ 7 اکتوبر کو حماس کے حملے کے آغاز کے بعد سے بند تھی۔

اسرائیل نے کہا ہے کہ کراسنگ کو صرف امدادی ٹرکوں کے معائنہ کے لیے کھولا جائے گا، لیکن غزہ کو امدادی سامان کی ترسیل ابھی بھی مصر کے ساتھ سرحد پر واقع رفح کراسنگ سے ہو گی۔

Share With:
Rate This Article