21 February 2024

HomeGazaغزہ جنگ: اسرائیلی فوجیوں میں خطرناک بیماری پھیلنے لگی

غزہ جنگ: اسرائیلی فوجیوں میں خطرناک بیماری پھیلنے لگی

غزہ جنگ: اسرائیلی فوجیوں میں خطرناک بیماری پھیلنے لگی

غزہ جنگ: اسرائیلی فوجیوں میں خطرناک بیماری پھیلنے لگی

غزہ: (سنو نیوز)اسرائیلی ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ غزہ جنگ میں شریک فوجیوں میں ایک سنگین بیماری پھیل رہی ہے، اس بیماری کا نام شیگیلا ہے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ یہ بیماری صفائی کے ناقص حالات اور میدان جنگ میں غیر محفوظ خوراک کی وجہ سے پھیل رہی ہے۔

برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی میں شائع رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ اسوتا اشدود یونیورسٹی ہسپتال میں متعدی امراض کے شعبہ کے ڈائریکٹر ڈاکٹر تال بروچ کے مطابق اسرائیلی ڈیفنس فورسز (IDF) کے متعدد ڈاکٹروں نے کہا ہے کہ غزہ میں تعینات فوجیوں میں پیٹ کی سنگین بیماری کا پتہ چلا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس بیماری کی شناخت “شگیلا: کے نام سے ہوئی ہے۔ متاثرہ فوجیوں کو قرنطینہ میں رکھا گیا ہے اور علاج کے لیے واپس بھیج دیا گیا ہے۔

اسرائیلی ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس بیماری کے تیزی سے پھیلنے کی ایک “واضح وجہ” وہ خوراک ہے جو اسرائیلی شہری غزہ میں فوجیوں کو تیار کر کے بھیج رہے ہیں۔ یہ خوراک شیگیلا اور دیگر نقصان دہ بیکٹیریا سے متاثر ہو سکتی ہے۔ یہ ممکن ہے کہ اسے نقل و حمل کے دوران کم سے کم درجہ حرارت پر نہیں رکھا گیا ہو یا اسے دوبارہ گرم کیے بغیر کھایا گیا ہو۔میدان جنگ میں حفظان صحت کی ناقص صورتحال بیماری کو ایک شخص سے دوسرے میں پھیلنے دیتی ہے۔

ڈاکٹروں نے اسرائیلی حکام سے کہا ہے کہ فوجیوں کو صرف خشک کھانے کی اشیاء بھیجی جائیں، جیسے کہ ڈبہ بند کھانا، کریکر، پروٹین کے ٹکڑے اور گری دار میوے وغیرہ۔ یہ ممکن ہے کہ فوجیوں کو دوستوں اور رشتہ داروں کی طرف سے بھیجی گئی کھانے کی اشیاء سے انفیکشن ہوا ہو۔

یہ بھی پڑھیں:

غزہ جنگ: اسرائیلی فوج خان یونس کے مرکز تک پہنچ گئی

اس بیماری کی علامات کیا ہیں؟

شگیلا بیماری ایک خاص قسم کے بیکٹیریا کی وجہ سے پھیلتی ہے۔ جب یہ جسم میں داخل ہوتا ہے تو یہ پیچش جیسے اثرات پیدا کرتا ہے جسے ’’شیجیلوسس‘‘ کہتے ہیں۔ اس کی علامات میں بخار، طویل یا خونی اسہال، پیٹ میں شدید درد اور جسم میں پانی کی کمی وغیرہ شامل ہیں۔ وہ لوگ جو بہت اچھی صحت میں نہیں ہیں یا جن کا مدافعتی نظام ایچ آئی وی جیسی بیماریوں کی وجہ سے بہت کمزور ہے، وہ طویل عرصے تک ان علامات کا شکار رہ سکتے ہیں۔ اگر اس بیماری کا علاج نہ کیا جائے تو شیگیلا سنگین حالات اور موت کا باعث بھی بن سکتی ہے۔

جب یہ بیکٹیریا خون میں داخل ہوتا ہے تو موت کا خطرہ مزید بڑھ جاتا ہے۔ بچے، ایچ آئی وی کے مریض، ذیابیطس یا کینسر میں مبتلا افراد اور غذائی قلت کے شکار افراد اس کا آسان شکار بن سکتے ہیں۔ یہ بیماری میدان جنگ میں صفائی نہ ہونے کی وجہ سے پھیل سکتی ہے۔

شیگیلا کیسے پھیلتا ہے؟

یو ایس سینٹرز فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریوینشن (سی ڈی سی) کے مطابق، شیگیلا متاثرہ شخص کے پاخانے کے ساتھ براہ راست یا بالواسطہ رابطے کے ذریعے آسانی سے پھیلتا ہے۔ یہ اس کے پھیلنے کی بنیادی وجوہات ہو سکتی ہیں- ہو سکتا ہے کہ کھانا شیگیلا سے متاثرہ کسی شخص نے تیار کیا ہو۔ پینے کا پانی سیوریج سے آلودہ ہو سکتا ہے۔ کوئی شخص دوسری چیزوں یا بیت الخلاء کے رابطے میں آتا ہے جو شگیلا سے متاثرہ شخص سے آلودہ ہوتا ہے۔

شیگیلا سے متاثرہ بچے کی نیپی بدلتے وقت انفیکشن ہوا ہو سکتا ہے۔یا جنسی تعلقات کے دوران متاثرہ شخص کے فضلے کے ساتھ رابطے میں آنے سے بھی اس کے پھیلنے کا امکان ہے۔ شیگیلا عام طور پر بے گھر لوگوں، مختلف ممالک کا سفر کرنے والے افراد، مردوں کے ساتھ جنسی تعلق رکھنے والے مرد، اور کمزور مدافعتی نظام والے لوگوں میں پایا جاتا ہے۔

شیگیلا کتنا عام ہے؟

سی ڈی سی کا اندازہ ہے کہ دنیا بھر میں ہر سال 80 ملین سے 165 ملین کے درمیان لوگ شیگیلا سے متاثر ہوتے ہیں اور چھ لاکھ لوگ اس سے مر جاتے ہیں۔ ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق، 2022ء میں شیگیلا کے 99 فیصد انفیکشن کم یا درمیانی آمدنی والے ممالک میں پائے جائیں گے۔ شیگیلا کی زیادہ تر اموات سب صحارا افریقا اور جنوبی ایشیا کے ممالک میں ہوئی ہیں اور تقریباً 60 فیصداموات پانچ سال سے کم عمر بچوں میں ہوئی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:

امریکی سینیٹ نے اسرائیل کیلئے اربوں ڈالر کی امداد روک دی

جنوبی کوریا میں انٹرنیشنل ویکسین انسٹی ٹیوٹ کے سائنسدانوں نے ایک تحقیق میں بتایا ہے کہ ایشیائی ممالک بنگلا دیش، چین، پاکستان، انڈونیشیا، ویتنام اور تھائی لینڈ جیسے صنعتی ممالک کے مقابلے میں شیجیلوسس 100 گنا زیادہ عام ہے۔ شیگیلاصحارا اور جنوبی ایشیائی ممالک میں ایک عام بیماری ہے۔

شیگیلا کا علاج یا روک تھام کیا ہے؟

سی ڈی سی کا کہنا ہے کہ شیگیلا کو باقاعدگی سے ہاتھ دھونے سے روکا جا سکتا ہے۔ مثال کے طور پر-

کھانا پکانے یا کھانے سے پہلے

بیت الخلا سے واپس آنے یا نیپی بدلنے کے بعد

جنسی سرگرمی سے پہلے

زیادہ تر معاملات مناسب مقدار میں پانی پینے اور آرام کرنے سے حل ہو جاتے ہیں۔

اس بیماری میں پانچ قسم کی اینٹی بائیوٹک بہت کارآمد ہیں۔

تاہم امریکی محکمہ صحت کے حکام نے شیگیلا بیکٹیریا کا ایک تناؤ بھی دریافت کیا ہے جو اینٹی بائیوٹکس کے خلاف مزاحم ہے، اس کا نام شیگیلا ایکس ڈی آر یا شیگیلا سوننی ہے۔ سی ڈی سی کا کہنا ہے کہ 2022ء کے دوران امریکا میں پائے جانے والے شیگیلا کے پانچ فیصد کیسز منشیات کے خلاف مزاحمت کرنے والے تناؤ سے متعلق تھے۔ سی ڈی سی نے اسے صحت عامہ کے لیے سنگین خطرہ قرار دیا ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے 2020 ء کے بعد سے یورپ اور برطانیہ میں XDR تناؤ سے منسلک معاملات میں اضافے کا اعتراف کیا ہے۔

بشکریہ: بی بی سی

Share With:
Rate This Article