Homeتازہ ترینحجاب نہ کرنے پر گرفتار خواتین کو رہا کر دیا گیا: طالبان

حجاب نہ کرنے پر گرفتار خواتین کو رہا کر دیا گیا: طالبان

Women arrested for not wearing hijab released: Taliban

حجاب نہ کرنے پر گرفتار خواتین کو رہا کر دیا گیا: طالبان

کابل: (سنو نیوز) طالبان حکومت کے ترجمان ذبیح اللہ مجاہد نے کہا ہے کہ حالیہ دنوں میں جن خواتین کو طالبان حکومت نے حجاب نہ کرنے کے الزام میں گرفتار کیا تھا، ان میں سے کچھ کو رہا کر دیا گیا ہے۔

مجاہد کا دعویٰ ہے کہ ان خواتین کو ان کے اہل خانہ کی درخواست پر صرف دو گھنٹے کے لیے متعلقہ علاقوں میں لے جایا گیا اور ان کے اہل خانہ کی موجودگی میں واپس چھوڑ دیا گیا۔ لیکن دوسری جانب جو خواتین گذشتہ چند دنوں کی گرفتاریوں کی عینی شاہد ہیں، ان کا کہنا ہے کہ یہ غلط ہے۔

خواتین کے حقوق کی ایک کارکن، ترنم سعیدی، جنہوں نے ان لڑکیوں کے اہل خانہ سے بات کی، کہتی ہیں کہ ان میں سے کچھ خواتین اب بھی طالبان کی جیلوں میں ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ گذشتہ روز کابل شہر کے علاقے تیمانی سے کچھ خواتین کو اسلامی حجاب نہ کرنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا تھا ۔

حالیہ دنوں میں خواتین اور لڑکیوں کی امداد نے افغان سیاسی شخصیات اور انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں کے ردعمل کو مشتعل کیا ہے اور انہوں نے حجاب کی وجہ سے خواتین کی گرفتاری کو خواتین کے حقوق کی صریح خلاف ورزی قرار دیا ہے۔

دو روز قبل افغانستان کے لیے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے خصوصی نمائندے رچرڈ بینیٹ نے طالبان حکومت سے درخواست کی تھی کہ ان خواتین کو فوری طور پر رہا کیا جائے جنہیں حجاب نہ پہننے پر گرفتار کیا گیا ہے۔

اس سے قبل طالبان کی وزارتِ حکم و امتناعی کے ترجمان عبدالغفار سباوون نے اعتراف کیا تھا کہ اس وزارت کے محتسب نے کچھ خواتین کو گرفتار کیا ہے جو ان کے بقول حجاب کی پابندی نہیں کرتی تھیں لیکن ان کے پاس درست معلومات نہیں تھیں۔

اس سے پہلے، طالبان کی اس وزارت نے شہر کے ٹیکسی ڈرائیوروں سے کہا تھا کہ “بغیر حجاب والی خواتین بغیر مرد” ٹیکسی میں سوار نہ ہوں۔ طالبان کی حکومت نے کچھ عرصہ قبل اعلان کیا تھا کہ اگر خواتین (اسلامی حجاب) کی پابندی نہیں کریں گی تو خاندان کے مردوں سے پوچھ گچھ کی جائے گی اور انہیں سزا دی جا سکتی ہے۔

Share With:
Rate This Article