12 April 2024

Homeتازہ ترینانسانی سیل اٹلس کیا ہے؟ اس سے انسانیت کو کیا فائدہ ہوگا؟

انسانی سیل اٹلس کیا ہے؟ اس سے انسانیت کو کیا فائدہ ہوگا؟

انسانی سیل اٹلس کیا ہے؟ اس سے انسانیت کو کیا فائدہ ہوگا؟

انسانی سیل اٹلس کیا ہے؟ اس سے انسانیت کو کیا فائدہ ہوگا؟

لندن: (سنو نیوز) انسانی تہذیبوں نے شروع ہی سے دنیا کو سمجھنے کے لیے نقشے بنانا شروع کر دیے تھے۔ سائنسدان دریاؤں اور پہاڑوں سے کائنات کی درست تصویر حاصل کرنے کے لیے نقشے بنا رہے ہیں لیکن گذشتہ چند دہائیوں سے سائنسدان انسانی جسم کی بنیادی ساخت کو سمجھنے کے لیے نقشے بنا رہے ہیں۔

یہ سمجھنے کے لیے کہ انسانی جین کیسے کام کرتے ہیں، چھ ممالک کے سائنسدانوں نے 1990ء میں ہیومن جینوم پروجیکٹ شروع کیا۔ صرف دس سال میں انہوں نے انسانی جسم میں جینز اور کروموسوم کی ساخت کا نقشہ بنایا۔ یہ ایک انقلابی کامیابی تھی، کیونکہ یہ معلومات دنیا بھر میں طبی میدان میں استعمال ہونے لگی۔

لیکن جینوم پروجیکٹ صرف آغاز تھا۔ جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ جسم میں جو کچھ ہوتا ہے اس کا انحصار جسم کے خلیوں کی ساخت پر ہوتا ہے۔ وہ کیسے بنتے ہیں، کیسے کام کرتے ہیں؟ سائنس کے لیے یہ ایک اہم پہیلی رہی ہے۔ آئیے جانتے ہیں کہ ہیومن سیل اٹلس کیا ہے؟

انسانی خلیوں کا نقشہ بنانے سے پہلے یہ سمجھنا ضروری ہے کہ یہ خلیے دراصل کیا ہیں؟ ہم نے ہیومن سیل اٹلس پروجیکٹ کے شریک چیئر Aviv Regev کا کہنا ہے کہ یہ منصوبہ 2016 ء میں شروع کیا گیا تھا۔ ایک خلیہ زندگی کی سب سے چھوٹی شکل ہے۔ اس کے اندر ہمارا جینیاتی کوڈ ہے۔ خلیے اس ڈی این اے کو فعال کرکے مالیکیول بنانے میں مدد کرتے ہیں۔ ہر سیل میں مختلف قسم کے جین ہوتے ہیں، جو سیل کو بتاتے ہیں کہ کیا کرنا ہے۔ اگر خلیے ٹھیک کام کرتے ہیں تو ہم صحت مند رہتے ہیں لیکن اگر جین ان خلیوں کو غلط ہدایات دینے لگیں تو وہ غلط کام کرنے لگتے ہیں اور ہم بیمار پڑ جاتے ہیں۔

مثال کے طور پر، ایک خلیہ ہے جو سسٹک فائبروسس کا سبب بنتا ہے۔ یہ ایک موروثی بیماری ہے جو پھیپھڑوں اور نظام انہضام میں مسائل کا باعث بنتی ہے۔

اس بیماری کا سبب بننے والے جین کی شناخت 30 سال پہلے کی گئی تھی۔ لیکن یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ اس جین کی غلط ہدایات کی وجہ سے کون سے خلیے ٹھیک سے کام نہیں کرتے۔ پھر 2018 ء میں، جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے، Aviv regev سمیت کچھ سائنسدانوں نے اس خصوصی سیل کو دریافت کیا۔ اس خلیے کے غلط کام کرنے کی وجہ سے پھیپھڑوں میں پیپ جمع ہونے لگتی ہے جس سے بیکٹیریا بڑھتے ہیں اور بیماریاں پھیلتی ہیں۔

Aviv کا کہنا ہے کہ ہر ایک خلیے کو تفصیل سے سمجھنے سے انسانی جسم کے بارے میں ہماری سمجھ میں گہرا اضافہ ہوگا۔ جسم کے ہر حصے میں مختلف قسم کے خلیے ہوتے ہیں جن کا ایک خاص کردار ہوتا ہے۔ یہ تمام خلیے مل کر کام کرتے ہیں۔ ہمیں یہ سمجھنا ہوگا کہ یہ خلیے ایک دوسرے سے کیسے مختلف ہیں۔

Aviv regev کہتے ہیں، “تصور کریں کہ آپ کے گھر میں مختلف قسم کے پھل ہیں، کیلے، بیر، انار۔ تمام کیلے ایک جیسے نہیں ہوتے اور نہ ہی تمام بیر ایک جیسے ہوتے ہیں۔ خلیے بھی ایسے ہی ہوتے ہیں۔”تحقیقات کے دوران، جب ہم نے خلیات کو جمع کرکے جانچ شروع کی تو تصویر زیادہ واضح نہیں تھی، کیونکہ ہمارے جسم میں لاکھوں، اربوں خلیے ہیں۔” اس طرح سوچیں کہ اگر آپ تمام پھلوں کو بلینڈر میں ڈال کر پیس لیں تو کیا ہوگا۔ کوئی پھل الگ سے نظر نہیں آئے گا لیکن اب جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے ہم ہر خلیے کو الگ سے دیکھ سکیں گے۔ ہم نے اس بارے میں بات کی کہ کس طرح جین کی تبدیلی ایک وجہ ہے جس کی وجہ سے خلیات ٹھیک سے کام نہیں کرتے ہیں۔ دوسری وجہ وائرس ہے۔

جب سیل غلط طریقے سے کام کرتا ہے تو کیا ہوتا ہے؟

Aviv Regev کا کہنا ہے کہ یہ بیماری کا سبب بنتا ہے۔ یہ اس بات پر منحصر ہے کہ کون سا سیل غلط طریقے سے کام کر رہا ہے۔ مثال کے طور پر، اگر خلیے بے قابو ہو کر تقسیم ہونے لگیں، تو یہ کینسر کا سبب بنتا ہے۔ اس وجہ سے پھوڑے پیدا ہوتے ہیں۔ کون سی بیماری ہو سکتی ہے اس کا انحصار اس بات پر ہے کہ کون سا خلیہ غلط کام کر رہا ہے۔ اس لیے ہمارے لیے ہر قسم کے خلیے کو سمجھنا بہت ضروری ہے تاکہ بیماری کا علاج کیا جا سکے۔

سارہ ٹائچ مین ہیومن سیل اٹلس پروجیکٹ کی دوسری شریک بانی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ہیومن سیل اٹلس پروجیکٹ کیوں شروع کیا گیا۔ وہ کہتی ہیں، ’’ہمیں انسانی جسم میں موجود تمام خلیات کا نقشہ بنانے کی ضرورت ہے تاکہ ہم جسم کو بہتر طور پر سمجھ سکیں‘‘۔اس سے ہمیں بیماریوں کی وجوہات کو سمجھنے اور ان کا علاج کرنے میں مدد ملے گی۔ یہ ہماری صحت کے لیے بہت مفید ثابت ہوگا۔ یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ ہیومن سیل اٹلس جسم کا گوگل میپ ہو گا۔

وہ کہتی ہیں کہ اس کو سمجھنے سے ہم ان ٹشوز کو سمجھ سکیں گے جن سے ہمارے جسم کے اجزاء بنتے ہیں۔ اس کا مطلب ہے کہ خلیے کو سمجھنے سے حیاتیات کے بارے میں ہماری سمجھ پر گہرا اثر پڑے گا۔ اس سے بیماریوں کے علاج کے لیے نئی ٹیکنالوجی اور ادویات بنانے میں مدد ملے گی۔ اب جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے طاقتور خوردبینیں بنائی گئی ہیں جن کے ذریعے ان خلیات اور مالیکیولز کو دیکھا جا سکتا ہے۔ اس معلومات پر طاقتور کمپیوٹرز کے ذریعے کارروائی کی جا سکتی ہے۔

ہیومن اٹلس کے ذریعے اب تک کیے گئے کام کو کووڈ وبائی مرض پر قابو پانے کے لیے استعمال کیا جا چکا ہے۔ اس کام کے ذریعے سائنسدانوں نے دریافت کیا کہ وائرس ہماری آنکھوں، ناک اور منہ کے ذریعے جسم میں داخل ہوتے ہیں۔ صحت عامہ کی پالیسیاں ان معلومات سے متاثر ہوئیں اور اسی بنیاد پر ماسک پہننے کی ہدایات جاری کی گئیں۔ یہ تحقیق صرف ایک جھلک ہے۔ اگر ہمارے پاس انسانی جسم کے تمام خلیوں کا نقشہ موجود ہو تو بہت فائدہ ہوگا۔ایک طاقتور خوردبین کے ذریعے ہم یہ دیکھ اور سمجھ سکیں گے کہ ہمارا جسم کن عناصر سے بنا ہے۔ یہ ہیومن سیل اٹلس پروجیکٹ کا مقصد ہے۔

یہ منصوبہ بین الاقوامی تعاون پر مبنی ہے۔ اس دوران بے شمار معلومات اکٹھی کی جا رہی ہیں جن کا اندازہ لگانا چھوٹی ٹیم کے لیے مشکل ہے۔ اس لیے اس پروجیکٹ میں دنیا کے کئی ممالک کے سائنسدانوں کو شامل کرنا ضروری ہے۔ خلیات یعنی انسانی خلیات کا نقشہ تیار کیا جا رہا ہے لیکن خلیات ڈی این اے سے کنٹرول ہوتے ہیں اور ہر ایک کا ڈی این اے مختلف ہوتا ہے۔

جاپان کے RIKEN سینٹر کے ماہر جینیات پیرو کارنینچی کہتے ہیں، ’’کیونکہ ہر ایک کا ڈی این اے مختلف ہوتا ہے، جب کوئی بیماری ہر کسی میں پھیلتی ہے تو ان کے خلیات کا ردعمل مختلف ہوتا ہے۔ مثال کے طور پر مختلف آبادیوں میں ذیابیطس کی نوعیت قدرے مختلف ہوتی ہے۔ ماحول اور کھانے کی عادتیں بھی اس پر اثر انداز ہوتی ہیں۔ یعنی ماحول اور کھانے کی قسم کا بھی صحت پر اثر پڑتا ہے۔ ایسے میں اگر ایک چھوٹی سی کمیونٹی سے معلومات اکٹھی کی جائیں تو اس کا زیادہ فائدہ نہیں ہوگا۔ اس کے لیے ایک جامع مطالعہ کی ضرورت ہے۔

Piero Caraninchi کہتے ہیں کہ ہم ایسی دوا نہیں بنانا چاہتے جو دنیا کی آبادی کے صرف ایک چھوٹے سے طبقے پر کارگر ثابت ہو۔ اس لیے ہم بڑی آبادی سے صحت مند اور بیمار لوگوں کے نمونے جمع کرنا چاہتے ہیں۔ صحت کی خدمات کو جمہوری بنانے کا معاملہ بھی اسی سے جڑا ہوا ہے۔ اگر یہ ڈیٹا غریب ممالک کے ڈاکٹروں اور سائنسدانوں کے ساتھ شیئر کیا جائے تو وہ زیادہ سے زیادہ لوگوں کو بہتر علاج فراہم کر سکیں گے۔

اس بات کو ذہن میں رکھتے ہوئے، دنیا بھر کے سائنسدانوں کو اکٹھا کرنا کتنا مشکل تھا؟

Piero Caraninchi نے اس بارے میں کہا، “دنیا بھر کے سائنسدانوں اور ڈاکٹروں کو اس منصوبے کی وضاحت کرنا اور نمونے جمع کرنا، انہیں اس کے تجزیے میں مدد کے لیے راضی کرنا اور ان کے ساتھ ہم آہنگی قائم کرنا ایک چیلنج تھا۔” اس میں زبان کا مسئلہ بھی تھا۔ اس کام میں بہت سے لسانی، ثقافتی اور حکومتی مسائل ہیں۔

مریضوں پر اس کے کیا اثرات ہوں گے؟

لوگوں کی صحت کی معلومات یا ڈیٹا کو کیسے محفوظ رکھا جائے گا اس کے بارے میں بھی خدشات ہیں۔ بہت سے چیلنجوں کے باوجود، یہ ایک بہت پرجوش منصوبہ ہے۔ مسائل کے باوجود یہ سائنسدانوں کے لیے اس قدر پرکشش ہے کہ 94 ممالک کے تین ہزار سے زائد محققین اس میں شامل ہو چکے ہیں لیکن عملی طور پر یہ کیسے کام کرے گا اور مریضوں پر اس کے کیا اثرات ہوں گے؟

ہیومن سیل اٹلس کا کیا فائدہ ہوگا؟

ہیومن سیل اٹلس پروجیکٹ کا مقصد انسانی جسم میں موجود تمام خلیوں کا نقشہ بنانا ہے تاکہ دنیا میں کہیں بھی ڈاکٹروں کو معلوم ہو سکے کہ صحت مند سیل کیسا ہوتا ہے۔ اسٹینفورڈ یونیورسٹی میں پیتھالوجی اور امیونولوجی کے پروفیسر شان رینڈل بتاتے ہیں کہ انسانی سیل اٹلس کیسا نظر آئے گا۔ وہ بتاتے ہیں، اس اٹلس پر انسانی جسم کے تمام حصوں کی تصویر کشی کی جائے گی؛ ان میں سے کسی ایک پر کلک کرکے، آپ اس کی گہرائی میں جا سکتے ہیں۔اس میں آپ ٹشو کی تصویر دیکھ سکتے ہیں۔ اس میں اس ٹشو کی ایسی تصویریں ہوں گی جس میں دکھایا جائے گا کہ یہ صحت مند ہونے پر کیسا لگتا ہے اور جب یہ بیمار ہوتا ہے تو کیسا لگتا ہے۔ یہ اٹلس انسانی جسم کا گوگل میپ ہو گا یا ایک قسم کی بہت بڑی لغت ہو گی جس میں ہر خلیے کے بارے میں معلومات حاصل کی جا سکیں گی۔

شان رینڈل نے کہا کہ اس میں سیل کے نمونے اور مختلف جگہوں، پس منظر اور مختلف عمروں کے لوگوں کی معلومات شامل ہوں گی۔ اس میں صحت مند اور بیمار لوگوں کے نمونے بھی ہوں گے۔ اس اٹلس کی مدد سے ہم مختلف خلیوں کے نمونوں کا موازنہ کر سکیں گے۔ اس نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو اس معلومات کی مدد سے ڈاکٹر بہت جلد اس مرض کا پتہ لگا سکیں گے۔ یعنی ڈاکٹر خون کے ٹیسٹ کے ذریعے خلیات کی حالت کا تجزیہ کرتے ہیں تاکہ وہ جان سکیں کہ کون سا خلیہ نارمل سے مختلف ہے اور پھر وہ فیصلہ کرتے ہیں کہ اس کا علاج کیسے کیا جائے۔ اس اٹلس میں موجود بہت بڑے ڈیٹا بیس کا سب سے بڑا فائدہ یہ ہوگا کہ اس سے بیماری کا غلط اندازہ یا غلط تشخیص نہیں ہوگا۔

شان رینڈل کہتے ہیں کہ مثال کے طور پر ہیپاٹائٹس کی بیماری۔ یہ جگر کی بیماری ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ یہ زیادہ پینے کی وجہ سے ہو سکتا ہے یا یہ جینیاتی وجوہات کی وجہ سے بھی ہو سکتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ اس کی مختلف شکلیں اور اسباب ہیں۔ اسی طرح علاج بھی مختلف ہیں۔ لیکن ان تمام بیماریوں کی علامات ایک جیسی ہیں۔ اس پروجیکٹ میں جمع کی گئی معلومات کی بنیاد پر ہم مختلف قسم کی بیماریوں میں فرق کر سکیں گے۔ یعنی اس اٹلس کی مدد سے مرض کی درست تشخیص ہوگی اور اس کی وجہ سے صحیح علاج بھی ہوگا۔ ایک فائدہ یہ بھی ہو گا کہ ڈاکٹروں کو کوئی خاص ٹیسٹ نہیں کرانا پڑے گا، بلکہ آسان ٹیسٹوں کے ذریعے مرض کا پتہ چل جائے گا۔ شان کا کہنا ہے کہ اگر ڈاکٹروں کو معمول کے ٹیسٹ کے دوران کسی خلیے میں کوئی غیر معمولی چیز نظر آتی ہے تو وہ اٹلس میں موجود سیل ڈیٹا بیس سے اس کا موازنہ کرکے بیماری کی تشخیص کرسکتے ہیں۔

اب ہم اپنے اصل سوال کی طرف واپس آتے ہیں… ہیومن سیل اٹلس کیا ہے؟

ہم نے اپنے ماہرین سے سنا ہے کہ ہیومن سیل اٹلس یا انسانی خلیوں کا نقشہ دراصل ہمارے جسم کے تمام خلیوں کے بارے میں ایک مطالعہ اور معلومات ہے۔ چونکہ یہ عالمی تعاون سے چلایا جانے والا منصوبہ ہے۔ اس سے ہمیں معلوم ہوگا کہ مختلف آبادیوں میں پائے جانے والے خلیوں میں کیا فرق ہے۔ یہ ایک حوالہ نقشہ ہو گا، جس کی مدد سے ڈاکٹر جلدی مرض کا پتہ لگا سکیں گے۔ اس کے فوائد حال ہی میں COVID وبائی مرض کے دوران ظاہر ہوئے، جب ہیومن سیل اٹلس کی معلومات سے ہمیں یہ سمجھنے میں مدد ملی کہ پھیپھڑے کیسے کام کرتے ہیں اور بیماری ان پر کیسے اثر انداز ہوتی ہے۔

اس منصوبے میں سو سے زائد ممالک کے سائنسدان اور محقق شامل ہیں، اس لیے سب کے درمیان ہم آہنگی برقرار رکھنا مشکل ہے۔ لیکن یہ طبی دنیا کے لیے انقلابی ثابت ہو سکتا ہے۔ اس کے ساتھ یہ دنیا میں طبی خدمات کو جمہوری بنانے کی جانب ایک ضروری قدم ہے۔ اس کی تکمیل کے بعد، تمام ممالک، امیر اور غریب، کے پاس بیماری کا پتہ لگانے کے لیے یکساں معلومات یا کلید ہوگی۔ اس نقطہ نظر سے دیکھا جائے تو ہیومن سیل اٹلس نہ صرف طبی دنیا میں بلکہ پوری دنیا میں تبدیلی لا سکتا ہے۔

بشکریہ: بی بی سی

Share With:
Rate This Article