12 April 2024

Homeتازہ تریننوجوانوں میں vaping کس طرح بڑا مسئلہ بنتا جا رہا ہے؟

نوجوانوں میں vaping کس طرح بڑا مسئلہ بنتا جا رہا ہے؟

نوجوانوں میں vaping کس طرح بڑا مسئلہ بنتا جا رہا ہے؟

نوجوانوں میں vaping کس طرح بڑا مسئلہ بنتا جا رہا ہے؟

لندن: (سنو نیوز) برطانیہ میں رہنے والی 12 سالہ سارہ گرفن کوگذشتہ ستمبر میں دمہ کا دورہ پڑا اور اسے ہسپتال میں داخل کرانا پڑا۔ سارہ، جو چار دن سے ہسپتال میں کومہ میں تھیں، کی حالت فی الحال بہتر ہے، لیکن ان کے ویپنگ کی لت نے ان کے پھیپھڑوں کو بری طرح نقصان پہنچایا ہے۔

سارہ کی والدہ مریم نے بی بی سی کو بتایا، “ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ اس کا ایک پھیپھڑا تقریباً مکمل طور پر تباہ ہو چکا ہے۔” اس کا نظام تنفس 12 سال کے بچے کی بجائے 80 سالہ بوڑھے جیسا ہو گیا ہے۔ مریم کا کہنا ہے کہ ’’علاج کے دوران سارہ کی حالت دیکھ کر میں نے ایک بار سوچا کہ میں اپنی بیٹی کو کھو دوں گی۔ تاہم، سارہ نے اب ویپ کرنا چھوڑ دیا ہے اور اب لوگوں کو ویپ نہ کرنے کے لیے آگاہ کر رہی ہے۔

سارہ صرف 9 سال کی عمر میں ویپنگ بنانے کی عادی ہو گئی تھی۔ اس کے ساتھ ساتھ بھارت میں بھی سکول جانے والے چھوٹے بچوں کے بخارات کے آلات تلاش کرنے کے واقعات نے تشویش میں اضافہ کر دیا ہے۔

کچھ ماؤں کی طرف سے تشکیل دی گئی تنظیم Mothers Against Vaping نے گذشتہ اکتوبر میں خواتین ارکان پارلیمنٹ کو لکھے گئے ایک خط میں کہا تھا کہ پابندی کے باوجود چھ سے سات سال تک کے بچوں کو ای سگریٹ جیسی مصنوعات حاصل کرنا ان کی صحت کے ساتھ کھیل رہا ہے۔

ای سگریٹ کیا ہے؟

ای سگریٹ بیٹریوں پر چلتے ہیں۔ اس میں مائع ہوتا ہے اور اسے بیٹری سے گرم کرنے کے بعد اسے سانس کے ذریعے اندر لیا جاتا ہے۔ مائع میں عام طور پر تمباکو سے حاصل کردہ نیکوٹین کی کچھ مقدار ہوتی ہے۔ اس کے علاوہ کیمیکلز اور ذائقے جیسے پروپیلین گلائکول، کارسنجن، ایکرولین، بینزین وغیرہ استعمال کیے جاتے ہیں۔

اب یہ پرکشش پیکیجنگ میں بھی مارکیٹ میں دستیاب ہے اور ماہرین کا کہنا ہے کہ ان ویپنگ ڈیوائسز کا رجحان بڑھ رہا ہے۔ برطانیہ میں حالیہ سروے کے نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ 11 سے 17 سال کی عمر کے پانچ میں سے ایک بچے نے وائپنگ کو استعمال کیاہے۔ یہ تعداد 2020 ء کے مقابلے میں تین گنا زیادہ ہے۔

2021 ء میں کیے گئے ایک سروے سے پتہ چلتا ہے کہ 11 سے 15 سال کی عمر کے ہر 10 میں سے ایک بچہ اسے استعمال کر رہا ہے۔ ناردرن آئرلینڈ چیسٹ، ہارٹ اینڈ سٹروک کی فیڈلما کارٹر کا کہنا ہے کہ برطانیہ میں 17 فیصد نوجوان باقاعدگی سے وائپنگ کا استعمال کر رہے ہیں۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق سگریٹ نوشی کرنے والوں کی تعداد کے لحاظ سے چین کے بعد بھارت دوسرے نمبر پر ہے۔ لینسٹ جرنل کی ایک تحقیق میں کہا گیا ہے کہ بھارت میں ہر سال تقریباً 10 لاکھ لوگ سگریٹ نوشی کی وجہ سے جان سے ہاتھ دھو بیٹھتے ہیں۔

طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ نوجوانوں کے لیے وائپنگ کا دوہرا خطرہ لاحق ہوتا ہے، سب سے پہلے، اس میں استعمال ہونے والے مختلف کیمیکل، نکوٹین وغیرہ ان کے پھیپھڑوں کو نقصان پہنچاتے ہیں۔ دوم، ایک بار جب کسی کو بخارات کی لت لگ جاتی ہے تو مستقبل میں سگریٹ کو پینےکے امکانات اور بھی بڑھ جاتے ہیں۔

دو دہائیاں قبل 2003 ء میں ای سگریٹ بنانے والے چینی فارماسسٹ ہون لک نے دعویٰ کیا تھا کہ اس کی مدد سے لوگ آسانی سے سگریٹ نوشی ترک کر سکیں گے۔ لیکن ای سگریٹ، جو لوگوں کو سگریٹ کی لت سے نجات دلانے کے لیے بنائے گئے تھے، اب دنیا کے لیے ایک بڑا چیلنج بن چکے ہیں ۔ ایسی کوئی مستند تحقیق نہیں ہے کہ ای سگریٹ کا استعمال سگریٹ کی لت کو چھوڑنے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

کیا vaping سگریٹ سے کم مہلک ہے؟

ماہرین کہتے ہیں کہ یہ ایک ہی بات ہے کہ دو قسم کے زہر میں سے کون سا بہتر ہے۔ای سگریٹ کے ذریعے سگریٹ نوشی چھوڑنے کا امکان مکمل طور پر بکواس ہے۔ ہارورڈ ہیلتھ پر شائع ہونے والی ایک تحقیق کے مطابق وائپنگ کرنے والے افراد میں سے صرف 10 سے 14 فیصد لوگ سگریٹ نوشی چھوڑ سکتے ہیں۔

اکثر بچے اپنے دوستوں کے دباؤ یا اسے ایک نیا فیشن سمجھنے کی وجہ سے وائپنگ کا استعمال شروع کر دیتے ہیں۔ ایسی صورتحال میں سب سے زیادہ ضروری ہے کہ والدین اس بارے میں آگاہ ہوں تاکہ وہ اپنے بچوں کو اس کے نقصانات کے بارے میں بتا سکیں۔ تھنک چینج فورم کے سروے میں 39 فیصد نوجوانوں نے اعتراف کیا کہ انہیں ای سگریٹ کے نقصانات کے بارے میں والدین، اساتذہ یا میڈیا کے ذریعے معلومات ملی ہیں۔

کئی ممالک میں پابندیوں کے باوجود ای سگریٹ باآسانی دستیاب ہیں۔ یہ آن لائن بھی خریدے جا سکتے ہیں۔ لیکن اسکولوں کے آس پاس ان کی دستیابی بہت تشویشناک ہے۔ پابندیوں کے معاملے میں برطانیہ میں بھی ایسی ہی صورتحال ہے۔ 18 سال سے کم عمر افراد ان کی فروخت کرنے پر پابندی ہے۔ ادھر برطانوی وزیر اعظم رشی سنک پابندیوں کو مزید سخت کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔ وائپنگ ڈیوائسز اور ذائقہ دار مسوڑوں وغیرہ کی پیکنگ کو بچوں کے لیے پرکشش بنانے کے علاوہ دکانوں میں ان کی نمائش پر پابندی لگانے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔

Share With:
Rate This Article