Homeتازہ ترینکارل مارکس کی 5 چیزیں جنہوں نے لوگوں کی زندگی بدل دی

کارل مارکس کی 5 چیزیں جنہوں نے لوگوں کی زندگی بدل دی

karl marx communist manifesto

کارل مارکس کی 5 چیزیں جنہوں نے لوگوں کی زندگی بدل دی

گذشتہ روز 5 مئی کوکارل مارکس کا یوم پیدائش تھا۔ جن لوگوں نے 20ویں صدی کی تاریخ پڑھی ہے وہ اس بات سے متفق ہوں گے کہ مارکس کی انقلابی سیاست کی میراث مشکل رہی ہے۔

معاشرے میں ایک مضبوط سوشل انجینئرنگ کو ان کے خیالات سے متاثر سمجھا جاتا ہے۔ اس کے اصولوں کو سامراج، آزادی اور بڑے پیمانے پر قتل و غارت سے جوڑنے کے بعد وہ ایک تفرقہ انگیز چہرے کے طور پر دیکھا جانے لگا۔

لیکن کارل مارکس کا ایک اور چہرہ بھی ہے اور وہ ایک جذباتی شخص کا ہے۔ ان کے خیالات نے دنیا کی بہتری میں اہم کردار ادا کیا ہے۔

بہت سے لوگ اس جملے کو ایک بیان کے طور پر لے سکتے ہیں لیکن 1848 میں جب کارل مارکس کمیونسٹ مینی فیسٹو لکھ رہے تھے تو انہوں نے چائلڈ لیبر کا ذکر کیا۔ انٹرنیشنل لیبر یونین کے سال 2016 میں جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق آج بھی دنیا میں دس میں سے ایک بچہ مزدور ہے۔ بہت سے بچے فیکٹری چھوڑ کر سکول جا رہے ہیں، تو یہ صرف کارل مارکس کی وجہ سے ہے۔

The Great Economist کی مصنفہ Linda Yueh کہتی ہیں، ” اسکولوں میں بچوں کے لیے مفت تعلیم مارکس کے 1848 میں جاری کیے گئے منشور کے دس نکات میں سے ایک تھا۔ فیکٹریوں میں چائلڈ لیبر کی ممانعت کا بھی اس کے منشور میں ذکر کیا گیا تھا۔”

دوسرا یہ کہ وہ چاہتے تھے کہ انسان اپنی زندگی کے خود مالک بنیں۔کیا کام کے دوران آپ کو دوپہر کے کھانے کا وقفہ ملتا ہے؟ کیا آپ کو ایک خاص عمر کے بعد ریٹائر ہونے اور پنشن حاصل کرنے کا حق ہے؟ اگر آپ کا جواب ہاں میں ہے تو آپ کارل مارکس کا شکریہ ادا کر سکتے ہیں۔

لندن سکول آف اکنامکس کے پروفیسر مائیک سیویج کا کہنا ہے کہ “اس سے پہلے آپ کو لمبے گھنٹے کام کرنے کے لیے کہا جاتا تھا، آپ کا وقت آپ کے پاس نہیں تھا اور آپ اپنی زندگی کے لیے نہیں سوچ سکتے تھے۔”

کارل مارکس نے لکھا کہ کس طرح سرمایہ دارانہ معاشرے میں لوگ زندگی گزارنے کے لیے مزدوری بیچنے پر مجبور ہوں گے۔ مارکس کے مطابق زیادہ تر وقت آپ کو آپ کی محنت کے مطابق تنخواہ نہیں دی گئی اور آپ کا استحصال کیا گیا۔

مارکس چاہتےتھے کہ ہماری زندگی پر ہمارا اپنا حق ہونا چاہیے، ہماری زندگی سب سے بڑھ کر ہونی چاہیے۔ ہم آزاد ہوں اور اپنی تخلیقی صلاحیت کو فروغ دیں۔

سیویج کہتے ہیں، “بنیادی طور پر، مارکس کا کہنا ہے کہ ہمیں ایسی زندگی گزارنی چاہیے جس کا اندازہ کام سے نہ ہو۔ ایک ایسی زندگی جس کے ہم مالک ہوں، جہاں ہم خود فیصلہ کر سکیں کہ کیسے جینا ہے۔ لوگ ایک ساتھ رہنا چاہتے ہیں۔”

تیسرا یہ کہ کارل مارکس چاہتے تھے کہ ہم وہی کریں جو ہمیں پسند ہے۔ جب آپ اپنے دماغ سے وہ کام کرتے ہیں جو آپ کو پسند ہے تو آپ کا کام آپ کو خوشی دیتا ہے۔ اگر ہمیں زندگی میں جو کچھ ہم چاہتے ہیں یا فیصلہ کرتے ہیں اس میں تخلیقی مواقع ملیں اور ہم اسے انجام دے سکیں تو یہ ہمارے لیے اچھا ہے۔ لیکن جب آپ ناخوش کام کرتے ہیں، جہاں آپ کو ایسا محسوس نہیں ہوتا، تو آپ مایوس ہوتے ہیں۔یہ الفاظ کسی تحریکی گرو کے نہیں بلکہ 19ویں صدی کے کارل مارکس نے کہے تھے۔

1844 میں لکھی گئی اپنی کتاب میں انہوں نے کام کے اطمینان کو انسان کی بہتری سے جوڑا۔ وہ پہلے شخص تھے جس نے پہلی بار ایسا کام کیا۔ ان کا استدلال یہ تھا کہ ہم اپنا زیادہ تر وقت کام میں صرف کرتے ہیں، اس لیے ضروری ہے کہ وہ کام ہمیں خوشی دے۔

چوتھی چیز یہ کہ وہ چاہتےتھےکہ ہم امتیازی سلوک کی مخالفت کریں۔ اگر معاشرے میں کچھ غلط ہے، اگر آپ محسوس کر رہے ہیں کہ کسی کے ساتھ ناانصافی، امتیاز یا غلط کیا جا رہا ہے، تو آپ اس کے خلاف احتجاج کریں۔

لندن میں مارکسی میلے کے منتظمین میں سے ایک لیوس نیلسن کے مطابق، “معاشرے کو بدلنے کے لیے انقلاب کی ضرورت ہے۔ ہم معاشرے کی بہتری کے لیے احتجاج کرتے ہیں۔ اس طرح عام لوگوں نے آٹھ گھنٹے کام کرنے کا فیصلہ کیا۔

کارل مارکس کو ایک فلسفی کے طور پر سمجھا جاتا ہے، لیکن نیلسن اس سے متفق نظر نہیں آتے۔ وہ کہتے ہیں، “اس نے جو کچھ بھی لکھا اور کیا، وہ ایک فلسفے کی طرح لگتا ہے لیکن اگر آپ ان کی زندگی اور کاموں کو قریب سے دیکھیں تو آپ کو معلوم ہوگا کہ وہ ایک سرگرم کارکن تھے۔ اس نے انٹرنیشنل ورکرز یونین کی بنیاد رکھی۔ وہ لوگوں کے ساتھ ہڑتال میں شامل ہوئے۔” “

“خواتین کو ووٹ کا حق کیسے ملا؟ یہ پارلیمنٹ نے نہیں دیا، بلکہ اس لیے دیا کہ انہوں نے منظم اور مظاہرہ کیا۔ ہم نے ہفتہ اور اتوار کی چھٹی کیسے حاصل کی؟ یہ اس لیے تھا کہ تمام کارکنان منظم ہو گئے اور ہڑتال پر چلے گئے۔”

پانچویں چیز کے بارے میں بات کریں تو وہ یہ ہے کہ انہوں نے حکومتوں، کاروباری اداروں اور میڈیا کے گٹھ جوڑ پر نظر رکھنے کو کہا۔ اگر حکومت اور بڑے کاروباری گھرانوں کی ملی بھگت ہو تو آپ کو کیسا لگے گا؟ اگر گوگل آپ کی تمام معلومات کسی کو دے تو کیا آپ خود کو محفوظ محسوس کریں گے؟

کارل مارکس نے 19ویں صدی میں کچھ ایسا ہی محسوس کیا۔ اگرچہ اس وقت سوشل میڈیا نہیں تھا لیکن وہ اس طرح کے گٹھ جوڑ کی وضاحت کرنے والے پہلے شخص تھے۔

بیونس آئرس یونیورسٹی کی پروفیسر ویلیریا ویگ ویس کہتی ہیں، “انہوں نے اس وقت حکومتوں، بینکوں، کاروباروں اور نوآبادیات کے اہم ایجنٹوں کے درمیان گٹھ جوڑ کا مطالعہ کیا۔

ویلیریا وائز وائز کے مطابق، ان کا نتیجہ یہ تھا کہ اگر کوئی رواج تجارت کے لیے فائدہ مند تھا، جیسا کہ غلامی، تو یہ نوآبادیات کے لیے اچھا تھا، اور حکومت نے اس کی حمایت کی۔

ان کا مزید کہنا ہے کہ “کارل مارکس نے میڈیا کی طاقت کو بھانپ لیا تھا۔ یہ لوگوں کی سوچ پر اثر انداز ہونے کا ایک بہتر ذریعہ تھا۔ ان دنوں ہم جعلی خبروں کے بارے میں بات کرتے ہیں، لیکن کارل مارکس نے یہ سب کچھ پہلے ہی بتا دیا تھا۔”

ویلیریا ویگ ویس کہتی ہیں، “مارکس اس زمانے میں شائع ہونے والے مضامین کا مطالعہ کرتا تھا۔ وہ اس نتیجے پر پہنچا کہ غریب لوگوں کے جرائم کو زیادہ جگہ دی جاتی تھی۔ وہیں سیاست دانوں کے جرائم کی خبروں کو دبا دیا جاتا تھا۔”

Share With:
Rate This Article