21 February 2024

Homeالیکشن 2024آٹھ فروری کو الیکشن نہ ہوئے اگلے 5 سال تک نہیں ہوں گے: نبیل گبول

آٹھ فروری کو الیکشن نہ ہوئے اگلے 5 سال تک نہیں ہوں گے: نبیل گبول

If the election is not held on February 8, it will not be held for the next 5 years: Nabil Gabol

آٹھ فروری کو الیکشن نہ ہوئے اگلے 5 سال تک نہیں ہوں گے: نبیل گبول

لاہور:(سنو نیوز) پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما نبیل گبول نے کہا ہے کہ اگر 8 فروری 2024ء کو الیکشن نہ ہوئے تو اگلے پانچ سال تک پاکستان میں عام انتخابات نہیں ہوں گے۔

پی پی پی رہنما نبیل گبول نے یہ بات سنونیوز کے پروگرام “برعکس” میں میزبان رانا مبشر کے ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہی۔ ان کا کہنا تھا کہ مجھے بتائیں کہ 8 فروری کو الیکشن کیوں نہیں ہوگا؟ کیا جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کو سردی لگ رہی ہے، اس لیے ا س کا انعقاد نہیں ہوگا۔

نبیل گبول کا کہنا تھا کہ پوری دنیا میں موسم سرما کے دوران الیکشن کا انعقاد ہوتا ہے۔ اگر مولانا فضل الرحمان کی زندگی کو خطرہ ہے تو وہ باہر نہ نکلیں، ان کی پارٹی جے یو آئی (ف) کافی مضبوط ہے۔ ان لوگ انتخابی مہم چلائیں، وہ خود نہ نکلیں۔

انہوں نے کہا کہ اگر مولانا فضل الرحمان کی زندگی کو خطرہ ہے تو ہمیں بھی ان کی فکر ہے لیکن ایسا خطرہ تو بینظیر بھٹو شہید کو بھی تھا، ان کو چار مختلف ممالک کی خفیہ ایجنسیوں نے آگاہ کیا تھا کہ آپ پاکستان نہ جائیں کیونکہ وہاں آپ کی جان کو خطرہ ہے لیکن ان تمام تر خطرات کے باوجود وہ ملک واپس تشریف لائی تھیں۔

یہ بھی پڑھیں:

عمران خان نےعدلیہ پر کبھی عدم اعتماد نہیں کیا: گوہر علی خان

ان کا کہنا تھا کہ صرف ایک شخص کی وجہ سے ملک میں الیکشن کا التوا نہیں کیا جا سکتا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ اگر 8 فروری 2024ء کو پاکستان میں الیکشن نہ ہوئے تو بھول جائیں کہ پاکستان میں آئندہ پانچ سال تک ایسا ہوگا۔ الیکشن 8 فروری کو ہوں گے یا پھر پانچ سال کے بعد۔

پروگرام “برعکس” میں گفتگو کرتے ہوئے پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما نبیل گبول نے کہا کہ ہم مولانا فضل الرحمان کی زندگی بارے فکرمند ہیں لیکن ایسی لائف تھریٹس ہم سب کو ہیں۔ اس موقع پر میزبان رانا مبشر نے سوال کیا کہ اگر 8فروری کو الیکشن نہ ہوئے اور آپ آئندہ پانچ سال تک ملک میں الیکشن نہیں دیکھ رہے تو ملکی نظام کیسے چلے گا؟ اس پر نبیل گبول نے کہا کہ اس وقت نظام ہوگا کہاں جو چلے گا۔ نظام چلانے والے ہی نظام چلاتے ہیں۔

انہوںنے ایک اور سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ہم نے مولانا فضل الرحمان کو کوئی آسرانہیں دیا کہ ان کو صدر مملکت بنایا جائے گا، تاہم میرا کہنا ہے کہ اگر بلاول بھٹو زرداری وزیراعظم بنتے ہیں تو صورتحال اس طرف جا سکتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:

چاہے یو این سے قرارداد منظور کرائیں، الیکشن ضرور ہوں گے: بلاول بھٹو

نبیل گبول نے انکشاف کیا کہ مولانا فضل الرحمان کی مسلم لیگ ن کی قیادت سے ملاقاتیں ہوئیں جن میں انہوں نے کہا کہ ان کو صدر مملکت بنایا جائے، اس ڈیمانڈ کو لیگی قیادت نے تسلیم بھی کیا ہے، لیکن میں مولانا فضل الرحمان صاحب کو ایک بات باور کرا دینا چاہتا ہوں کہ وہ “شریفوں” کے وعدوں پر نہ جائیں، شریف جو وعدے کرتے ہیں اس سے پھرنے میں کوئی دیر نہیں لگاتے۔ یہ لوگ صرف ان کو استعمال کر رہے ہیں۔

Share With:
Rate This Article