23 February 2024

Homeتازہ ترینمعیشت کی بحالی کیلئے اپنی سیاسی ترجیحات قربان کیں : اسحاق ڈار

معیشت کی بحالی کیلئے اپنی سیاسی ترجیحات قربان کیں : اسحاق ڈار

Finance Minister Ishaq Dar

معیشت کی بحالی کیلئے اپنی سیاسی ترجیحات قربان کیں : اسحاق ڈار

اسلام آباد: (اے پی پی) موجودہ حکومت ملک میں معاشی بحالی کے لئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کر رہی ہے، حکومت نے معیشت کو دوبارہ پائوں پر کھڑا کرنے کے لئے اپنی سیاسی ترجیحات ملک پر قربان کی ہیں۔

اے پی پی نیوز کے مطابق اس بات کا اظہار وفاقی وزیر خزانہ و محصولات سینیٹر محمد اسحاق ڈار نے قومی انگریزی روز نامے میں شائع ہونے والے اپنے حالیہ ایک مضمون میں کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان ایک غیر معمولی مشکل معاشی صورتحال سے گزر رہا ہے۔

وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ یہ بات سب کو معلوم ہے کہ موجودہ حکومت کو سنگین معاشی چیلنجز ورثے میں ملے اور بھاری سیاسی قیمت پر بھی معاشی استحکام کی راہ پر واپس آنے کا سخت فیصلہ کیا اور وہ بھی عام انتخابات کے سال میں حکومت کا یہ فیصلہ ملک کے اعلیٰ ترین مفاد میں تھا۔ بدقسمتی سے ایک حالیہ خبر ایک غلط تصویر پیش کرتی ہے جس سے یہ تاثر ملتا ہے کہ توانائی کے شعبے میں اصلاحات اور ٹیکس نظام تعطل کا شکار ہے۔ یہ بات حقیقت سے بہت دور ہے۔ درحقیقت اس حکومت نے اقتدار سنبھالنے کے فوراً بعد، تعطل کا شکار آئی ایم ایف توسیعی فنڈ سہولت (ای ایف ایف) پروگرام کو بحال کرنے کے لیے بڑے اصلاحاتی فیصلے کئے جس کی وجہ سے 7ویں اور 8ویں جائزوں کی کامیابی سے تکمیل ہوئی۔

اپنے مضمون میں انہوں نے مزید کہا کہ توانائی کے شعبے میں خاص طور پر گزشتہ 3-4 ماہ کے دوران نمایاں ڈھانچہ جاتی اصلاحات کی گئی ہیں۔ بجلی اور گیس کے شعبے میں تمام غیر اہدافی سبسڈیز کو واپس لے لیا گیا ہے جس کا مقصد ٹیرف پر نظرثانی کے ذریعے پیداوار کی مکمل لاگت کی وصولی ہے۔ حکومت نے ٹارگٹڈ سبسڈیز کی طرف قدم بڑھایا ہے تاکہ غریب اور کمزور طبقے کو مہنگائی اور بڑھتی ہوئی قیمتوں کے اثرات سے نجات مل سکے جبکہ اس کا بوجھ امیر طبقے پر پڑے۔ اس کے علاوہ، حکومت نے یکم جنوری 2023 سے بی آئی ایس پی کے تحت کفالت پروگرام کے تحت غریب ترین غریب افراد کے وظیفے میں 25 فیصد اضافہ کیا ہے ،جس سے بی آئی ایس پی کے بجٹ میں 40 ارب روپے کا اضافہ کرکے 400 ارب روپے کردیا گیا ہے۔

انہوں نے لکھا حکومت پالیسی اور انتظامی اقدامات سمیت جڑواں خسارے کو دور کرنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کر رہی ہے۔ اس کے نتیجے میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ رواں مالی سال کے پہلے نو مہینوں میں 31 مارچ 2023 کے دوران صرف 3.4 ارب ڈالر رہ گیا جو کہ گزشتہ سال کی اسی مدت میں 13.0 ارب ڈالر تھا۔ توقع ہے کہ 30 جون 2023 کو ختم ہونے والے موجودہ مالی سال میں کرنٹ اکاؤنٹ خسارہ تقریباً 4.5 بلین ڈالر بند ہو جائے گا۔ اس سے ملک کے غیر ملکی زرمبادلہ کے ذخائر کو بہتر بنانے اور بیرونی قرضوں پر انحصار کم کرنے میں مدد ملے گی۔حکومت نے آئی ایم ایف کے ساتھ اتفاق کے مطابق بتدریج تمام ٹیکس چھوٹ واپس لے لی ہے۔

اسحاق ڈار نے تحریر کیا کہ حکومت اس حقیقت کو ذہن میں رکھتی ہے کہ یہ چھوٹ نہ صرف ٹیکس کے نظام میں بگاڑ پیدا کرتی ہے بلکہ محصولات کے اہداف میں بھی کمی کا باعث بنتی ہے۔ تیسرا، خالص وفاقی محصولات میں رواں مالی سال کے پہلے آٹھ ماہ سے 28 فروری 2023 کے دوران گزشتہ سال کی اسی مدت کے مقابلے میں 32 فیصد اضافہ دیکھا گیا ہے۔ وفاقی وزیر سینیٹر محمد اسحاق ڈار کے مطابق موجودہ نان مارک اپ اخراجات میں 19 فیصد کمی آئی ہے جس کی بنیادی وجہ سبسڈیز اور گرانٹس کی واپسی ہے۔ اسٹیٹ بینک ملک میں مہنگائی کو روکنے کے لیے مانیٹری پالیسی کو سخت کرنے کے لیے آزادانہ طور پر اپنے فیصلے لے رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مذکورہ بالا اصلاحات اور کوششوں کے نتیجے میں پاکستان نے پہلے ہی آئی ایم ایف کے ساتھ نویں جائزے کے لیے تمام پیشگی اقدامات کی تعمیل کر لی ہے۔ ایک بار پھر، ان اصلاحات میں ٹیکس استثنیٰ کو ختم کرکے کم ٹیکس کی بنیاد کو وسیع کرنے کے اقدامات، صارفین پر بوجھ ڈالنے کے لیے بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافہ اور کم آمدنی والے گروہوں کو تحفظ فراہم کرتے ہوئے سبسڈی کے جز کو کم سے کم کرنا شامل ہے۔ توقع ہے کہ اسٹاف لیول ایگریمنٹ پر جلد ہی آئی ایم ایف کے ساتھ دستخط کیے جائیں گے جس کے بعد آئی ایم ایف بورڈ کے 9ویں جائزے کی منظوری دی جائے گی۔

Share With:
Rate This Article