19 April 2024

Homeتازہ تریندنیا بھر میں موٹے افراد کی تعداد ایک ارب سے تجاوز

دنیا بھر میں موٹے افراد کی تعداد ایک ارب سے تجاوز

More than a billion people worldwide are obese, research finds

دنیا بھر میں موٹے افراد کی تعداد ایک ارب سے تجاوز

لاہور:(ویب ڈیسک) دنیا بھر میں انسانوں میں موٹاپے کا مسئلہ بڑھتا جا رہا ہے۔ اس وقت ایک ارب سے زائد افراد موٹاپے کا شکار ہیں۔

طبی جریدے لانسیٹ میں شائع ہونے والے ایک مقالے کے مطابق دنیا بھر میں موٹاپے کے شکار ایک ارب سے زائد افراد میں سے 88 کروڑ افراد بالغ ہیں جبکہ 15 کروڑ 90 لاکھ بچے ہیں۔ خواتین میں موٹاپے میں سب سے تیز رفتار اضافہ ٹونگا اور امریکن ساموا میں ریکارڈ کیا گیا ہے۔ سموآ اور نورو میں مردوں میں موٹاپے کی شرح سب سے زیادہ ہے۔ یہاں 70 اور 80 فیصد بالغ افراد موٹاپے کا شکار ہیں۔

مردوں میں موٹاپے کے حوالے سے برطانیہ 55واں تیزی سے ترقی کرنے والا ملک ہے۔ جبکہ خواتین کے لحاظ سے یہ 87 ویں نمبر پر ہے۔ سائنسدانوں کی ایک بین الاقوامی ٹیم نے کہا ہے کہ موٹاپے سے لڑنے کے لیے نئے اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔ موٹاپا دل کی بیماری، ٹائپ ٹو ذیابیطس اور کینسر جیسی بیماریوں کا سبب بن سکتا ہے۔

موٹاپے کی درجہ بندی کے مطابق (موٹاپے میں مبتلا افراد کا فیصد۔ اس میں عمر کے فرق کو بھی مدنظر رکھا جاتا ہے) کچھ ممالک کی صورتحال کچھ یوں ہے۔

1: مردوں میں موٹاپے میں تیزی سے اضافے کے لحاظ سے امریکا 10ویں اور خواتین میں موٹاپے کے لحاظ سے 36ویں نمبر پر ہے۔

2: خواتین میں موٹاپے کے لحاظ سے ہندوستان کم 19ویں نمبر پر ہے، جبکہ مردوں میں یہ 21ویں نمبر پر ہے۔

3: چین خواتین میں موٹاپے کے لحاظ سے 11ویں اور مردوں میں 52ویں نمبر پر ہے۔

امپیریل کالج لندن کے ایک سینئر محقق کا کہنا ہے کہ ان میں سے بہت سے ممالک میں، موٹاپا صحت مند اور غیر صحت بخش خوراک کا معاملہ بن گیا ہے۔ کچھ معاملات میں، یہ مارکیٹنگ کمپنیوں کی جارحانہ حکمت عملی بھی ہے، جو غیر صحت بخش خوراک کو فروغ دیتی ہے۔ اس کے علاوہ بعض اوقات صحت بخش خوراک کی قیمت زیادہ ہونے یا دستیاب نہ ہونے پر بھی لوگ ایسے کھانے کو ترجیح دیتے ہیں جس سے موٹاپا بڑھ سکتا ہے۔

پروفیسر اعزازی برسوں سے موٹاپے کے اعدادوشمار کو دیکھ رہے ہیں۔ وہ موٹاپے کی بڑھتی ہوئی رفتار اور اس کی بدلتی ہوئی تصویر سے حیران ہے۔ اب بہت سے ممالک کو لوگوں میں بڑھتے ہوئے موٹاپے کے مسئلے کا سامنا ہے۔ ان جگہوں کی تعداد بھی کم ہوئی ہے جہاں لوگوں میں کم وزن کا مسئلہ بن رہا تھا۔

رپورٹ کے مطابق 1990 ءسے 2022 ءکے درمیان بچوں اور نوعمروں میں موٹاپے کی شرح میں چار گنا اضافہ ہوا ہے۔ بالغ خواتین میں یہ شرح دو گنا سے زیادہ تیزی سے بڑھی ہے۔ بالغ مردوں میں یہ رفتار تین گنا ہوتی ہے۔ دریں اثنا، کم وزن بالغوں کے تناسب میں 50 فیصد کمی آئی ہے۔ تاہم محققین کا کہنا ہے کہ یہ مسئلہ اب بھی غریب ممالک میں موجود ہے۔

موسمیاتی تبدیلی کے اثرات، کوویڈ 19 کی وجہ سے پیدا ہونے والی افراتفری اور یوکرین میں جنگ جیسی صورتحال نے زیادہ وزن اور کم وزن دونوں کے مسائل میں اضافہ کیا ہے۔ کیونکہ ان حالات سے غربت میں اضافہ ہوا ہے اور لوگ غذائیت سے بھرپور خوراک سے دور ہو گئے ہیں۔ اس صورتحال کا ایک ضمنی اثر یہ ہے کہ کچھ ممالک میں خاندانوں کو مناسب خوراک نہیں مل رہی ہے۔ وہ غیر صحت بخش خوراک کی طرف بڑھ رہے ہیں۔

ڈبلیو ایچ او کے تعاون سے 1500 سے زیادہ محققین کے نیٹ ورک نے پانچ سال یا اس سے زیادہ عمر کے 22 کروڑ افراد کے قد اور وزن کی پیمائش کی ہے۔ اس کے لیے انہوں نے باڈی ماس انڈیکس یعنی BMI کی مدد لی۔تاہم، ان کا ماننا ہے کہ یہ جسم کی چربی کی پیمائش کرنے کا مکمل پیمانہ نہیں ہے۔ کچھ ممالک کے پاس دوسروں سے بہتر ڈیٹا ہوتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ BMI ایک بہت مقبول پیمائش ہے۔

Share With:
Rate This Article