19 April 2024

HomeGazaغزہ میں امداد لینے کے لیے جمع 100 سے زائد افراد جاں بحق

غزہ میں امداد لینے کے لیے جمع 100 سے زائد افراد جاں بحق

Israel-Gaza war: More than 100 reported killed in crowd near Gaza aid convoy

غزہ میں امداد لینے کے لیے جمع 100 سے زائد افراد جاں بحق

غزہ:(ویب ڈیسک) اطلاعات کے مطابق شمالی غزہ میں انسانی امداد لینے کے لیے جمع ہونے والے 100 سے زائد فلسطینی جاں بحق ہو گئے ہیں۔ فلسطینی میڈیا نے بتایا کہ اسرائیلی فوج نے جمع ہونے والے لوگوں پر فائرنگ کی۔ اسرائیلی فوجی ذرائع نے بھی فائرنگ کی اطلاع کی تصدیق کی ہے۔

اس ذریعہ نے بتایا کہ فورسز نے اپنے فوجیوں کو خطرہ محسوس کرنے کے بعد گولی چلائی۔ غزہ شہر کے ایک صحافی نے بی بی سی کو بتایا کہ اسرائیلی ٹینکوں نے جمع ہونے والے لوگوں پر فائرنگ کی۔تاہم اسرائیلی فوج نے اس سے لاعلمی کا اظہار کیا ہے، اور کہا ہے کہ وہ اس واقعے کی تحقیقات کر رہی ہے۔

غزہ شہر سے میڈیا پر شائع ہونے والی افسوسناک تصویروں میں دیکھا جا سکتا ہے کہ درجنوں افراد کی لاشیں امدادی ٹرکوں اور گدھا گاڑیوں میں لے جائی جا رہی ہیں۔ اس واقعے سے کچھ عرصہ قبل حماس کے زیر کنٹرول وزارت صحت نے اعلان کیا تھا کہ 7 اکتوبر سے غزہ میں اسرائیلی فوج کی فوجی کارروائیوں میں شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 30 ہزار سے تجاوز کر گئی ہے۔

یہ جنگ کی ہولناک ہلاکتوں کی تعداد کے بدترین پہلو کی نشاندہی کرتا ہے، کیونکہ یہ تعداد غزہ کی کل 2.3 ملین آبادی کا دسواں تین فیصد ہے۔ حماس کی وزارت صحت نے یہ بھی کہا ہے کہ مرنے والوں میں زیادہ تعداد خواتین اور بچوں کی ہے۔

جمعرات کو جنگ میں روزانہ ہونے والی ہلاکتوں کا اعلان کرتے ہوئے وزارت نے کہا کہ غزہ میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران مزید 81 افراد ہلاک ہوئے اور اس طرح جنگ کے آغاز سے اب تک ہلاک ہونے والوں کی کل تعداد 30,035 ہو گئی ہے۔

تاہم ایک اندازے کے مطابق مرنے والوں کی اصل تعداد اس سے کہیں زیادہ ہو سکتی ہے کیونکہ اسرائیلی فضائی حملوں میں منہدم ہونے والی عمارتوں کے کھنڈرات تلے اب بھی ہزاروں افراد لاپتہ ہیں اور حماس کی وزارت صحت کی جانب سے جاری کردہ اعداد و شمار میں یہ لوگ شامل نہیں ہیں۔ ہسپتالوں میں نہیں پہنچایا جاتا۔

غزہ جنگ میں ہلاک ہونے والوں کی موت کا اندراج اور تصدیق صرف اس وقت کی جاتی ہے جب لاش یا جسم کے کسی حصے کو ہسپتال لے جایا جائے اور ہیلتھ ورکرز کا معائنہ کیا جائے۔ وزارت، جو غزہ میں ہلاکتوں کی تعداد کا واحد سرکاری ذریعہ ہے، نے بھی 70,000 سے زیادہ زخمیوں کا اندراج کیا ہے۔

اقوام متحدہ کے متعلقہ ادارے اور دیگر بین الاقوامی ادارے بھی غزہ کی وزارت صحت کے اعداد و شمار پر انحصار کرتے ہیں۔ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن (ڈبلیو ایچ او) نے کہا کہ اس کا غزہ کی وزارت صحت کے ساتھ “طویل مدتی تعاون” ہے اور ایجنسی کے پاس “ڈیٹا جمع کرنے/تجزیہ کرنے کی اچھی صلاحیتیں ہیں۔”

ڈبلیو ایچ او کے مطابق، اگر موجودہ اموات کی شرح کا موازنہ پچھلی جنگوں کے دوران اقوام متحدہ کے ریکارڈ کیے گئے اعداد و شمار سے کیا جائے تو “یہ جنگ میں ہلاک ہونے والے شہریوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کو ظاہر کرتا ہے، جن میں زیادہ تر بچے اور خواتین ہیں۔”

جنگ میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد اور عام شہریوں اور عسکریت پسندوں کے درمیان فرق کے حوالے سے اسرائیلی فوج نے صرف بی بی سی کو بتایا کہ “مرنے والے دہشت گردوں کی تعداد 10,000 کے لگ بھگ ہے۔”

اقوام متحدہ نے خبردار کیا ہے کہ اس خطے کی ایک چوتھائی آبادی کو بھوک کا سامنا ہے اور ان میں متعدی بیماریاں ڈرامائی طور پر پھیل چکی ہیں۔ یہ اس وقت ہے جب اقوام متحدہ کے مطابق غزہ میں ادویات اور طبی سامان پہلے ہی محدود ہے۔

گذشتہ بدھ غزہ کے شمال میں دو ہسپتالوں میں کم از کم چھ بچے غذائی قلت اور پانی کی کمی کے باعث ہلاک ہو گئے۔ غزہ میں جنگ گذشتہ سال 7 اکتوبر کو حماس گروپ کے جنوبی اسرائیل پر حملے کے بعد شروع ہوئی تھی۔ اسرائیلی ذرائع کے مطابق اس حملے میں 12 سو اسرائیلی ہلاک اور 253 دیگر کو حماس کے جنگجوؤں نے یرغمال بنا لیا تھا۔

Share With:
Rate This Article