12 April 2024

Homeتازہ ترینغزہ میں جنگ بندی حماس کیلئے تحفہ ہوگا: ہیلری کلنٹن

غزہ میں جنگ بندی حماس کیلئے تحفہ ہوگا: ہیلری کلنٹن

امریکا کی سابق وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن ایک تقریب سے خطاب کر رہی ہیں

غزہ میں جنگ بندی حماس کیلئے تحفہ ہوگا: ہیلری کلنٹن

واشنگٹن : (سنو نیوز) سابق امریکی وزیر خارجہ ہیلری کلنٹن نے کہا ہے کہ غزہ کے ساتھ جنگ بندی ممکن نہیں، اگر جنگ بندی ہوتی ہے تو یہ حماس کے لیے ایک تحفہ ہو گا کیونکہ وہ اس وقت کو خود کو دوبارہ قائم کرنے کے لیے استعمال کرے گی۔

ہیلری کلنٹن کا کہنا ہے کہ ’جو لوگ جنگ بندی کی بات کر رہے ہیں وہ حماس کو نہیں سمجھتے‘۔ یہ ممکن نہیں ہے۔ اگر ایسا کیا جاتا ہے تو یہ حماس کے لیے تحفے کی طرح ہوگا۔ کیونکہ پھر حماس اس وقت کو مضبوط اڈے بنانے اور جنگی سامان اکٹھا کرنے میں استعمال کرے گی۔

ہلیری نے یہ باتیں اس دن کہیں جب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے اسرائیل اور حماس کے درمیان فوری طور پر انسانی ہمدردی کی بنیاد پر جنگ بندی پر عمل درآمد کی تجویز کو کثرت رائے سے قبول کیا۔ امریکا ان 14 ممالک میں شامل تھا ، جنہوں نے جمعے کے روز اردن کی طرف سے پیش کی گئی اس تجویز کے خلاف ووٹ دیا۔ بھارت سمیت 45 دیگر ممالک اس ووٹنگ سے غیر حاضر رہے۔

ہیلری نے اسرائیل غزہ پر کیا کہا؟

7 اکتوبر کو حماس نے اسرائیل پر حملہ کیا ، اس کے بعد جوابی کارروائی میں اسرائیل نے غزہ پر حملے شروع کر دیئے۔ حماس کے حملے میں 1400 اسرائیلی مارے گئے۔ اسرائیل کی جوابی کارروائی میں غزہ میں آٹھ ہزار سے زائد افراد شہید ہو چکے ہیں۔ ان میں بڑی تعداد بچوں کی ہے۔

پیر کو یہ خبریں بھی آئیں کہ اسرائیل نے غزہ کے ایک اسپتال پر حملہ کیا ہے جہاں ہزاروں فلسطینیوں نے پناہ لے رکھی ہے اور ہزاروں کا علاج بھی جاری ہے۔ اسرائیل کے حملے کے بعد غزہ کو دی جانے والی امداد بھی متاثر ہوئی ہے۔

اس بارے میں ہیلری کلنٹن کا کہنا ہے کہ غزہ تک تیل اور دیگر چیزوں سمیت مدد پہنچانا ایک مخمصہ ہے ، جس کا جواب ہاں یا ناں میں دینا مشکل ہے۔ اس صورت حال کے کئی پہلو ہیں۔ وہ کہتی ہیں، “اسرائیلی عوام پر حماس کی طرف سے پھیلائی گئی دہشت گردی کی مخالفت ضروری ہے اور حماس کو اس کی قیمت چکانی پڑے گی۔”

ہلیری نے کہا، ’’اسرائیل کو اپنے دفاع کا حق حاصل ہے اور اسے یہ حق جنگ کے قوانین کے تحت حاصل ہے‘‘۔اسرائیل کی یہ تشویش جائز ہے کہ شاید تیل حماس کے پاس نہ جائے۔ یہ ضروری ہے کہ تیل وہیں جائے جہاں اسے واقعی ضرورت ہو۔ تاکہ جنریٹر چلتے رہیں اور ہسپتالوں میں کوئی پریشانی نہ ہو۔

ان کا کہنا تھا کہ جو لوگ جنگ بندی کی بات کر رہے ہیں وہ حماس کو نہیں سمجھتے۔ اگر ایسا ہوتا ہے تو یہ حماس کے لیے تحفے کی طرح ہوگا۔ پھر حماس اس وقت کو جنگی مواد اکٹھا کرنے کے لیے استعمال کرے گی۔

نیتن یاہو نے جنگ بندی کے بارے میں کیا کہا؟

تنازع شروع ہونے کے بعد اتوار کو 33 امدادی ٹرک غزہ میں داخل ہوئے۔ اقوام متحدہ کے مطابق یہ پہلی بڑی امداد ہے جو غزہ میں تنازع شروع ہونے کے بعد پہنچی ہے۔ العربیہ کے مطابق ، تنازع شروع ہونے سے پہلے روزانہ 500 ٹرک امداد اور سامان لے کر غزہ میں داخل ہوتے تھے۔

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نےجنگ بندی کے امکان کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ یہ جنگ کا وقت ہے۔ جس طرح امریکا پرل ہاربر پر بمباری یا 9/11 کے حملوں کے بعد جنگ بندی کے لیے تیار نہیں تھا۔ اسرائیل 7 اکتوبر کے حملے کے بعد حماس کے ساتھ جنگ ​​بندی پر راضی نہیں ہوگا۔ کیونکہ ایسا کرنا جنگ بندی کا مطالبہ کرنا اسرائیل سے حماس، دہشت گردی کے سامنے ہتھیار ڈالنے کو کہنے کے مترادف ہے۔”بنجمن نیتن یاہو نےکہا کہ “بائبل میں کہا گیا ہے کہ امن اور جنگ کا وقت ہے۔یہ جنگ ہمارے مشترکہ مستقبل کے لیے ہے۔”

Share With:
Rate This Article