Homeتازہ ترینیوکرین حملے کے ایک سال بعد پیوٹن کا نیا پلان کیا ہے؟

یوکرین حملے کے ایک سال بعد پیوٹن کا نیا پلان کیا ہے؟

یوکرین حملے کے ایک سال بعد پیوٹن کا نیا پلان کیا ہے؟

ایک سال قبل روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے یوکرین پر حملہ کیا تھا۔ مغربی میڈیا کا دعویٰ ہے کہ گذشتہ بارہ ماہ میں اس جنگ میں روس کے تقریباً دو لاکھ فوجی مارے جا چکے ہیں۔ یوکرین کی فوج نے ان کئی شہروں پر دوبارہ قبضہ کر لیا ہے جن پرروسی فوج نے قبضہ کر لیا تھا۔

ایک طرف گذشتہ فروری میں دارالحکومت کیف پر قبضے کے لیے روسی جارحیت ناکام ہوئی تو دوسری جانب روس کو اب تک یوکرین کو اپنے کنٹرول میں لینے میں زیادہ کامیابی نہیں ملی ۔لیکن یورپی انٹیلی جنس اداروں کے مطابق روس موسم گرما سے پہلے یوکرین پر ایک بڑے زمینی حملے کی تیاری کر رہا ہے۔

اطلاعات ہیں کہ روسی فوج میں ہزاروں نئے فوجیوں کی بھرتی کے بعد روسی فوج کو ایک نئی فورس مل گئی ہے اور اس نے بڑی تعداد میں لڑاکا طیاروں اور توپوں کو یوکرین کی سرحد کے قریب تعینات کرنا شروع کر دیا ہے۔

پچھلے سال کے موسم سرما میں لڑائی زیادہ تر ڈونباس کے علاقے میں جاری رہی۔ 2014 ء میں کریمیا پر حملے کے دوران روس نے یوکرین کے علاقے ڈونباس پر بھی حملہ کیا تھا۔ گذشتہ فروری میں پیوٹن نے ڈونباس اور ملحقہ زاپریچا اور لوہانسک صوبوں کو روس کے ساتھ الحاق کر لیا تھا لیکن اب تک روس ان علاقوں کو مکمل طور پر کنٹرول کرنے میں کامیاب نہیں ہو سکا ہے۔

گذشتہ چند ماہ میں روس نے یوکرین کے دارالحکومت کیف سمیت کئی اہداف پر شدید بمباری کی ہے۔ اب روسی افواج نے یوکرین کے جنوب، مشرق اور مغرب میں بڑے پیمانے پر رکاوٹیں کھڑی کر دی ہیں۔ مغربی انٹیلی جنس اداروں سے موصول ہونے والی معلومات کے مطابق روس نے نئے حملے کی تیاری کے لیے توپیں اور لڑاکا طیارے تعینات کیے ہیں۔ لیکن سوالات اٹھائے جا رہے ہیں کہ اس حملے کی نوعیت کیا ہو سکتی ہے؟

یہ قیاس بھی کیا جا رہا ہے کہ یہ حملہ روس کے اتحادی بیلاروس سے بھی کیف پر قبضہ کرنے کے لیے کیا جا سکتا ہے۔ تاہم بعض ماہرین کا کہنا ہے کہ بیلاروس کی سرزمین سے حملہ کرنے کا امکان کم ہے۔ اگر حملے کی منصوبہ بندی بیلاروس سے کی گئی، تو وہاں بڑے پیمانے پر فوج کی تعیناتی دیکھی جائے گی۔ اگر حملے کی منصوبہ بندی موسم بہار کے آغاز کے لیے کی گئی ، تو روس ڈونباس کے علاقے اور یوکرین کے مشرقی حصوں کو نشانہ بنائے گا۔اس کا مطلب یہ ہے کہ روس یوکرین کی فوج کے مشرقی اور جنوبی سیکٹرز کے مورچے توڑ کر اندر گھسنے کی کوشش کرے گا۔

لیکن روس کے سامنے مسئلہ یہ ہے کہ اس نے حال ہی میں جو نئے فوجی بھرتی کیے ہیں ان کے پاس تجربہ اور تربیت کی کمی ہے۔ اگر یوکرین کی فوج سے غلطیاں ہوتی ہیں تو روسی کمانڈر اس کا کچھ فائدہ اٹھا سکتے ہیں، لیکن نئے روسی فوجیوں کے پاس تجربے کی کمی ہے، اگر وہ کامیاب ہو گئے تو یوکرین کی فوج کو بیس سے تیس کلومیٹر پیچھے ہٹنا پڑ سکتا ہے۔

گذشتہ ایک سال میں روسی فوج کے تقریباً بیس فوجی جرنیلوں کو ان کی ناکامی کی وجہ سے ان کے عہدوں سے ہٹا دیا گیا ہے اور فوج کے حوصلے پست ہوئے ہیں۔ لیکن اس نے ڈونباس کے علاقے پر اپنی گرفت مضبوط کر لی ہے۔ ساتھ ہی روس کو اس عرصے میں اپنے اتحادیوں بیلاروس، ایران اور شمالی کوریا سے نئے ہتھیار ملے ہیں۔ جس کا مطلب یہ ہے کہ روسی کارروائی شاید زیادہ موثر نہ رہی ہو لیکن اسے جاری رکھنا ممکن ہے۔

روس یوکرین کی فوج کو زیادہ سے زیادہ نقصان پہنچانے کی کوشش کر رہا ہے۔ تاکہ یوکرین کی فوج کو کمزور اور ختم کیا جا سکے۔ اگر روس کو جنگ میں متوقع کامیابی نہ بھی ملے تو بھی اتنا ہی کافی ہو سکتا ہے۔ اور روس اپنی فوج کو جتنے ہتھیار مغربی ممالک سے یوکرین کو حاصل کر رہا ہے اس سے زیادہ ہتھیار فراہم کر سکتا ہے۔

جنگ جتنی لمبی ہوگی، یوکرین کی فوج اتنی ہی کمزور ہوتی جائے گی۔ اس لیے روس کی حکمت عملی یہ ہے کہ یوکرین کی فوج کو اس کے ٹھکانوں پر بمباری کرکے چھوٹے حملوں سے نقصان پہنچایا جائے۔ پیوٹن چاہتے ہیں کہ اگر یوکرین کی فوج کو شکست نہیں دی جا سکتی تو بھی کم از کم اس کے حوصلے کو توڑ دیا جائے۔

مغربی دفاعی ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ پیوٹن کی مرضی کی جنگ ہے۔ یوکرین کی فوج پر مسلسل حملے کر کے وہ مغرب کو دکھانا چاہتے ہیں کہ روس ایک بڑی طاقت ہے اور اپنی فوج کو لامحدود ہتھیار فراہم کر سکتا ہے۔

لیکن روس کے فوجی عزائم کا انحصار ویگنر گروپ پر ہے۔ ویگنر گروپ پہلی بار 2014 ء میں اس وقت سرخیوں میں آیا جب اس نے روس نواز علیحدگی پسندوں کے ساتھ مل کر ڈونباس میں یوکرینی فوج کے خلاف جنگ کی۔ یہ گروپ خود کو ایک نجی کمپنی بتاتا ہے لیکن اس کے روسی حکومت کے ساتھ قریبی تعلقات ہیں۔ یہ گروپ افریقی ممالک میں بھی سرگرم ہے جہاں سابق سامراجی طاقتیں براہ راست کارروائی نہیں کرنا چاہتیں۔ وہاں ویگنر گروپ کام کرتا ہے۔

اگرچہ روس اسے براہ راست اپنی سکیورٹی فورسز کا حصہ نہیں سمجھتا، لیکن یہ گروپ ان جگہوں پر روس کے اثر و رسوخ کو بڑھاتا ہے۔ اب تک یوکرین کی جنگ میں اس نے روس کے فوجی اہداف کے حصول میں کلیدی کردار ادا کیا ہے۔ گذشتہ موسم گرما کے بعد سے اب تک اس نے روس کے خلاف جنگ لڑی ہے۔

پچھلے چند مہینوں میں ویگنر کے جنگجوؤں کی تعداد دس گنا بڑھ کر پچاس ہزار ہو گئی ہے۔ اس میں بھرتی کیے گئے زیادہ تر جنگجو روسی جیلوں سے رہا ہونے والے مجرم ہیں۔ ویگنر گروپ روس کے فوجی خلا کو پُر کرتا ہے۔ پیوٹن کے لیے ایک اور فائدہ یہ ہے کہ یہ سرکاری روسی فوج کا حصہ نہیں ہے، اس لیے اس کے جنگجوؤں کی ہلاکتیں اسی طرح کا سماجی دباؤ نہیں لاتی ہیں۔

ایک اور فائدہ یہ ہے کہ یہ یوکرین کے لیے مغربی امداد کا جواب بھی ہے۔ لیکن یہ جنگجو سزا یافتہ مجرم ہیں جن کے پاس جنگی تجربہ یا مہارت نہیں ہے۔رپورٹس کے مطابق ان جنگجوؤں میں سے 80 فیصد جنگ میں مارے گئے ہیں۔ ان مجرموں کے پاس لڑنے کے سوا کوئی چارہ نہیں ہے۔ اگر وہ آگے بڑھنے کا حکم نہیں مانتے تو گولی مار دی جاتی ہے۔

ویگنر گروپ کے جنگجو بڑی تعداد میں مارے گئے ہیں لیکن ان پر یوکرین کے عام لوگوں کو تشدد کا نشانہ بنانے کا الزام بھی لگایا گیا ہے۔ اس کے ساتھ یہ گروہ بعض کامیابیوں کے سہرے کے لیے کئی بار روسی فوج کے افسران کے ساتھ جھڑپوں میں بھی دیکھا گیا ہے۔

روس میں بہت سے لوگ جو حکومت پر تنقید کر رہے ہیں صرف یہ تنقید کر رہے ہیں کہ حکومت کو یوکرین کو کنٹرول کرنے کے لیے زیادہ سختی سے کام لینا چاہیے تھا۔

پیوٹن نے روسی فوج کو مزید یوکرین میں بھیجنے کی کوشش کی تواسے میدانی علاقوں میں یوکرینی فوج کے ٹینکوں اور توپ خانے کا سامنا کرنا پڑے گا اور شہروں کے اندر دوبارہ لڑائی لڑی جائے گی۔ اس کی مثال بخموت شہر ہے جہاں میں کئی ماہ سے لڑائی جاری ہے۔ یہ شہر روس کے لیے تزویراتی طور پر اہم ہے اور یوکرین کی فوج کو یہاں سے پیچھے ہٹنا پڑ سکتا ہے۔

یوکرین کی فوج کو مغربی ممالک سے تربیت اور جدید ہتھیار مل رہے ہیں۔ اس کے مقابلے میں روس کے ہتھیار پرانے اور کم موثر ہیں۔ روس کے پاس درست ہتھیاروں اور میزائلوں کی کمی ہے۔ مغربی ممالک نے ان ہتھیاروں کو بنانے کے لیے ضروری مائیکرو چپس یا سیمی کنڈکٹرز کی سپلائی روک دی ہے۔ چین بھی اس میں روس کی مدد کے لیے آگے نہیں آ رہا ہے۔ دوسری بات یہ ہے کہ روس کے ساتھ گولہ بارود کی کمی ہے۔ فوج بھی تیزی سے ختم ہو رہی ہے اور روس اسے مناسب مقدار میں تیار کرنے کے قابل نہیں ہے۔

ان مسائل کے علاوہ روسی فوج کے سامنے مفتوحہ علاقے پر کنٹرول برقرار رکھنے کا چیلنج بھی ہے۔ ابھی تک یہ معلوم نہیں ہوسکا کہ روس کا دفاع کتنا مضبوط ہے اور کیا وہ یوکرین کے جدید ترین ٹینکوں اور میزائلوں کا مقابلہ کر سکے گا۔ اگر یہ کمزور ہوا تو یوکرین کی فوج جوابی کارروائی کرے گی ۔ ان چیزوں کو دیکھ کر لگتا ہے کہ وہ ابھی تک اس فتح کو پورا کرنے سے بہت دور ہیں جس کا پیوٹن نے روسی عوام سے وعدہ کیا تھا۔

جانی نقصان اور ہتھیاروں کی کمی روس کو جنگ بندی کے بارے میں سوچنے کا سبب بن سکتی ہے۔ یہ غیر متوقع طریقے سے ہو سکتا ہے، لیکن ضروری نہیں کہ یہ زیادہ دیر تک چلے۔ پیوٹن کوشش کریں گے کہ زیادہ سے زیادہ زمین پر قبضہ کر لیا جائے۔ اس سے ان کا مقصد جزوی طور پر پورا ہو سکتا ہے اور ہار اور فتح کے بغیر جنگ ختم ہو سکتی ہے۔

سالہا سال سے جاری جنگ میں بھاری نقصان کے باوجود پیوٹن یوکرین کو کنٹرول کرنے میں خاص طور پر کامیاب نہیں ہو سکے۔ اس کے باوجود روس میں ان کی حمایت میں زیادہ کمی نہیں آئی۔ اب وہ یوکرین کے مشرق اور جنوب میں ایک بڑے علاقے پر قبضہ کرکے اسے کریمیا سے جوڑنے کی کوشش کریں گے جس پر انہوں نے چند سال قبل قبضہ کیا تھا۔ اس کے بعد وہ یوکرین کی حکومت پر ہتھیار ڈالنے کے لیے دباؤ ڈال سکتے ہیں۔ لیکن یہ جنگ آنے والے چند مہینوں میں ختم ہوگی یا نہیں اور جنگ کون جیتے گا، ابھی کچھ واضح طور پر نہیں کہا جا سکتا۔

بشکریہ بی بی سی

Share With:
Rate This Article