12 April 2024

Homeتازہ ترینورزش کرنے کے بہترین اوقات کیا ہیں؟

ورزش کرنے کے بہترین اوقات کیا ہیں؟

what is best time for exercise

ورزش کرنے کے بہترین اوقات کیا ہیں؟

لاہور: (ویب ڈیسک) طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ورزش کسی بھی وقت اچھی صحت کی ضمانت ہے، لیکن کیا ہم دن کے بہترین وقت میں ورزش کرنے کی عادت ڈال سکتے ہیں؟

اگلے چند مہینوں میں، دنیا کے بہترین کھلاڑی پیرس میں سب سے باوقار بین الاقوامی کھیلوں کے ایوارڈ کے لیے مقابلہ کرنے کے لیے جمع ہوں گے۔ اولمپک گولڈ میڈل کے لیے بہترین کھلاڑیوں میں سے بہترین کھلاڑی پر غور کیا جاتا ہے۔

دنیا کے بہترین کھلاڑی جو مزید نام جیتنا چاہتے ہیں، فی الحال موثر ٹریننگ کرتے ہوئے ہر دن اچھا وقت گزار رہے ہیں۔ یونان کے چار اولمپک گیمز 2004، بیجنگ 2008، لندن 2012 اور ریو 2016 کے 144 تمغے جیتنے والے کھلاڑیوں کے کھیل دیکھ کر یہ ثابت ہوا ہے، “شام میں مقابلہ کرنے والے سب سے تیز تھے۔”

اس سلسلے میں شام پانچ بجے کے قریب مقابلوں میں حصہ لینے والوں کے لیے کافی کارآمد ثابت ہوا۔ اس جائزے سے محققین کو معلوم ہوا ہے کہ انسان کے رویے اور اعمال مختلف اوقات میں بدلتے رہتے ہیں اور ان کے اثرات بھی مختلف ہوتے ہیں۔

آپ نے شام کو گیم کھیلنے یا سائیکل چلانے کا لطف دیکھا ہوگا۔دنیا میں زیادہ تر کھیل شام کے وقت کھیلے جاتے ہیں۔ یہ ظاہر ہے کہ اس وقت لوگ کام سے واپس آ چکے ہوتے ہیں، لیکن درحقیقت اس وقت گیمز کی توانائی زیادہ ہے اور فوائد بھی نمایاں ہیں۔

اس لیے طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ ورزش کا بہترین وقت سہ پہر ساڑھے چار بجے سے رات آٹھ بجے تک ہے۔ تحقیق نے یہ بھی اشارہ کیا ہے کہ ورزش کے مختلف اوقات مردوں اور عورتوں کی صحت پر مختلف اثرات مرتب کرتے ہیں۔

ہمارے جسمانی اعمال اور ورزش سے جسم کس طرح متاثر ہوتا ہے ، اس کا تعلق ہمارے جسم کے مالیکیولز اور خلیات سے ہے جو ہمارے جسم کے کچھ افعال کو دن کے 24 گھنٹے منظم کرتے ہیں۔ سویڈن کے کیرولنسکا انسٹی ٹیوٹ میں ماہر فزیالوجسٹ جولین زیرت ورزش اور وقت کے درمیان تعلق پر تحقیق کر رہے ہیں۔

جولین زیرت اور ان کے ساتھیوں نے اپنی تحقیق میں پایا کہ ’صبح سویرے ورزش کرنے والے چوہوں کا وزن زیادہ کم ہوا‘۔ ان کا کہنا ہے کہ اس سے ثابت ہوتا ہے کہ دن کے بہترین وقت میں ورزش ذیابیطس اور موٹاپے سے نجات کے لیے مفید ہے۔

محققین نے کہا کہ “ہر کوئی مانتا ہے کہ ورزش اچھی ہے، لیکن اگر آپ اسے ہر وقت کرتے ہیں۔”وہ مزید کہتے ہیں کہ ورزش کے میٹابولک اور حیاتیاتی فوائد دن کے مختلف اوقات میں اور بھی زیادہ فائدہ مند ثابت ہو سکتے ہیں۔

انسانوں پر کی گئی ایک حالیہ تحقیق میں محققین نے ثابت کیا ہے کہ ہفتے میں ایک دن صبح ورزش کرنے سے پٹھوں کی تعمیر میں مدد ملتی ہے، اس کے علاوہ یہ ورزش پیٹ کی چربی کو کم کرنے اور بلڈ پریشر کو معمول پر رکھنے میں مدد دیتی ہے۔

ان مطالعات کا حیران کن حصہ یہ ہے کہ اگر خواتین یہ ورزش شام کو کریں تو ان کے مسلز ٹون اور بڑھ سکتے ہیں لیکن اگر مرد یہی ورزش شام کو کریں تو یہ زیادہ کارگر بتائی جاتی ہے اور یہ بلڈ پریشر کو کم کرنے میں فائدہ مند ہے۔

واضح رہے کہ یہ مطالعات ابھی ابتدائی مراحل میں ہیں اور مکمل نہیں ہوسکے ہیں۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ ’’جس طرح ہمارے جسم کے اعضاء مختلف ہیں اسی طرح ہر شخص کی جسمانی گھڑیاں بھی مختلف ہیں‘‘۔

امریکی محققین کے ایک گروپ کا کہنا ہے کہ ’ہم میں سے جو لوگ صبح جلدی اٹھتے ہیں، ہمارا باڈی کلاک 24 گھنٹے سے کم چل سکتا ہے اور جو لوگ رات کو دیر تک جاگتے ہیں، ان کا باڈی کلاک 24 گھنٹے سے زیادہ چل سکتا ہے‘۔

ایسر کی سربراہی میں محققین کے ایک گروپ نے پایا کہ جن چوہوں کو صبح کے وقت تربیت دی جاتی ہے، وہ دوپہر میں تربیت یافتہ اور ورزش کرنے والوں کے مقابلے میں تیزی سے تبدیلی کے لیے اپنانے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ یہ مطالعہ ابھی تک شائع نہیں ہوا ہے اور اس کا دوبارہ جائزہ لیا جانا چاہیے۔

محققین کا خیال ہے کہ اگر یہی اثر انسانوں میں بھی پایا جا سکتا ہے، تو کھلاڑیوں کے لیے اپنے پٹھوں کی تعمیر کو مناسب وقت پر لگانا آسان ہو جائے گا۔ اس کے ساتھ ساتھ ان تمام چیزوں کا اصل کام فطرت کے ساتھ ہے، ہمارا جسم کسی بھی قسم کی تربیت یا سیکھنے کو اس وقت آسانی سے قبول کرتا ہے جب اسے ایک ہی وقت میں ایک باقاعدہ شیڈول کے مطابق کیا جائے۔

Share With:
Rate This Article