20 February 2024

Homeتازہ تریندماغ اور جسم کے لیے چقندر کے پانچ قیمتی فوائد

دماغ اور جسم کے لیے چقندر کے پانچ قیمتی فوائد

beatroot

دماغ اور جسم کے لیے چقندر کے پانچ قیمتی فوائد

لاہور: (ویب ڈیسک) آپ جانتے ہیں کہ چقندر آپ کے جسم اور صحت کو بہتر بنانے کے لیے بہترین غذاؤں میں سے ایک ہو سکتی ہے۔ یہ زیر زمین جڑی بوٹی نہ صرف آپ کی طاقت میں اضافہ کرتی ہے بلکہ آپ کے دماغ کو تیز کرنے میں بھی مدد دیتی ہے۔

اس کے اور بھی بہت سے فوائد ہیں، جیسے بڑھاپے میں بلڈ پریشر کو کنٹرول کرنا اور دماغ کو صحت مند رکھنا۔ کہا جاتا ہے کہ جسم کے لیے چقندر کے فوائد قدیم یونان سے ہی معلوم ہیں لیکن نئے شواہد ان کے دیگر فوائد کی طرف اشارہ کرتے ہیں، اور اسی لیے ہمیں انہیں اپنی باقاعدہ خوراک میں شامل کرنا چاہیے۔

اینٹی آکسیڈینٹ طاقت:

قدرتی روغن جسے بیٹالین کہتے ہیں، چقندر کو گہرا اور مضبوط رنگ دیتے ہیں اور اس لیے ان میں اینٹی آکسیڈنٹ کی اچھی خاصیت ہوتی ہے۔ چند سال قبل اٹلی میں کی گئی ایک تحقیق میں بتایا گیا تھا کہ چقندر بڑی آنت کے کینسر کے خلیات کو تباہ کرتا ہے۔ لیکن Betalin اس کی واحد جادوئی طاقت نہیں ہے۔ اگرچہ نائٹریٹ کا زیادہ استعمال اچھا نہیں ہے لیکن جب ہم چقندر جیسی سبزیوں میں قدرتی نائٹریٹ کھاتے ہیں تو یہ صحت کے لیے فائدہ مند ہے۔

چقندر نائٹریٹ سے بھرپور ہوتے ہیں۔ جب ہم چقندر کھاتے ہیں تو ہمارے منہ میں موجود بیکٹیریا نائٹریٹ کو نائٹرک آکسائیڈ میں تبدیل کرنا شروع کر دیتے ہیں، یہ ایک طاقتور عنصر ہے جس کے جسم پر بہت سے فائدہ مند اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ نائٹرک آکسائیڈ کی مناسب مقدار بھی جنسی کارکردگی کے لیے ضروری ہے اور ٹماٹر اور چقندر کا استعمال اس بات کی تصدیق کرتا ہے۔

دل اور بلڈ پریشر پر چقندر کے اثرات:

اگر آپ روزانہ چقندر کا جوس کھائیں تو آپ بلڈ پریشر پر اس کا اثر دیکھ سکتے ہیں۔ ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اگر روزانہ دو چقندر کئی ہفتوں تک کھائے جائیں تو بلڈ پریشر اوسطاً پانچ ملی میٹر تک گر جاتا ہے۔ پروفیسر اینڈی جونز کا کہنا ہے کہ چقندر کھانے سے بلڈ پریشر یقینی طور پر کم ہوتا ہے۔

اگر یہ کمی جاری رہتی ہے تو یہ دل کے دورے کے خطرے کو 10 فیصد تک کم کرنے کے لیے کافی ہے۔ طبی ماہرین کا کہنا ہے کہ اگر تمام لوگ ایسا کریں تو ہارٹ اٹیک جیسے کیسز میں نمایاں کمی آئے گی۔ تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ چقندر کھانے کے چند گھنٹے بعد بلڈ پریشر پر اس کا اثر واضح ہوتا ہے۔

چقندر دماغ کے لیے بہترین غذاؤں میں سے ایک:

چقندر ہمارے دماغ میں خون کے بہاؤ کو بڑھانے میں بھی مدد کر سکتا ہے۔ ایک تحقیق میں بتایا گیا ہے کہ اگر ہم ورزش کے ساتھ چقندر کا جوس پیں تو اس سے دماغ کے اس حصے میں رابطے بڑھ سکتے ہیں جو ہمارے جسم کی حرکات کو کنٹرول کرتا ہے۔ یہ نسخہ دماغ کے ایک ہی حصے کو جوان اور بالغ افراد کی طرح بنا سکتا ہے۔ دوسرے لفظوں میں چقندر کا رس آپ کے دماغ کو جوان رکھنے میں مدد کرتا ہے۔ اور یہ بلڈ پریشر کی بہتری کی وجہ سے ہوسکتا ہے۔ تحقیق کے مطابق چقندر کا جوس پینے سے پریفرنٹل کورٹیکس (دماغ کا سب سے ترقی یافتہ حصہ) میں خون کا بہاؤ بڑھتا ہے جس سے دماغی صلاحیت بہتر ہوتی ہے۔

منہ میں بیکٹیریا کے توازن کو بہتر بناتا ہے:

تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ چقندر کا جوس دن میں دو بار دس دن تک پینے سے منہ میں بیکٹیریا کا توازن بہتر ہوتا ہے۔ حیران کن طور پر محققین نے تحقیقی عمل کے دوران بیکٹیریا کے توازن میں تبدیلی دیکھی۔ یہ ان بیکٹیریل بیماریوں کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے جو منہ کے چھالوں اور سوزش کا باعث بنتے ہیں۔

جسمانی حالت میں بہتری:

اینڈی جونز کا کہنا ہے کہ “شاید نائٹرک آکسائیڈ کا اثر یہ ہو کہ مسلز کو زیادہ آکسیجن ملے اور آپ کا جسم بہتر طریقے سے کام کرے۔”2009 ء کی ایک تحقیق میں پتا چلا کہ چقندر کا جوس پینے والے کھلاڑی ورزش کے دوران اپنی قوت برداشت کو 16 فیصد تک بڑھا سکتے ہیں۔ نائٹرک آکسائیڈ ورزش کے دوران آکسیجن کے استعمال کو کم کرنے میں بھی مدد کرتا ہے، تحقیق سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ یہ تھکاوٹ کو کم کرتا ہے۔

ایتھلیٹس کے مطابق یہ مطالعہ بہت کامیاب رہا۔ 2012 ءمیں لندن اولمپکس اور پیرا اولمپکس سے پہلے، چقندر کا جوس لندن میں آسانی سے دستیاب نہیں تھا کیونکہ تقریباً تمام ایتھلیٹس اس کی تلاش میں تھے۔

اسے کیسے کھایا جائے؟

2012 ءکے ایک مطالعے سے پتا چلا ہے کہ جو لوگ چقندر کھاتے ہیں وہ ان لوگوں کے مقابلے میں 5,000 میٹر 5 فیصد زیادہ تیزی سے دوڑتے ہیں جو نہیں کھاتے تھے۔ اب اگر کھیلوں کی سرگرمیاں اچھی طرح سے انجام دینا مقصود ہے تو ایسے کھیل شروع ہونے سے پہلے کب تک چقندر کھانی چاہیے؟ اس سوال کے جواب میں اینڈی جونز کا کہنا ہے کہ ’’تقریباً دو سے تین گھنٹے پہلے کیونکہ نائٹریٹس کو خون میں گھلنے کے لیے کچھ وقت درکار ہوتا ہے‘‘۔

اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کیا کرنا چاہیے کہ چقندر کے مفید مادے ضائع نہ ہوں؟

اینڈی جونز کی طرف سے ایک اور مشورہ یہ ہے کہ چقندر کو پکاتے وقت احتیاط برتیں اور جس پانی میں وہ ابالے گئے تھے اسے نہ پھینکیں، کیونکہ نائٹریٹ پانی میں گھل جاتے ہیں۔ اس لیے اگر پانی پھینک دیا جائے تو زیادہ تر نائٹریٹ ضائع ہو جائیں گے اور آپ کو پورا فائدہ نہیں ملے گا۔ اگر آپ چقندر سے مزید صحت کے فوائد حاصل کرنا چاہتے ہیں تو بہتر ہے کہ انہیں کچا کھائیں یا ان کا رس پی لیں۔

Share With:
Rate This Article