Homeتازہ ترینروس یوکرین جنگ: سعودی عرب کا مفاہمت کیلئے امن کانفرنس منصوبہ

روس یوکرین جنگ: سعودی عرب کا مفاہمت کیلئے امن کانفرنس منصوبہ

Saudi Arabia ready to mediate between Russia, Ukraine

روس یوکرین جنگ: سعودی عرب کا مفاہمت کیلئے امن کانفرنس منصوبہ

ریاض: (سنو نیوز) روس یوکرین جنگ میں غیر جانبدار نظر آنے کی کوشش کرنے والا سعودی عرب اب اس پر امن کانفرنس منعقد کرنے کا منصوبہ بنا رہا ہے۔ کانفرنس میں یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی کے امن منصوبے پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

اس میں امریکا، برطانیہ، یورپی یونین، میکسیکو، انڈونیشیا، برازیل، بھارت اور جنوبی افریقا سمیت 30 ممالک شرکت کریں گے۔ جبکہ برازیل، روس، بھارت، چین اور جنوبی افریقا برکس کے رکن ہیں۔

یوکرین کے صدر کے چیف آف سٹاف آندرے یرماک نے کہا ہے کہ کانفرنس میں ہونے والی بحث یوکرین کے دس نکاتی فارمولے پر ہو گی۔ وال سٹریٹ جرنل، جس نے سب سے پہلے کانفرنس کے بارے میں خبر دی تھی، نے یوکرین کے امن منصوبے میں شامل سفارت کاروں کے حوالے سے کہا ہے کہ یہ مذاکرات 5 اور 6 اگست کو ہوں گے۔ زیلنسکی خود کانفرنس میں موجود ہو سکتے ہیں تاکہ وہ یوکرین کی حمایت کے لیے شریک ممالک کے رہنماؤں پر دباؤ ڈال سکیں۔

روس یوکرین جنگ نے پوری دنیا میں تہلکہ مچا دیا ہے۔ اس نے عالمی معیشت اور سپلائی چین کو بری طرح نقصان پہنچایا ہے۔ روس نے یوکرین پر ایک ایسے وقت میں حملہ کیا جب عالمی معیشت کووڈ سے بری طرح متاثر ہونے میں بحالی ابھی نظر آنے لگی تھی۔ یہی وجہ ہے کہ اس بحران کے خاتمے کے لیے ترکی، چین، اسرائیل اور ڈنمارک جیسے ممالک نے امن معاہدے کی تجویز پیش کی ہے۔ ترکی نے روس اور یوکرین کے درمیان اناج کی برآمد سے متعلق معاہدہ کیا ہے۔

ساتھ ہی چین نے روس اور یوکرین کے درمیان مذاکرات کی پیشکش کی ہے۔ ایران اور سعودی عرب کے درمیان معاہدے کے بعد چین کا سفارتی اعتماد بہت بڑھ گیا ہے۔ حتیٰ کہ اس نے اسرائیل اور فلسطین کے درمیان پرانے مسئلے پر معاہدہ کرانے کی پہل کی ہے۔گذشتہ چند سالوں کے دوران کثیر قطبی عالمی نظام پر بہت زیادہ زور دیا جا رہا ہے اور اس نئے ورلڈ آرڈر کے نئے دعویدار ابھر رہے ہیں۔ ترکی، چین، بھارت، برازیل کی طرح اب سعودی عرب بھی خود کو ایک اہم کھلاڑی کے طور پر قائم کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

روس یوکرین جنگ نے سعودی عرب کو موقع فراہم کر دیا ہے۔ ملک خود کو ایک نئی قوت کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ روس یوکرین جنگ نے دنیا کی تشویش میں اضافہ کر دیا ہے۔ تقریباً ہر ملک اس سے متاثر ہے۔ توانائی اور خوراک کے بحران کے ساتھ ساتھ سفارتی بحران بھی بڑھ رہا ہے۔ عالمی تشویش بڑھ رہی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اسرائیل، ترکی، ڈنمارک اور چین جیسے ممالک نے روس یوکرین جنگ میں ثالثی کی پیشکش کی ہے۔

ایسی صورتحال میں سعودی عرب کے اقدام کو کیسے دیکھا جائے؟ وہ روس اور یوکرین کے درمیان امن کے لیے پہل کیوں کر رہا ہے؟ اس کے ذریعے وہ کیا ثابت کرنا چاہتا ہے۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ سعودی عرب کی شبیہ اب ایک خود مختار ملک جیسی نہیں رہی، وہ تنوع لانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ روس اور یوکرین کے درمیان امن شروع کر کے، وہ یہ پیغام دینا چاہتا ہے کہ وہ بین الاقوامی سطح پر بڑا کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہے۔

سعودی عرب اپنے اردگرد کے ممالک اور بین الاقوامی سطح پر اپنے بڑھتے ہوئے کردار کو محسوس کرنا چاہتا ہے۔ سعودی عرب دیکھ رہا ہے کہ ترکی اور قطر جیسے ممالک اپنی نرم مذہبی طاقت کو خوب استعمال کر رہے ہیں۔ اس نے ترکیہ اور قطر جیسے ممالک کے ساتھ معاہدہ کیا ہے۔ لیکن ان تینوں کے درمیان ایک قسم کی دشمنی بھی ہے۔

قطر نے امریکا اور طالبان کے درمیان معاہدہ کروایا۔ انہوں نے حماس اور الفتح کے درمیان مذاکرات میں ثالثی بھی کی۔ متحدہ عرب امارات اور ایران کے علاوہ قطر نے بھی مصر اور ترکی کے درمیان مذاکرات میں اہم کردار ادا کیا۔ اب سعودی عرب بھی محسوس کر رہا ہے کہ ابھرتی ہوئی طاقت کے طور پر اسے بھی ایک بڑا معاہدہ کرنا چاہیے۔ ماضی میں، اس نے روس اور یوکرین کے درمیان کاروباری تبادلہ میں اہم کردار ادا کیا۔ یوکرین بھی روس کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے بچوں کو آزاد کرانے کی کوشش کر رہا ہے۔

اب تک امریکا عرب دنیا کے کسی بھی بحران میں ثالثی کرتا تھا۔ لیکن اب سعودی عرب امریکا پر انحصار ختم کرنا چاہتا ہے۔ وہ بتانا چاہتے ہیں کہ ان کی خارجہ پالیسی اب ان کی یرغمال نہیں رہی۔ سعودی عرب ہر اس مقام پر پہنچنا چاہتا ہے جہاں سے وہ امریکا کو یہ پیغام دے سکے کہ اب وہ اس پر منحصر نہیں ہے۔ سعودی عرب یہاں ہونے والی اپنی کانفرنس میں برکس ممالک کو کافی اہمیت دیتا نظر آرہا ہے۔

تجزیہ نگاروں کا کہنا ہے کہ سعودی عرب اب برکس میں بھی شامل ہونا چاہتا ہے۔ وہ SCO کا ڈائیلاگ پارٹنر ہے۔ جس طرح اس نے اوپیک پلس میں روس کا ساتھ دیا ہے اور تیل کی پیداوار میں کمی کی ہے، اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ سعودی عرب اپنا کردار ادا کرنے کے لیے کتنا تیار ہے۔ کثیر قطبی عالمی ترتیب میں۔ دوسری طرف، اس نے یوکرین کی بھی حمایت کی ہے۔ وہ یہ جانتا ہے کہ روس اور چین نئے عالمی نظام میں دو متبادل قوتوں کے طور پر ابھر رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ وہ برکس کو اہمیت دے رہا ہے۔ روس اور چین دونوں برکس کے اہم رکن ہیں۔

جس طرح چین نے ایران اور سعودی عرب کے درمیان معاہدہ کر کے بڑی سفارتی کامیابی حاصل کی ہے، سعودی عرب بھی اسی قسم کی کامیابی چاہتا ہے۔ اگر یوکرین اور روس کے درمیان ہونے والی کانفرنس میں کوئی مفاہمت ہو جائے تو یہ سعودی عرب کی بہت بڑی سفارتی فتح ہوگی۔

Share With:
Rate This Article